گناہوں کے فرد اور معاشرے پر مضر اثرات - خطبہ جمعہ مسجد نبوی

فضیلۃ  الشیخ ڈاکٹر عبد اللہ بن عبد الرحمن بعیجان حفظہ اللہ نے  21 جمادی ثانیہ 1439 کا خطبہ جمعہ مسجد نبوی میں " گناہوں کے فرد اور معاشرے پر مضر اثرات"  کے عنوان پر ارشاد فرمایا جس میں انہوں نے کہا کہ اللہ تعالی نے انسان کو پیدا کر کے اسے عقل و خرد سے نوازا تا کہ ان کی کارکردگی کو پرکھا جا سکے، اللہ تعالی نے دنیا کو آزمائش کی جگہ قرار دیا اور یہ عارضی زندگی ہے جبکہ آخرت کو بدلے کا مقام بنا کر اسے سرمدی بنا دیا، وہاں پر یا تو جنت ملے گی یا جہنم۔ انسان کو دنیا میں ہر اعتبار سے آزمایا جاتا ہے، خود انسان کے اندر نفس امارہ اس کی آزمائش کا باعث ہے اور کل روزِ قیامت انسانی اعضا ہر بد عملی کی گواہی بھی دیں گے، انہوں نے کہا کہ: گناہوں میں ملوث ہو کر انسان اللہ تعالی کی ناراضی اور عذاب کا مستحق ٹھہرتا ہے، سابقہ بہت سی خوشحال اور ترقی یافتہ اقوام گناہوں کی وجہ سے نیست و نابود ہوئیں۔ پھر انہوں نے اعلانیہ گناہ کی شرعی اعتبار سے سخت مذمت فرمائی کہ انہیں معاف نہیں کیا جائے گا، اسی طرح  معمولی گناہوں پر تسلسل انہیں بھی مہلک بنا دیتا ہے، نیز صغیرہ گناہوں کا رسیا شخص بھی کل قیامت کے دن پریشان ہو گا۔ دوسرے خطبے میں انہوں نے کہا کہ اعلانیہ گناہ کرنے اور امر بالمعروف و نہی عن المنکر کے فقدان کے باعث پورا معاشرہ اللہ کی پکڑ کا شکار ہو سکتا ہے؛ اس لیے ضرورت اس امر کی ہے کہ نیکی کا حکم بہترین سلیقے سے دیا جائے اور برائی سے روکتے ہوئے بھی عمدہ اسلوب اپنانا لازمی ہے، انہوں نے کہا کہ: ہر ذمہ دار شخص پر اپنے ماتحت افراد کی صحیح انداز میں تربیت از بس ضروری ہے، وگرنہ یہی لوگ اس کے خلاف ہوں گے، نیز اگر وہ راہ راست پر چلتے ہیں تو ذمہ دار شخص کو بھی برابر کا ثواب ملے گا، آخر میں انہوں نے جدید رابطے کے ذرائع سے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ ان کی وجہ سے اخلاقیات کا جنازہ نکل چکا ہے، جو چیز کل تک گناہ تھی وہ آج عرف بن چکی ہے، اور جو چیز نیکی ہے وہ آج رجعت پسندی کہلانے لگی ہے، اس لیے اپنے آپ کو سنت طریقے پر کار بند رکھیں۔ پھر سب سے آخر میں انہوں نے جامع دعا فرمائی۔

خطبہ کی عربی آڈیو، ویڈیو اور ٹیکسٹ حاصل کرنے کیلیے یہاں کلک کریں۔

پہلا خطبہ

یقیناً تمام  تعریفیں اللہ کیلیے ہیں، ہم اس کی حمد بیان کرتے ہیں اور اسی سے مدد   طلب کرتے ہیں ، اپنے گناہوں کی بخشش بھی اسی سے مانگتے ہیں، نیز نفسانی و بُرے اعمال کے شر سے اُسی کی پناہ چاہتے ہیں، جسے اللہ ہدایت عنایت کر دے اسے کوئی بھی گمراہ نہیں کر سکتا، اور جسے وہ گمراہ کر دے اس کا کوئی بھی رہنما نہیں بن سکتا، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی بھی معبودِ بر حق نہیں ، اور اس کا کوئی شریک نہیں، اور میں یہ بھی گواہی دیتا ہوں محمد ﷺ   اللہ کے بندے اور اس کے رسول  ہیں ، اللہ تعالی نے آپ کو تمام جہان والوں کیلیے رحمت بنا کر بھیجا، اللہ تعالی نے آپ کے ذریعے شرح صدر فرمائی، ذہنوں کو روشن فرمایا، نابینا آنکھوں کو بینائی ،بہرے کانوں کو سماعت  اور پردوں میں پڑے دلوں کو آزاد کر دیا، اللہ تعالی آپ پر، آپ کی آل  اور صحابہ کرام پر روزِ قیامت تک ڈھیروں سلامتی  اور رحمت نازل فرمائے۔

