رمضان المبارک اور قرآن مجید (2) - یوسف ثانی

پچھلی قسط

2- اسلام، دین

اللہ نے تمہارے لیے یہی دین پسند کیا ہے، لہٰذا مرتے دم تک مسلم ہی رہنا (البقرة:132) اللہ کا رنگ (دین) اختیار کرو، اس کے رنگ سے اچھا اور کس کا رنگ ہوگا؟ (البقرة:138) پورے کے پورے اسلام میں آجا ؤ اور شیطان کی پیروی نہ کرو (البقرة:208) اپنے دین میں غلو نہ کرو اور اللہ کی طرف حق کے سوا کوئی بات منسُوب نہ کرو (النسائ:171) چھوڑو ان لوگوں کو جنہوں نے اپنے دین کو کھیل اور تماشا بنا رکھا ہے اور جنہیں دنیا کی زندگی فریب میں مبتلا کیے ہوئے ہے۔ ہاں مگر یہ قرآن سنا کر نصیحت اور تنبیہ کرتے رہو (الانعام:70) جن لوگوں نے اپنے دین کو ٹکڑے ٹکڑے کر دیا اور گروہ درگروہ بن گئے (الانعام:159) آبادی کے ہر حصہ میں سے کچھ لوگ نکل کر آتے اور دین کی سمجھ پیدا کرتے اور واپس جاکر اپنے علاقے کے باشندوں کوخبردار کرتے (سورة التوبة:122) یک سُو ہوکر اپنا رُخ اس دین کی سمت میں جما دو (الروم:30) مجھے حکم دیاگیا ہے کہ دین کو اللہ کے لیے خالص کرکے اس کی بندگی کروں (سورة الزُمر:11) ۔

3- اطاعت اور نافرمانی

اطاعت:

اطاعت کرو اللہ کی، اطاعت کرو رسول کی اور اُن لوگوں کی جو تم میں صاحبِ امر ہوں (النسائ:59) ہم نے جو رسول بھی بھیجا ہے کہ اذنِ خداوندی کی بنا پر اس کی اطاعت کی جائے (النسائ:64) جس نے رسول کی اطاعت کی اس نے دراصل خدا کی اطاعت کی (النساء:80) اللہ اور رسول کی اطاعت کرو اور آپس میں جھگڑو نہیں ورنہ تمہارے اندر کمزوری پیدا ہو جائے گی (الانفال:46)

یہ وہ لوگ ہیں جنہیں اگر ہم زمین میں اقتدار بخشیں تو وہ نماز قائم کریں گے،زکوٰة دیں گے، نیکی کا حکم دیں گے اور بُرائی سے منع کریں گے (الحج:41) جو شخص اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کی اس نے بڑی کامیابی حاصل کی (سورة الاحزاب:71) جو اپنے رب کا حکم مانتے ہیں، نماز قائم کرتے ہیں (شوریٰ:38) نماز قائم کرتے رہو، زکوٰة دیتے رہو اور اللہ اور رسولﷺ کی اطاعت کرتے رہو (مجادلہ:13) اللہ کی اطاعت کرو اور رسولﷺ کی اطاعت کرو (سورة التغابن: 12) ۔ مریم بنت عمران نے اپنے رب کے ارشادات اور اس کی کتابوں کی تصدیق کی اور وہ اطاعت گزار لوگوں میں سے تھی (التحریم:12) ”ہم اللہ کے رسولوں کو ایک دوسرے سے الگ نہیں کرتے، ہم نے حکم سُنا اور اطاعت قبول کی۔ مالک ہم تجھ سے خطا بخشی کے طالب ہیں اور ہمیں تیری ہی طرف پلٹنا ہے“ (البقرة:285) گر تم حقیقت میں اللہ سے محبت رکھتے ہو تو اللہ کے رسول ﷺکی پیروی اختیار کرو۔ اللہ تم سے محبت کرے گا اور تمہاری خطا ؤں سے درگزر فرمائے گا (آلِ عمران:32) ۔ اللہ اور اُس کے رسولﷺ کی بات مانو اور باز آ جا ؤ (المآئدة:92) مالک کائنات کے آگے سرِ اطاعت خم کر دو، نماز قائم کرو اور اس کی نافرمانی سے بچو (الانعام:72) اللہ سے ڈرو اور اپنے آپس کے تعلقات درست کرو اور اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرو (الانفال:1) اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرو اور حکم سننے کے بعد اس سے سرتابی نہ کرو (الانفال:20) اے لوگو! رسولوں کی پیروی اختیار کرلو (سورة یٰسین:21) ۔