حمد و صلاۃ کے بعد:

اطاعت گزاری حکم کی تعمیل اور اتباع کا نام ہے، جبکہ نافرمانی حکم عدولی اور بدعات پر عمل کرنے کا نام ہے، بد ترین امور بدعات، خود ساختہ طریقے، نافرمانیاں اور گناہ ہیں، ان میں سے  شدید ترین آزمائش شہوت اور شبہات کی وجہ سے آتی ہے۔

تقوی الہی اپنانے کیلیے اللہ تعالی کے احکامات کی تعمیل کرو اور جن کاموں سے روکا ہے ان سے رک جاؤ، {يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ حَقَّ تُقَاتِهِ وَلَا تَمُوتُنَّ إِلَّا وَأَنْتُمْ مُسْلِمُونَ}   اے ایمان والو! اللہ سے ایسے ڈرو جیسے ڈرنے کا حق ہے اور تمہیں موت صرف اسلام کی حالت میں ہی آئے۔[آل عمران : 102]

اللہ کے بندو!

اللہ تعالی نے انسان کو پیدا فرمایا، اسے عقل اور زبان عطا کی ، اسے شرعی احکام کا مخاطب بنایا اور قوت گویائی سے نوازا، اللہ تعالی نے دلائل کے ساتھ رسولوں کو مبعوث کیا، انہیں کتاب اور میزان بھی عطا کیا، اللہ تعالی نے موت اور زندگی کو پیدا کیا تا کہ تمہیں آزمائے کہ کون کارکردگی کے اعتبار سے اچھا ہے۔

اللہ تعالی نے انسان کو رضائے الہی کی موجب بننے والی اطاعت کیلیے پیدا کیا ہے ، اور ناراضی کا باعث بننے والی نافرمانی سے روکا ہے، {فَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ خَيْرًا يَرَهُ (7) وَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ شَرًّا يَرَهُ} ذرہ برابر خیر کا عمل کرنے والا بھی اپنا عمل دیکھ لے گا [7] اور جو ذرہ برابر بد عملی کرے گا وہ بھی اسے دیکھ لے گا۔[الزلزلہ: 7، 8]

اللہ تعالی نے دنیا کو دار عمل  اور آزمائش بنا کر اس کے مقدر میں فنا لکھ دی ، جبکہ آخرت کو دار حساب اور بدلے  کا گھر بنا کر اسے دائمی اور سرمدی بنا دیا ہے، {مَنْ عَمِلَ صَالِحًا فَلِنَفْسِهِ وَمَنْ أَسَاءَ فَعَلَيْهَا} جس نے عمل صالح کیا تو اپنے لیے اور جو برا عمل کرے تو اس کا وبال بھی اسی پر ہو گا۔[الجاثيہ: 15]

اللہ تعالی نے متقین کیلیے جنتیں بنائیں اور اس کے نیچے نہریں جاری کیں، جنتی اس میں ہمیشہ رہیں گے، ان جنتوں میں وہ کچھ ہے جو کسی آنکھ نے ابھی تک نہیں دیکھا، ان کے بارے میں کسی کان نے سنا نہیں ہے اور نہ ہی کسی انسان کے دل میں ان کا خیال تک پیدا ہوا ہے، اس کے مقابلے میں کافروں کیلیے جہنم پیدا کی، جہنم کسی چیز کو نہیں چھوڑے گی، چمڑی جھلسا کر رکھ دے گی، کافر اس میں نہ ختم ہونے والی صدیوں  تک رہیں گے، انہیں وہاں ٹھنڈا یا پینے کی کوئی چیز چکھنے کو بھی نہیں ملے گی، صرف گرم کھولتا ہوا پانی اور جہنمیوں کا نچوڑ ملے گا ، یہ ان کی کارستانیوں کا پورا پورا بدلہ ہو گا۔

اللہ کے بندو!