نافرمانی:

ان سب نے اپنے رب کے رسول کی بات نہ مانی تو اس نے ان کو بڑی سختی کے ساتھ پکڑا (سورة الحاقہ: 10) البتہ جو شخص منہ موڑے گا اور انکار کرے گا تو اللہ اس کو بھاری سزا دے گا (الغاشیہ: 23-24) جس نے راہ خدا میں مال دیا اور خدا کی نافرمانی سے پرہیز کیا، اور بھلائی کو سچ مانا (الیل:5-6) اللہ کے فرامین کو قبول کرنے سے انکار کر نے والوں کو یقیناً سخت سزا ملے گی (آلِ عمران:4) جو اللہ اوراس کے رسول کی نافرمانی کرے گا اور اس کی مقرر کی ہوئی حدوں سے تجاوز کر جائے گا اُسے اللہ آگ میں ڈالے گا (النساء:14) اُس خدا کی نافرمانی سے بچتے رہو، جس پر تم ایمان لائے ہو (المآئدة:88) جو نافرمانی سے پرہیز کریں گے، زکوٰة دیںگے اور میری آیات پر ایمان لائیں گے (الاعراف:156)

4- اللہ اور رسو ل اللہ ﷺ

اللہ:

تمہاری حمایت و مددگاری کے لیے اللہ ہی کافی ہے (النساء:45) اللہ کے ساتھ جس نے کسی اور کو شریک ٹھیرایا تواُس نے بڑے سخت گناہ کی بات کی (النساء:48) ۔ اللہ پر بھروسہ رکھو۔ وہی بھروسہ کے لیے کافی ہے (النساء:81) جو لوگ اللہ کی بات مان لیں گے اور اس کی پناہ ڈھونڈیں گے ان کو اللہ اپنی رحمت اور اپنے فضل و کرم کے دامن میں لے لے گا (النساء:175) اللہ سے ڈرو اور اس کی جناب میں باریابی کا ذریعہ تلاش کرو اور اس کی راہ میں جدوجہد کرو (المآئدة:35) جو لوگ اپنے رب کو رات دن پکارتے رہتے ہیں اور اس کی خوشنودی کی طلب میں لگے ہوئے ہیں انہیں اپنے سے دُور نہ پھینکو (الانعام:52) اپنے رب کو پکارو گڑگڑاتے ہوئے اور چپکے چپکے (الاعراف:55) اللہ اچھے ناموں کا مستحق ہے۔ اس کو اچھے ہی ناموں سے پکارو (الاعراف:180) رب کو صبح و شام یاد کیا کرو دل ہی دل میں اور خوف کے ساتھ اور زبان سے بھی ہلکی آواز کے ساتھ (الاعراف:205) جو لوگ اللہ پر جھوٹے افتراءباندھتے ہیں وہ ہرگز فلاح نہیں پاسکتے (سورة یونس:69) اُس شخص سے بڑھ کر ظالم اور کون ہوگا جو اللہ پر جھوٹ گھڑے؟ (ھود:18) اُسی پر میں نے بھروسہ کیا اور ہر معاملہ میں اسی کی طرف میں رُجوع کرتا ہوں (ھود:88) اللہ کی یاد ہی وہ چیز ہے جس سے دلوں کو اطمینان نصیب ہوا کرتا ہے (سورة الرعد:28) ۔ اللہ نے دریاجاری کیے اور قدرتی راستے بنائے تاکہ تم ہدایت پاؤ (النحل:15) اللہ تم پر اپنی نعمتوں کی تکمیل کرتا ہے شاید کہ تم فرمانبردار بنو (سورةالنحل:81) اللہ کے سوا کسی کو اپنا وکیل نہ بنانا۔ (بنی اسرائیل:2) اللہ کہہ کر پکارو یا رحمان کہہ کر، جس نام سے بھی پکارو اس کے لیے سب اچھے ہی نام ہیں (بنی اسرائیل:110) آسمانوں اور زمین کا رب ہی ہمارا رب ہے۔ ہم کسی دوسرے معبود کو نہ پکاریں گے (الکھف:14) کسی چیز کے بارے میں کبھی نہ کہا کرو کہ میں کل یہ کام کردوں گا، الاّیہ کہ اللہ چاہے۔ اگر بھولے سے ایسی بات زبان سے نکل جائے تو فوراً اپنے رب کو یاد کرو (سورة الکھف: 23-24) ۔ انعام وہی بہتر ہے جو اللہ بخشے اور انجام وہی بخیر ہے جو اللہ دکھائے (الکھف:44) تم چاہے پکار کر کہو، وہ اللہ تو چپکے سے کہی ہوئی بات بلکہ اُس سے مخفی تر بات بھی جانتا ہے (طٰہٰ:7) اللہ پر توکل کرو، اللہ ہی وکیل ہونے کے لیے کافی ہے (الاحزاب:3) بہترین بندہ وہ ہے جو کثرت سے اپنے رب کی طرف رجوع کرنے والا ہو (سورة صٓ:30) بے شک اے اللہ! تو ہی اصل داتا ہے (سورة صٓ:35) اے ایمان والو! اگر تم اللہ کی مدد کرو گے تو وہ تمہاری مدد کرے گا اور تمہارے قدم مضبوط جمادے گا (محمد:7) اللہ سے ڈرو، اللہ بڑا توبہ قبول کرنے والا اور رحیم ہے (الحجرات:12) اللہ انسان کی شہ رگ سے بھی زیادہ قریب ہے اور اُس کے وسوسوں تک کو جانتا ہے (قٓ:16) اور اللہ کو کثرت سے یاد کرتے رہو (الجمعہ:10) اُس اللہ کے سوا کوئی خدا نہیں ہے، لہٰذا اُسی کو اپنا وکیل بنالو (المزمل:9) میں پناہ مانگتا ہوں انسانوں کے رب، انسانوں کے بادشاہ، انسانوں کے حقیقی معبُود کی (سورة الناس:1-3)