شہوت اور شبہات کے ذریعے انسان پرکھا جا رہا ہے، انسان خود لذتوں اور آسائشوں میں ڈوبا ہوا ہے، گناہوں اور سیاہ کاریوں میں ملوث ہے، انسان پر اس کے دشمن اور مخالفین مسلط ہیں، [ان دشمنوں میں ]شیطان انسان کا رقیب اور ازلی دشمن ہے، پھر نفس امارہ انسان کے جسم میں پیوست ہے، اور انسانی اعضا خود انسان کے خلاف گواہی بھی دیں گے۔

اس کیلیے شیطان نے قسم اٹھا کر دعوی کیا تھا: {فَبِعِزَّتِكَ لَأُغْوِيَنَّهُمْ أَجْمَعِينَ (82) إِلَّا عِبَادَكَ مِنْهُمُ الْمُخْلَصِينَ} تیری عزت کی قسم! میں ان سب کو لازما گمراہ کروں گا [82] ما سوائے ان کے جو ان میں سے تیرے مخلص بندے ہیں۔[ص: 82، 83]

اور نفس امارہ کے بارے میں اللہ تعالی کا فرمان ہے: {إِنَّ النَّفْسَ لَأَمَّارَةٌ بِالسُّوءِ} بیشک نفس برائی کا بہت زیادہ حکم دینے والا ہے۔[يوسف: 53]

پھر اعضا کے متعلق فرمایا: {يَوْمَ تَشْهَدُ عَلَيْهِمْ أَلْسِنَتُهُمْ وَأَيْدِيهِمْ وَأَرْجُلُهُمْ بِمَا كَانُوا يَعْمَلُونَ} جس دن ان کی زبانیں، ہاتھ، اور پاؤں ان کاموں کی گواہی دیں گے جو وہ کرتے رہے ہیں۔[النور: 24]

ایک اور مقام پر فرمایا: {وَقَالُوا لِجُلُودِهِمْ لِمَ شَهِدْتُمْ عَلَيْنَا قَالُوا أَنْطَقَنَا اللَّهُ الَّذِي أَنْطَقَ كُلَّ شَيْءٍ وَهُوَ خَلَقَكُمْ أَوَّلَ مَرَّةٍ وَإِلَيْهِ تُرْجَعُونَ (21) وَمَا كُنْتُمْ تَسْتَتِرُونَ أَنْ يَشْهَدَ عَلَيْكُمْ سَمْعُكُمْ وَلَا أَبْصَارُكُمْ وَلَا جُلُودُكُمْ وَلَكِنْ ظَنَنْتُمْ أَنَّ اللَّهَ لَا يَعْلَمُ كَثِيرًا مِمَّا تَعْمَلُونَ} وہ اپنی کھالوں سے کہیں گے : "تم نے ہمارے خلاف کیوں گواہی دی ؟ " وہ کہیں گی : ہمیں اسی اللہ نے قوت گویائی دے دی جس نے ہر چیز کو گویائی دی ہے۔ اسی نے تمہیں پہلی بار پیدا کیا اور اسی کی طرف تم لوٹائے جاؤ گے۔ [21] اور (گناہ کرتے وقت) تم اس بات سے نہیں چھپتے تھے کہ کہیں تمہارے کان، تمہاری آنکھیں اور تمہاری جلدیں ہی تمہارے خلاف گواہی نہ دے دیں۔ بلکہ تم تو یہ خیال کرتے تھے کہ جو کچھ تم کرتے ہو ان میں سے اکثر باتوں کو اللہ جانتا ہی نہیں ۔[فصلت: 21، 22]

چنانچہ شیطان گناہوں اور مہلک کاموں کی ترغیب دلاتا ہے، نفس امارہ برائی اور پاپ کرنے کا حکم دیتا ہے، جبکہ انسانی اعضا عینی شہادت پیش کریں گے، ایسے میں عقل مند وہی ہے جو اپنا محاسبہ کرے اور اسے لگام ڈال کر گناہوں میں ملوث ہونے سے بچا لے۔

مسلم اقوام!

گناہوں میں ملوث  ہونا نقصان دہ اور ضرر کا باعث ہے، ان کی وجہ سے اللہ تعالی ناراض ہوتا ہے ، اور یہ عذاب الہی کا موجب بنتے ہیں، نیز یہ اللہ کی پکڑ اور بلائیں نازل ہونے کا ذریعہ بھی بنتے ہیں، {وَكَأَيِّنْ مِنْ قَرْيَةٍ عَتَتْ عَنْ أَمْرِ رَبِّهَا وَرُسُلِهِ فَحَاسَبْنَاهَا حِسَابًا شَدِيدًا وَعَذَّبْنَاهَا عَذَابًا نُكْرًا (8) فَذَاقَتْ وَبَالَ أَمْرِهَا وَكَانَ عَاقِبَةُ أَمْرِهَا خُسْرًا (9) أَعَدَّ اللَّهُ لَهُمْ عَذَابًا شَدِيدًا فَاتَّقُوا اللَّهَ يَاأُولِي الْأَلْبَابِ} کتنی بستیاں ہیں جنہوں نے اپنے پروردگار اور اس کے رسولوں کے حکم سے سرتابی کی تو ہم نے ان کا بڑا سخت محاسبہ کیا اور انہیں بری طرح سزا دی [8] چنانچہ انہوں نے اپنے کیے کا وبال چکھ لیا اور ان کے کام کا انجام خسارہ ہی تھا۔[9] ان کے لئے اللہ تعالی نے سخت عذاب تیار کر رکھا ہے، پس اللہ سے ڈرو اے عقل والو۔  [طلاق: 8 - 10]

لہذا مسلمانوں کو جتنی بھی آزمائشوں ، تکلیفوں، مصیبتوں ، مہنگائی، دشمنوں کے تسلط، قحط سالی، بیماریوں، آلام اور بلاؤں کا سامنا کرنا پڑتا ہے یہ سب کچھ گناہوں، سیاہ کاریوں، بد کاریوں اور بد اعمالیوں کا ہی نتیجہ ہوتا ہے۔

اللہ تعالی نے عبرت حاصل کرنے والوں کیلیے مثالیں بھی ذکر کی ہیں، اور نشانیاں بھی کھول کھول کر بتلائی ہیں تو کوئی ہے نصیحت پکڑنے والا؟ اللہ تعالی نے واضح طور پر بیان فرمایا ہے کہ گناہ اور نافرمانیاں نعمتوں کے زوال اور آفتوں کے نزول کا سب سے بڑا سبب ہیں، چنانچہ فرمایا: {وَضَرَبَ اللَّهُ مَثَلًا قَرْيَةً كَانَتْ آمِنَةً مُطْمَئِنَّةً يَأْتِيهَا رِزْقُهَا رَغَدًا مِنْ كُلِّ مَكَانٍ فَكَفَرَتْ بِأَنْعُمِ اللَّهِ فَأَذَاقَهَا اللَّهُ لِبَاسَ الْجُوعِ وَالْخَوْفِ بِمَا كَانُوا يَصْنَعُونَ} اللہ تعالیٰ ایک بستی کی مثال بیان کرتا ہے۔ جو امن و چین سے رہتی تھی اور ہر طرف سے اس کا رزق اسے فراوانی کے ساتھ پہنچ رہا تھا۔ پھر اس نے اللہ کی نعمتوں کی ناشکری کی تو اللہ نے ان کے کرتوتوں کا مزا یہ چکھایا کہ ان پر بھوک اور خوف (کا عذاب) مسلط کر دیا۔ [النحل: 112]

غور کریں کہ مخلوق جس وقت اللہ تعالی کی نا فرمانی کرتی ہے تو اللہ کے ہاں کس قدر  بے وقعت ہو جاتی ہے!

اللہ کے بندو!

گناہوں کے خطرات ، خدشات، سیاہ کاریوں کی سزا اور پکڑ اس وقت انتہائی شدت اختیار کر جاتی ہے جب گناہ معمول بن جائیں اور لوگ اعلانیہ طور پر گناہ کرنے لگیں، [اور نعوذ باللہ]سر عام اللہ تعالی کو دعوت مبارزت دیں، حالانکہ حدیث میں واضح ہے کہ : (ساری امت محمدیہ کو معاف کر دیا جائے گا ما سوائے اعلانیہ گناہ کرنے والوں کے)  متفق علیہ

 اور دوسری روایت میں ہے کہ: (لوگ میں اس وقت تک تباہ نہیں ہوں گے جب تک وہ اپنے گناہوں کیلیے خود ہی عذر تراشی نہ کرنے لگیں) ابو داود

اللہ کے بندو!