رسول اللہ ﷺ:

جو اللہ اور اس کے تمام رسولوں کو مانیں اور اُن کے درمیان تفریق نہ کریں (النساء:152) ا للہ اور اس کے رسولﷺ کی پکار پر لبیک کہو (الانفال:24) اللہ اور اس کے رسول کے ساتھ خیانت نہ کرو۔ اپنی امانتوں میں غداری کے مرتکب نہ ہو (الانفال:27) تم اللہ کی اطاعت کرو اور رسول کی اطاعت کرو (محمد:33) تم اللہ اور اس کے رسولﷺ پر ایمان لا ؤ اور رسول کا ساتھ دو، اس کی تعظیم و توقیر کرو (الفتح:9) اللہ اور اس کے رسولﷺ کے آگے پیش قدمی نہ کرو اور اللہ سے ڈرو (سورة الحجرات:1) جو لوگ اللہ اور اس کے رسول کی مخالفت کرتے ہیں وہ ذلیل و خوار کر دیے جائیں گے (المجادلہ:5) جو کچھ رسولﷺ تمہیں دے وہ لے لو اور جس چیز سے وہ روک دے اس سے رُک جا ؤ (الحشر:7) کسی معاملہ میں نزاع ہو جائے تو اسے اللہ اور رسول کی طرف پھیر دو (النساء:59) ۔