 اعلانیہ گناہ اللہ تعالی کے حقوق کی پامالی  کے ساتھ اللہ تعالی کے سامنے گناہ کرنے کی جسارت بھی ہے، اس میں مومنوں کے خلاف عناد ہے، اس طرح سیاہ کاروں کی نفری میں اضافہ ہوتا ہے، اور گناہوں کے منفی اثرات دوسروں تک پہنچتے ہیں، اعلانیہ گناہ سے دوسروں کو بھی گناہ کی دعوت اور ترغیب ملتی ہے، اگر اعلانیہ گناہ پر کوئی نہ ٹوکے تو وہ بھی گناہ گار ٹھہرتا ہے، اگر کسی کو گناہوں کی لت پڑ گئی ہے تو وہ اپنے آپ پر پردہ رہنے دے اور جلد از جلد توبہ کر لے۔

مسلم اقوام!

گناہوں پر اصرار، سیاہ کاریوں میں آگے بڑھتے چلے جانا، برائیوں میں ڈوبتے جانا، گناہ کر کے مسرت کا اظہار کرنا اور اللہ کی پکڑ سے بے خوف ہو جانا، گناہوں کو معمولی سمجھنا یہ انسان کے غافل اور اللہ تعالی کے ناراض ہونے کی علامت ہے، یہ امور بدبختی اور تباہی کا باعث ہیں، چنانچہ عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: (اپنے آپ کو معمولی گناہوں سے بچاؤ؛ کیونکہ معمولی گناہ  انسان کے خلاف جمع ہوتے ہوتے اسے تباہ کر کے رکھ دیتے ہیں) ابن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ "رسول اللہ ﷺ نے ان کی مثال ذکر کرتے ہوئے فرمایا:"(اس کی مثال ایک مسافر جماعت کی ہے وہ کسی چٹیل میدان میں پڑاؤ ڈالتے ہیں اور کھانا تیار کرنے کا وقت آ جاتا ہے، اس پر ہر شخص ایک ایک لکڑی تلاش کر کے لاتا ہے، اس طرح لکڑیوں کا ایک انبار جمع ہو جاتا ہے، وہ ان میں آگ لگاتے ہیں اور اس پر اپنا کھانا پکا لیتے ہیں ) احمد

کل قیامت کے دن گناہگار کی صورت حال بہت پتلی ہو گی کہ جب اس کے چھوٹے چھوٹے سیاہ اعمال بھی شمار کئے ہوئے ہوں گے اور ان کا ایک انبار بن چکا ہو گا تو وہ کہے گا: {يَاوَيْلَتَنَا مَالِ هَذَا الْكِتَابِ لَا يُغَادِرُ صَغِيرَةً وَلَا كَبِيرَةً إِلَّا أَحْصَاهَا وَوَجَدُوا مَا عَمِلُوا حَاضِرًا وَلَا يَظْلِمُ رَبُّكَ أَحَدًا} ہائے ہماری تباہی اس کتاب نے نہ تو کوئی چھوٹی بات چھوڑی ہے اور نہ بڑی، سب کچھ ہی لکھ  لیا ہے۔ اور جو کام وہ کرتے رہے سب اس میں موجود پائیں گے اور آپ کا پروردگار کسی پر (ذرہ بھر بھی) ظلم نہیں کرے گا۔ [الكهف: 49]

دوسرا خطبہ

تمام تعریفیں اللہ کیلیے ہیں   وہ گناہوں کو معاف فرماتا ہے، عیوب پر پردے رکھتا ہے، اور مشکلات دور فرما دیتا ہے، وہ رات میں اپنا ہاتھ دن میں گناہ کرنے والے کیلیے پھیلاتا ہے تا کہ  وہ توبہ کر لے، اور دن میں اپنا ہاتھ رات میں گناہ کرنے والے کیلیے پھیلاتا ہے تا کہ  وہ بھی توبہ کر لے اور باز آ جائے۔

اللہ کے بندو!

تقوی الہی اختیار کرو، گناہ مت کرو، نہ ہی گناہوں کو معمولی سمجھو، گناہوں سے یکسر باز آ جاؤ، کیونکہ اس سے بہتر بات کوئی نہیں ہے کہ تم کم سے کم گناہوں کے ساتھ اللہ کے سامنے پیش ہو جاؤ۔

مسلم اقوام!

اس وقت گناہوں کے نقصانات بہت سنگین  اور درد ناک  ہوں گے، گناہوں کی سزا اور تکلیف بہت بڑی اور خوف زدہ کر دینے والی ہو گی جب گناہوں کو نیکی سمجھ لیا جائے، لوگ بھی گناہوں کو بطور نیکی قبول کر لیں؛ کیونکہ ایسے میں کوئی بھی گناہ سے روکنے والا اور نیکی کا حکم دینے والا نہیں ہو تا: {لُعِنَ الَّذِينَ كَفَرُوا مِنْ بَنِي إِسْرَائِيلَ عَلَى لِسَانِ دَاوُودَ وَعِيسَى ابْنِ مَرْيَمَ ذَلِكَ بِمَا عَصَوْا وَكَانُوا يَعْتَدُونَ (78) كَانُوا لَا يَتَنَاهَوْنَ عَنْ مُنْكَرٍ فَعَلُوهُ لَبِئْسَ مَا كَانُوا يَفْعَلُونَ} بنی اسرائیل میں سے جو لوگ کافر ہوگئے ان پر داؤد اور عیسیٰ ابن مریم کی زبان سے لعنت کی گئی کیونکہ وہ نافرمان ہوگئے تھے اور حد سے آگے نکل گئے تھے [78] وہ برائی کرنے والوں کو روکتے نہ تھے، ان کا کردار بہت ہی گھٹیا تھا۔ [المائدة: 78، 79]

ابو بکر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی ﷺ نے فرمایا: (جب لوگ برائی کو دیکھ کر ختم نہ کریں تو عین ممکن ہے کہ اللہ تعالی ان سب کو عذاب میں مبتلا کر دے)

نیکی کا حکم اور برائی سے روکنا  -اللہ کے بندو- امت محمدیہ کی خوبیوں میں سے ہے، امر بالمعروف اور نہی عن المنکر  کا فریضہ عذاب سے بچاؤ کا ذریعہ ہے، اس کی وجہ سے دشمنوں اور بیوقوفوں کی چالبازیوں سے تحفظ ملتا ہے، اللہ تعالی نے اس فریضے کا حکم دیتے ہوئے فرمایا: {وَلْتَكُنْ مِنْكُمْ أُمَّةٌ يَدْعُونَ إِلَى الْخَيْرِ وَيَأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ وَيَنْهَوْنَ عَنِ الْمُنْكَرِ وَأُولَئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ} اور تم میں سے کچھ لوگ ایسے ہونا چاہئیں جو نیکی کی طرف بلاتے رہیں، اچھے کاموں کا حکم دیں اور برے کاموں سے روکتے رہیں اور ایسے ہی لوگ مراد پانے والے ہیں [آل عمران: 104]

اس لیے امت محمدیہ! نیکی کا حکم سلیقے سے دو، اور برائی سے اچھے طریقے کے ذریعے روکو: (جو تم میں سے برائی کو دیکھے تو وہ اپنے ہاتھ سے اسے روکے، اگر اس کی استطاعت نہ ہو تو اپنی زبان سے، اور اگر اس کی بھی استطاعت نہ ہو تو پھر اپنے دل میں اسے برا جانے، یہ کمزور ترین ایمان ہے۔)

اللہ کے بندو!