5۔ انسان کی فطرت

انسان بڑا ہی جلد باز واقع ہوا ہے (سورة بنی اسرائیل:11) زبان سے بہترین بات نکالا کرو، شیطان انسانوں کے درمیان فساد ڈلوانے کی کوشش کرتا ہے (بنی اسرائیل:53) قرآن میں لوگوں کو طرح طرح سے سمجھایا مگر انسان بڑا ہی جھگڑالو واقع ہوا ہے (الکھف:54) خواہشِ نفس کی پیروی کرنے والوں کی اطاعت نہ کرو،جس کا طریقِ کار افراط و تفریط پر مبنی ہو (سورة الکھف:28) ہم نے (اے انسان) تجھے زمین میں خلیفہ بنایا ہے۔ لہٰذاتولوگوں کے درمیان حق کے ساتھ حکومت کر اور خواہشِ نفس کی پیروی نہ کر کہ وہ تجھے اللہ کی راہ سے بھٹکا دے گی (سورة صٓ:26) اللہ نے جس کو جتنا کچھ دیا ہے اُس سے زیادہ کا وہ اُسے مکلف نہیں کرتا۔ (الطلاق: 7) 6۔ انصاف اورناپ تول اور ناپ تول میں پورا انصاف کرو (الانعام:152) اور جب بات کہو انصاف کی کہو خواہ معاملہ اپنے رشتہ دار ہی کا کیوں نہ ہو (الانعام:152) ٹھیک ٹھیک انصاف کے ساتھ فیصلہ کرو کہ اللہ انصاف کرنے والوں کو پسند کرتا ہے (المآئدة:42) ٹھیک انصاف کے ساتھ پورا ناپو اور تولو اور لوگوں کو اُن کی چیزوں میں گھاٹا نہ دیا کرو اور زمین میں فسادنہ پھیلاتے پھرو (ھود:85) پیمانے سے دو تو پورا بھر کر دواور تولو تو ٹھیک ترازو سے تولو (بنی اسرائیل:35) امانتیں اہلِ امانت کے سپرد کرو۔لوگوں کے درمیان عدل کے ساتھ فیصلہ کرو (النساء:58) پیمانے ٹھیک بھرو اور کسی کو گھاٹا نہ دو۔ (الشعرائ:181) صحیح ترازو سے تولو اور لوگوں کو ان کی چیزیں کم نہ دو (شعراء:182) میزان میں خلل نہ ڈالو، انصاف کے ساتھ ٹھیک ٹھیک تولو اور ترازو میں ڈنڈی نہ مارو (الرحمٰن: 8-9) اللہ نے کتاب اور میزان نازل کی تاکہ لوگ انصاف پر قائم ہوں (حدید:25) تباہی ہے ڈنڈی مارنے والوں کے لیے جن کا حال یہ ہے کہ جب لوگوں سے لیتے ہیں توپورا پورا لیتے ہیں،اور جب ان کو ناپ کر یا تول کر دیتے ہیں تو انہیں گھاٹا دیتے ہیں (المطففین:3) ۔ 7۔ ایمان اور تقاضائے ایمان ہدایت ہے ان پرہیزگار لوگوں کے لیے جو غیب پر ایمان لاتے ہیں (البقرة: 2) اور آخرت پر یقین رکھتے ہیں (البقرة:4) جس پر بھروسہ کیا گیا ہے، وہ امانت ادا کرے، رب سے ڈرے اور شہادت ہرگز نہ چھپائے (البقرة:283) ایمان لانے والے اور نماز و زکوٰة کی پابندی کرنے والے اور اللہ اور روزِ آخر پر سچا عقیدہ رکھنے والے (النساء:162) ہر راستے پر رہزن بن کر نہ بیٹھ جا ؤ کہ لوگوں کو خوف زدہ کرنے اور ایمان لانے والوں کو خدا کے راستے سے روکنے لگو اور سیدھی راہ کو ٹیڑھا کرنے کے درپے ہو جا ؤ (الاعراف:86) اللہ کے ہاں تو اُنہی لوگوں کا درجہ بڑا ہے جو ایمان لائے اور جنہوں نے اس کی راہ میں گھر بار چھوڑے اور جان و مال سے جہاد کیا، وہی کامیاب ہیں (التوبة:20) ایمان کے ساتھ عمل صالح کرنے والے نعمت بھری جنتوں میں جائیں گے (الحج:56) اے ایمان والو! رکوع اور سجدہ کرو، اپنے رب کی بندگی کرو، اور نیک کام کرو (الحج:77) جو لوگ ایمان لائے ہیں اور جنہوںنے نیک عمل کیے ہیں (سورة الروم:15) ایمان لا ؤ اللہ اور اس کے رسول پر (الحدید:7) جو اللہ اور آخرت پر ایمان رکھنے والے ہیں اُن لوگوں سے محبت نہیں کرتے جو اللہ اور اس کے رسولﷺکی مخالفت کرتے ہیں (سورة المجادلہ:22) ایمان لا ؤ اللہ اور اس کے رسولﷺ پر (سورة الصف:10) اے ایمان والو! اللہ کے مددگار بنو (الصف:14) جو اللہ پر ایمان لایا ہے اور نیک عمل کرتا ہے، اللہ اس کے گناہ جھاڑ دے گا (سورة التغابن: 9) جو کوئی اللہ پر ایمان لائے اور نیک عمل کرے (الطلاق:11) اُسی پر ہم ایمان لائے ہیں اور اسی پر ہمارا بھروسہ ہے (سورة الملک:29) یہ نہ اللہ بزرگ و برتر پر ایمان لاتا تھا اور نہ مسکین کو کھانا کھلانے کی ترغیب دیتا تھا (الحاقہ: 33-34) جوامانتوں کی حفاظت اور عہد کا پاس کرتے ہیں اور گواہیوں میں راست باز رہتے ہیں (المعارج: 32-33) لوگوں کو کیا ہوگیا ہے کہ ایما ن نہیں لاتے، جب قرآن سامنے پڑھا جاتا ہے تو سجدہ نہیں کرتے؟ (انشقاق: 20-21) جو لوگ ایمان لائے اور نیک عمل کیے ہیں ان کے لیے کبھی ختم نہ ہونے والا اجر ہے (انشقاق: 25) جو ایمان لائے، نیک اعمال کرتے رہے، ایک دوسرے کو حق کی نصیحت اور صبر کی تلقین کرتے رہے (العصر:2-3) ۔ 8۔ برائی اور بے حیائی جو بھی بدی کمائے گا اور اپنی خطاکاری کے چکر میں پڑا رہے گا، وہ دوزخی ہے (البقرة:18) لوگوں کی خفیہ سرگوشیوں میں اکثر و بیشتر کوئی بھلائی نہیں ہوتی (النساء:114) جو بھی بُرائی کرے گا اس کا پھل پائے گا (النساء:123) اللہ اس کو پسند نہیں کرتا کہ آدمی بدگوئی پر زبان کھولے، الاّ یہ کہ کسی پر ظلم کیا گیا ہو (النساء:148) اُنہوں نے ایک دوسرے کو بُرے افعال کے ارتکاب سے روکنا چھوڑ دیا تھا (المآئدة:79) اگر تم میں سے کوئی نادانی کے ساتھ کسی بُرائی کا ارتکاب کر بیٹھا ہو پھر اس کے بعد توبہ کرے اور اصلاح کرلے تو وہ اسے معاف کر دیتا ہے اور نرمی سے کام لیتا ہے“ (الانعام:54) ہم نے اُن لوگوں کو بچا لیا جو برائی سے روکتے تھے (الاعراف:165) اگر تم خدا ترسی اختیار کرو گے تو اللہ تمہاری برائیوں کو تم سے دور کر دے گا (الانفال:29) جن لوگوں نے برائیاں کمائیں اُن کی برائی جیسی ہے ویسا ہی وہ بدلہ پائیں گے (یونس:27) نفس تو بدی پر اکساتا ہی ہے الاّیہ کہ کسی پر میرے رب کی رحمت ہو (یوسف:53) اور برائی کو بھلائی سے دفع کرتے ہیں (سورة الرعد:22) اللہ عدل، احسان اور صلہ رحمی کا حکم دیتا ہے اور بدی، بے حیائی اور ظلم سے منع کرتا ہے (النحل:90) لوگوں کو اللہ کی راہ سے روکنے کا بُرا نتیجہ دیکھوگے اور سزا بھگتوگے (سورة النحل:94) جو بُرائی لیے ہوئے آئے گا، ایسے سب لوگ اوندھے منہ آگ میںپھینکے جائیں گے (النمل:90) وہ بُرائی کو بھلائی سے دفع کرتے ہیں اور ہمارے عطا کردہ رزق میں سے خرچ کرتے ہیں (القصص:54) برائیاں کرنے والوں کو ویسا ہی بدلہ ملے گا جیسے عمل وہ کرتے تھے (القصص:84) جو بدی کرے گا اس کا وبال اُسی پر ہوگا (حٰمٓ السجدہ:46) ۔جو جھوٹ کے گواہ نہیں بنتے۔ (الفرقان:72) 9۔ بھلائی اور نیکی اگر تم بھلائی کرو یا کم از کم بُرائی سے درگزر کرو تو اللہ بڑا معاف کرنے والا ہے (النساء:149) نیک عمل کریں، نماز قائم کریں اور زکوٰة دیں (البقرة:277) نیکی کی طرف بلائیں، بھلائی کا حکم دیں اور برائیوں سے روکتے رہے (آلِ عمران:104) ماں باپ کے ساتھ نیک برتا ؤ کرو۔ قرابت داروں اور یتیموں اور مسکینوں کے ساتھ حُسن سلوک سے پیش آ ؤ، اور پڑوسی رشتہ دار سے، اجنبی ہمسایہ سے، پہلو کے ساتھی اور مسافر سے اور اُن لونڈی غلاموں سے جو تمہارے قبضہ میں ہوں، احسان کا معاملہ رکھو (النساء:36) جو مومن مرد یا عورت نیک عمل کریں گے تو ایسے ہی لوگ جنت میں داخل ہوں گے (النساء:124) جو کام نیکی اور خدا ترسی کے ہیں ان میں سب سے تعاون کرو (المآئدة:2) اللہ ان لوگوں کو پسند کرتا ہے جو احسان کی روش رکھتے ہیں (المآئدة:13) نیکی کے لیے دس گنا اجر ہے، جبکہ بدی کا اتنا ہی بدلہ دیا جائے گا (الانعام:160) وہ نیکی کا حکم دیتا ہے، بدی سے روکتا ہے۔ پاک چیزیں حلال اور ناپاک چیزیں حرام کرتا ہے (الاعراف:157) جن لوگوں نے بھلائی کا طریقہ اختیار کیا ان کے لیے بھلائی ہے اور مزید فضل (یونس:26) انہیں وحی کے ذریعے نیک کاموں کی اور نماز قائم کرنے اور زکوٰة دینے کی ہدایت کی (الانبیاء:73) یہ لوگ نیکی کے کاموں میں دوڑ دھوپ کرتے تھے اور ہمیں رغبت اور خوف کے ساتھ پکارتے تھے اور ہمارے آگے جُھکے ہوئے تھے (الانبیاء:90) جومومن نیک عمل کرے گا تو اس کے کام کی ناقدری نہ ہوگی (الانبیاء:94) زمین کے وارث ہمارے نیک بندے ہوں گے (الانبیاء:105) نیک عمل کرنے والے ایمانداروں کے لیے مغفرت اور عزت کی روزی ہے (الحج:50) جو شخص بھلائی لے کر آئے گا اسے اس سے زیادہ بہتر صلہ ملے گا۔ (النمل:89) جو کوئی بھلائی لے کر آئے گا اس کے لیے اس سے بہتر بھلائی ہے (القصص:84) احسان کر جس طرح اللہ نے تیرے ساتھ احسان کیا ہے (القصص:77) نیک عمل کرنے والے مومن کے لیے اللہ کا ثواب بہتر ہے مگر یہ دولت صابرین ہی کو ملتی ہے (القصص:80) جو شخص اپنے آپ کو اللہ کے حوالہ کردے اور عملاً وہ نیک ہو (لقمان:۲۲) ہم نیکی کرنے والوں کو ایسی ہی جزا دیتے ہیں (سورة صٰفّٰت:110) تم بدی کو بہترین نیکی سے دفع کرو۔ تم دیکھو گے کہ تمہارے ساتھ جس کی عداوت پڑی ہوئی تھی وہ جگری دوست بن گیا ہے۔ مگر یہ صفت صبر کر نے والوں کو نصیب ہوتی ہے (حٰمٓ السجدہ:34) جو کوئی نیک عمل کرے گا اپنے ہی لیے اچھا کرے گا (حٰمٓ السجدہ:46) جو نیک عمل کرے گا اپنے ہی لیے کرے گا اور جو برائی کرے گا وہ آپ ہی خمیازہ بُھگتے گا (الجاثیہ:15) جو لوگ ایمان لائے اور جنہوں نے نیک عمل کیے (سورة محمد:2) جو کچھ بھلائی تم اپنے لیے آگے بھیجو گے اسے اللہ کے ہاں موجود پا ؤ گے (المزمل:20) جو بھلائی کی سفارش کرے گا وہ اس میں سے حصہ پائے گا اور جو بُرائی کی سفارش کرے گا وہ اس میں سے حصہ پائے گا (النساء:85) ۔

Comments

یوسف ثانی

یوسف ثانی

یوسف ثانی پیغام قرآن ڈاٹ کام کے مدیر اعلیٰ ہیں۔ 2008ء سے اردو، سندھی اور انگریزی زبانوں میں قرآن و حدیث پر مبنی کتب کی تصنیف و تالیف میں مصروف ہیں۔ ان کی کتب "پیغام قرآن، " "پیغام حدیث،" "قرآن جو پیغام،" "اسلامی ضابطہ حیات" اور "اسلامک لائف اسٹائل " کے تا حال پندرہ ایڈیشنز شائع ہوچکے ہیں۔ آپ ایم اے صحافت بھی ہیں اور بطور صحافی خبر رساں ادارے پاکستان پریس انٹرنیشنل اور جنگ لندن سے برسوں وابستہ رہنے کے علاوہ گزشتہ چار دہائیوں سے قومی اخبارات و جرائد میں بھی لکھ رہے ہیں۔ پیشے کے اعتبار سے کیمیکل ٹیکنا لوجسٹ ہیں۔ کیمیکل ٹیکنالوجی میں پوسٹ گریجویٹ ڈپلومہ کے بعد 1981ء سے قومی و کثیر القومی آئل اینڈ گیس فیلڈز سے وابستہ ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.