تم سے تمہارے گھرانے اور ماتحت افراد کے بارے میں پوچھا جائے، اس لیے اپنی خواتین اور بیٹوں کے متعلق اللہ سے ڈور، انہیں اللہ کی شریعت کے احکامات سکھلاؤ، اللہ تعالی کی حرام کردہ چیزوں سے روکو، ان کی اعلی اخلاقی اقدار پر تربیت کرو؛ کیونکہ کل تم سے اللہ کے سامنے ان کے بارے میں پوچھا جائے گا، وہ تمہارے خلاف گواہی بھی دیں گے، ان کی گواہی لکھی بھی جائے گی اور باز پرس بھی کیا جائے گا {يَوَدُّ الْمُجْرِمُ لَوْ يَفْتَدِي مِنْ عَذَابِ يَوْمِئِذٍ بِبَنِيهِ (11) وَصَاحِبَتِهِ وَأَخِيهِ (12) وَفَصِيلَتِهِ الَّتِي تُؤْوِيهِ (13) وَمَنْ فِي الْأَرْضِ جَمِيعًا ثُمَّ يُنْجِيهِ} جس دن مجرم یہ تمنا کرے گا کہ اس دن کے عذاب کے عوض اپنے بیٹوں، بیوی ، بھائی، اور سہارا دینے والا کنبہ  قبیلہ بلکہ زمین کی ہر چیز دے دے صرف اس لیے کہ اسے نجات مل جائے۔ [المعارج: 11 - 14]

اس لیے اپنی رعایا کا آج ہی خیال کر لو اور { لَا تَخُونُوا اللَّهَ وَالرَّسُولَ وَتَخُونُوا أَمَانَاتِكُمْ وَأَنْتُمْ تَعْلَمُونَ (27) وَاعْلَمُوا أَنَّمَا أَمْوَالُكُمْ وَأَوْلَادُكُمْ فِتْنَةٌ وَأَنَّ اللَّهَ عِنْدَهُ أَجْرٌ عَظِيمٌ} اے ایمان والو ! دیدہ دانستہ اللہ اور رسول سے خیانت نہ کرو اور نہ ہی تم آپس کی امانتوں میں خیانت کرو [27] اور جان لو کہ تمہارے مال اور تمہاری اولاد تمہارے لئے آزمائش ہیں اور اللہ کے ہاں اجر دینے کو بہت کچھ ہے۔ [الأنفال: 27، 28]

جس کسی سرپرست کو اللہ تعالی ذمہ داری سونپے اور وہ اپنے ماتحتوں کے ساتھ دھوکا دہی کرے تو اللہ تعالی نے اس پر جنت حرام کر دی ہے۔

اور جو شخص اپنے اہل خانہ کی اصلاح کیلیے کوشش کرے، اپنے ماتحت افراد کی شریعت الہی کے مطابق تربیت کرے، ان کے دلوں میں ایمان پیدا کرے تو اس کیلیے بھی اتنا ہی اجر ہو گا جتنا تربیت پانے والوں کو عمل کا ملے گا، نیز ان کے ثواب میں سے کسی قسم کی کمی بھی نہیں کی جائے گی۔

نبی ﷺ سے صحیح ثابت ہے کہ : (جب ابن آدم فوت ہو جائے تو تین ذرائع کے علاوہ سب کا ثواب منقطع ہو جاتا ہے، ان میں آپ ﷺ نے دعا کرنے والی نیک اولاد کا ذکر فرمایا)

مسلم اقوام!

مغرب پسندی اس وقت گھروں میں آ دھمکی ہے، باہمی رابطے کے آلات نے اقدار کو منہدم کر  کے اخلاقیات  کو خراب کر دیا ہے، چنانچہ کل تک جو چیز گناہ تھی وہ آج عرف بن چکی ہے، اور جو چیز کل تک نیکی تھی وہ آج پسماندگی ، رجعت پسندی اور شاذ بن چکی ہے۔

ابو مسعود انصاری رضی اللہ عنہ حذیفہ رضی اللہ عنہ کے پاس آئے تو انہوں نے کہا: "ابو عبد اللہ! ہمیں کوئی نصیحت کر دیں، تو حذیفہ نے کہا: تمہارے پاس ابھی تک یقینی خبر نہیں آئی؟ تو ابو مسعود نے کہا: میرے رب کی عزت کی قسم! کیوں نہیں، وہ تو آ چکی ہے۔ تو حذیفہ رضی اللہ عنہ نے کہا: "یہ بات ذہن میں بٹھا لو کہ حقیقی گمراہی یہ ہے کہ تم آج کسی ایسی چیز کو نیکی سمجھنے لگو جسے تم پہلے گناہ سمجھتے تھے، یا آج کسی چیز کو تم گناہ سمجھو جس کو تم پہلے نیکی سمجھتے تھے، اپنے آپ کو مذہبی رنگ بازی سے بچانا؛ کیونکہ اللہ کا دین ایک ہی ہے""

اس لیے اللہ کے بندو! سنت طریقے پر کار بند رہو، اپنے آپ کو نت نئے امور سے بچاؤ؛ کیونکہ دین میں ہر نیا کام بدعت ہے اور ہر بدعت گمراہی ہے، اور ہر گمراہی آگ میں لے جانے والی ہے۔

یا اللہ! ہمیں حق کی شناسائی عطا فرما اور ہمیں حق کی اتباع کرنے کی توفیق عطا فرما، اور ہمیں باطل سے شناسا فرما اور اس سے بچنے کی توفی عطا فرما۔

یا اللہ! ایمان کو ہمارے لیے محبوب بنا دے اور اسے ہمارے دلوں میں مزین فرما،  ہمارے اندر کفر، فسق اور نافرمانی کیلیے نفرت پیدا کر دے، اور ہمیں رشد و ہدایت والا بنا دے۔

یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما، یا اللہ! اسلام اور مسلمانوں کو غلبہ عطا فرما، اپنے موحد بندوں کی مدد فرما، یا اللہ! اس ملک کو اور تمام اسلامی ممالک کو پر امن اور سلامتی والا بنا۔

یا اللہ! شامی علاقے غوطہ میں کمزوروں کی مدد فرما، یا اللہ! شامی علاقے غوطہ میں کمزوروں کی مدد فرما، یا اللہ! ان کی جانوں کو تحفظ عطا فرما، یا اللہ! ان کی جانوں کو تحفظ عطا فرما، ان کی پردہ پوشی فرما، دہشت زدہ لوگوں کو امن عطا فرما، دہشت زدہ لوگوں کو امن عطا فرما، یا اللہ! ان کی بد امنی کو امن میں بدل سے، ان کی کمزوری کو قوت میں بدل دے، یا اللہ! ان پر ظلم ڈھایا جا رہا ہے ان کا بدلہ چکا دے، یا اللہ! ان پر جارحیت کرنے والوں کے خلاف ان کی مدد فرما، یا قوی! یا عزیز!

یا اللہ! ساری دنیا میں مسلمانوں کے حالات سنوار دے، یا اللہ! ساری دنیا میں مسلمانوں کے حالات سنوار دے، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہمارے حکمران خادم حرمین شریفین کو  خصوصی توفیق سے نواز، ان کی خصوصی مدد فرما، یا اللہ! انہیں اور ان کے ولی عہد کو تیری رضا کے حامل کام کرنے کی توفیق عطا فرما، یا اللہ! انہیں صرف ایسے کاموں کی توفیق عطا فرما جن میں اسلام اور مسلمانوں کی بھلائی ہو، جس میں ملک و قوم کی بھلائی ہو، یا رب العالمین!

یا اللہ! ہماری سرحدوں پر مامور فوجیوں کی حفاظت فرما، یا اللہ! ان کی خصوصی حفاظت فرما، انہیں اپنا خصوصی اہتمام عطا فرما، یا رب العالمین!

اللہ کے بندو!

اللہ تعالی نے تمہیں نبی ﷺ پر درود و سلام پڑھنے کا حکم دیتے ہوئے فرمایا: {إِنَّ اللَّهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا} اللہ اور اس کے فرشتے نبی پر درود بھیجتے ہیں۔ اے ایمان والو! تم بھی ان پر درود و سلام  بھیجا  کرو۔ [الأحزاب: 56]

اَللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ، اَللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ.

یا اللہ! ہدایت یافتہ خلفائے راشدین : ابو بکر ، عمر، عثمان، علی اور دیگر تمام صحابہ سے راضی ہو جا؛ یا اللہ! اپنے رحم و کرم کے صدقے ہم سے بھی راضی ہو جا، یا ارحم الراحمین!

پی ڈی ایف فارمیٹ میں پڑھنے/ ڈاؤنلوڈ کرنے کیلیے کلک کریں 

Comments

شفقت الرحمن مغل

شفقت الرحمن مغل

شفقت الرحمن جامعہ اسلامیہ مدینہ منورہ میں ایم ایس تفسیر کے طالب علم ہیں اور مسجد نبوی ﷺ کے خطبات کا ترجمہ اردو دان طبقے تک پہنچانا ان کا مشن ہے. ان کے توسط سے دلیل کے قارئین ہر خطبہ جمعہ کا ترجمہ دلیل پر پڑھتے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں