اردو میں کتب سیرت :ایک مختصر تعارف - مجتبیٰ فاروق

اللہ تعالیٰ نے انسان کی پیدائش کے ساتھ اس کی رشد و ہدایت کا انتظام فرمایا تاکہ وہ اللہ کی فرمانبرداری کر کے ابدی راستہ کا انتخاب کر سکے۔ اللہ تعالیٰ نے ہر قوم کے لیے ہادی کو روانہ کیا۔ ہادیوں کا یہ سلسلہ حضرت آدم سے شروع ہو ا تھا اور حضرت محمد مصطفیٰ ﷺکی ذات اقدس پر ختم ہوجاتا ہے۔ آپ ﷺ نوع انسانیت کے لیے آخری رہبر و رہنما ہے اور قرآن کے بعد ہدایت کا دوسرا بڑا ذریعہ بھی ہے۔ آپ ﷺ ہی کے ہاتھوں دین کی تکمیل ہوگئی۔ اللہ کے رسول ﷺسے پہلے جو انبیا ء کرام مبعوث ہو ئے تھے وہ کسی خاص قوم اور زمانہ کی اصلاح اور رہنمائی کے لیے آئے تھے۔ حضرت محمدمصطفیٰﷺ کسی خاص قوم، گروہ، نسل یا خطے کی رہنما ئی کے لیے نہیں بھیجے گئے بلکہ پوری انسانیت کے لیے مبعوث ہو ئے۔ آپ ﷺ کی سیرت اور آپ کا مشن بین الاقوامی ہے اور یہ مشن قرآن کے دائمی اصولوں کی تعبیر و تفسیر ہے۔ آپ ﷺ نے ایک ایسا نظریہ پیش کیا جو خیالی نہیں بلکہ عملی، آفاقی اور ہر لحاظ سے جامع اور کامل ہے۔ آپ ﷺکی تعلیمات میں ہمہ گیر، عالمگیر اور کامل نمو نہ ہے۔ آپ ﷺکی تعلیمات پرعمل پیرا ہو نے میں ہی عالم انسانیت کی حقیقی فلاح و کامرانی اور نجات مضمرہے۔ آپ ﷺ کی سیرت کو اسوہ حسنہ قرار دیا گیا۔ اسی وجہ سے آپ ﷺ کی حیات مبارکہ کی ایک ایک کرن کو سیرت نگاروں نے مدون و محفوظ کیا ہے۔ یہ سلسلہ عہد نبوی ﷺکے دور ہی سے شروع ہوا اور روایات کے ذریعہ سے دوسری نسل تک پہنچانے کا کام صحابہ کے دور میں شروع ہوا۔ تب سے لے کر آج تک سیرت پر لکھنے کا کام بلاناغہ جاری ہے۔

سیرت کے لغوی معنی راستہ کے ہیں اور اس کا اطلاق نبی کریم ﷺ حالات و تعلیمات اور واقعات کے مجموعہ پر ہوتا ہے۔ شاہ عبدالعزیز دہلوی ؒ نے سیرت کی یہ تعریف بیان کی ہے کہ ’’ جو کچھ ہمارے پیغمبر ﷺ، حضرت صحابہ اور آں عظام کے مبارک وجود کے ساتھ متعلق ہو اور حضور ﷺ کی پیدائش سے وفات تک واقعات پر مشتمل ہو سیرت کہتے ہیں ‘‘۔ ہر دور میں حالات کے رجحانات کے مطابق نئے نئے اسالیب اور مناہج کے مطابق سیرت پر کتابیں لکھی گئیں۔ سیرت رسول ﷺ پر بلا مذہب و ملت اصحاب علم و فن نے قلم اٹھایا اور ہر پہلو پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ آج تک اسلامی و علوم و فنون پر جتنا لکھا گیا ہے اس میں غالب حصہ سیرت رسول پر مشتمل ہے۔ اس تعلق سے اردو زبان مالا مال ہے اس زبان میں سیرت کی قابل تحسین اور محقق کتابیں لکھی گئی ہیں۔ ایک اندازے کے مطابق اردو میں دس ہزار سے زائد کتابیں تیار کی گئی ہیں اور سیرت پر غالبا کسی اور زبان میں کتابیں نہیں لکھی گئی ہیں۔ یہ سلسلہ مولانا سید سلیمان ندویؒ کی ’’رحمت عالم‘‘ اور مولانا ابو الحسن علی ندوی ؒ کی ـ’’رحمت عالم‘‘ سے لے کر ۱۳ جلدوں پر مشتمل ’ نقوش ‘ کے ’’رسول نمبر‘‘تک پھیلا ہے۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم اپنے اوقات کو منظم کر کے ان کتب سے بھر پور استفادہ کریں۔ زیر نظر مضمون میں سیرت کی چند نمایا ں کتابوں کا مختصر تعارف پیش کیا جارہا ہے:

سیرۃ النبی ﷺ: علامہ شبلی نعمانیؒ اور سید سلیمان ندوی ؒ

علامہ شبلی نعمانی ؒ انیسویں اور بیسویں صدی کی ایک معروف محقق اور سیرت نگار ہیں جنھوں نے اپنی بے بہا اور قیمتی نگارشات سے علمی دنیا کو مالا مال کیا ہے۔ انھوں نے سیرۃ النبی کے نام سے کتاب لکھی ہے جس کا بدل غالبا عربی زبان میں بھی نہیں ہے۔ برصغیر میں قرآنی context اور درایات حدیث پر پرکھنے کا جدید رجحان دینے والی علمی شخصیت علامہ شبلی نعمانیؒ ہیں۔ علامہ موصوف سیرت نگاری کے تعلق سے لکھتے ہیں کہ ’’ میں نے سیرت نبوی پر ایک مبسوط کتاب لکھنے کا ارادہ کر لیا۔ لیکن واقع یہ ہے کہ کوئی تصنیف اس تصنیف سے زیادہ دیر طلب اور جامع مشکلات نہیں ہوسکتی۔ ‘‘ہر فرد کو بالخصوص اسلامیات سے دلچسپی رکھنے والوں کو اس کتاب کا بالاستعیاب ضرور مطالعہ کرنا چاہیے۔

ضیاء النبی :محمد اکرم شاہ الازہری ؒ

یہ سیرۃ النبی ﷺکے بعد دوسری بڑی ضخیم کتاب ہے۔ یہ سات جلدوں پر مشتمل ہے اور سیرت کے ہر پہلو پرمفصل روشنی ڈالی گئی ہے۔ اس کتاب میں تحقیقی انداز غالب ہے اور ہر بات حوالوں کے ساتھ لکھی گئی ہے۔ مزید یہ کہ قدیم و جدید کے تمام ماخذوں سے بھر پور استفادہ کیا گیا ہے۔ اس لحاظ سے اس میں دوسری کتابوں کے مقابلے میں خوبیاں نمایاں ہیں۔ حکومت پاکستان وزارت مذہبی امور نے اس کتاب کو ۱۹۹۴ ء میں پہلے انعام کا مستحق ٹھہرایا۔

یہ بھی پڑھیں:   امام الانبیاء ﷺ بحیثیت شوہر - عبدالباسط ذوالفقار

سیرت سرور عالم : مولانا مودودی ؒ

ایک اور مایہ ناز تصنیف ہے۔ یہ اگرچہ مولانا مودودی کی کوئی باقاعدہ تصنیف نہیں ہے اس کو مولانا نعیم صدیقی اور مولانا عبدالوکیل علوی نے تفہیم القرآن اور کچھ دوسرے تصانیف سے مرتب کر کے دو جلدوں میں شائع کیا۔ اب اس کی تیسری جلد بھی شائع ہو چکی ہے۔ تینوں جلدوں میں سیرت کے مختلف پہلووں پر تفصیل سے روشنی ڈالی گئی ہے۔ مولانا محترم نے اس میں معتدل تجزیے کے ساتھ ساتھ منفرد اسلوب میں سیرت رسول کو روشناس کرایا۔

در یتیمﷺ : ماہر القادریؒ

اس کتاب کے مصنف ماہر القادری ہیں جو ایک اعلیٰ پایہ کے ادیب بھی تھے۔ انھوں نے اس کو ناول کے انداز میں لکھ ڈالی ہے۔ یہ سیرت میں ادب کے لحاط سے ایک شاہکار تصنیف ہے اور بر صغیر میں اس کو دلجمعی اور دلچسپی کے ساتھ مطالعہ کیا جاتا ہے۔ یہ پہلی بار پاکستان میں ۱۹۴۹ء میں شائع ہوئی۔ سیرت کا مطالعہ کرنے والوں کے لیے یہ ایک نادر تحفہ ہے۔

اصح السیر : حکیم ابو البرکات عبدالرؤف دانا پوری ؒ

اصح السیر سیرت نبوی پر ایک بہترین تحفہ ہے اس کے مصنف حکیم ابو البرکات عبدالرؤف دانا پوری ہیں۔ اس میں مقدمہ سیرت مع تاریخ، پھر سیرت رسول ﷺ ولادت تا وفات، انساب کا حال، مکمل کتاب المغازی، مکمل کتاب الاموال، کتاب بالوفود، حجۃ الوداع کا مٖفصل حال، ازواج النبی کے حالات اور بے شمار معلومات کا ذخیرہ ہے اور یہ سب چیزیں صحیح ترین روایات سے ماخوز ہیں۔

محاضرات سیرت ﷺ: ڈاکٹر محمود احمد غازی ؒ

محاضرات سیرت دور جدید میں سیرتی لٹریچر میں ایک اہم اضافہ ہے۔ اس کے مصنف معروف مفکر ڈاکٹر محمود احمد غازی ؒ ہیں انھوں نے ان خطبات یا محاضرات میں بحر بے کراں کو بند کر کے کتاب کو صحیح معنوی میں دریا در کوزی کرنے کی مثال بن گیا ہے۔ یہ دراصل سیرت سے نہیں بلکہ علم سیرت سے بحث کرتی ہے۔ محاضرات سیرت بارہ خطبات پر مشتمل ہے جن میں نصف کا تعلق فن سیرت کی تاریخ اور تدوین سے ہے۔ ڈاکٹر صاحب نے ان خطبات میں مغربی مستشرقین اور ان کے پیروں کاروں کی پیدا کردہ غلط فہمیوں، موشگافیوں اور الجنھوں کو دور کرنے کی بھرپور کوشش کی ہے۔ اس کتاب سے قاری کو بہت سے نئے گوشوں کو پڑھنے کا موقع ملتا ہے۔

النبی الخاتم ﷺ : مولانا مناظر احسن گیلانیؒ

النبی الخاتم سیرت پر ایک اعلیٰ درجہ کی کتاب ہے۔ یہ ۴۵۰ عنوانات پر مشتمل ہے جن میں ۳۰۰ سے زائد عناوین کا تعلق النبی الخاتم کی پاک زندگی و مقدس سیرت کے مختلف پہلووں کے متعلق بحث کی گئی ہے۔ اس کتاب کی ادبی چاشنی بھی لائق صد تحسین ہے۔ وہ نبی کریم ﷺ کی شخصیت کے بارے میں لکھتے ہیں ’’یوں آنے کو سب ہی آئے۔ سب میں آئے۔ سب جگہ آئے (سلام ہو ان پر) کہ بڑی کٹھن گھڑیوں میں آئے۔ لیکن کیا کیجیے، ان میں جو آیا جانے کے لیے آیا، پر ایک اور صرف ایک، جو آیا اور آنے ہی کے لیے آیا وہی جو آنے کے بعد پھر کبھی نہیں ڈوبا چمکا اور چمکتاہی چلا جارہا ہے۔ بڑھا اور بڑھتا ہی چلا جارہا ہے۔ چڑھا اور چڑھتا ہی جارہا ہے۔ ‘‘

محمد عربی ﷺ: مولانا محمد عنایت اللہ سبحانی

محمد عربی اردو زبان میں ایک مقبول عام کتاب ہے۔ دور جدید میں برصغیر میں سیر ت رسول ﷺ پر منفرد انداز سے لکھنے والے مولانا عنایت اللہ سبحانی کا ایک اہم رول ہے۔ مولانا کو سیرت لکھنے کا منفرد انداز ہے۔ سیرت پر ان کی ایک کتاب’’محمد عربی‘‘ پاک و ہند میں مشہور و معروف ہے۔ جو بڑے منفرد انداز سے لکھی گئی ہے۔ جو تذکیری پہلووں سے بھی مزین ہے۔ یہ کتاب ۱۴ ضخیم ابواب پر مشتمل ہے۔ ان ابواب کے عناوین بھی بے حد دلچسپ ہے جو نہ صرف دل کو چھو لینے والی ہیں بلکہ ان میں سوز و گداز بھی ہے۔ کتاب کے چند عناوین یہ ہیں : ہوتی ہے سحر پیدا، کرنیں ابھرتی ہیں، خدا کی آواز، پھلی پکار طوفانی کشمکش، نازک مرحلے، اور کارواں بنتا گیا، دعوت حق تلواروں کے چھاؤں میں وغیرہ وغیرہ۔

یہ بھی پڑھیں:   خالق و مخلوق کے عارف - ابو یحییٰ

محسن انسانیتﷺ : مولانا نعیم صدیقی ؒ

محسن انسانیت بھی سیرت پر ایک شاہکار کتاب ہے۔ بقول ماہر القادری ’’اردو زبان میں ہی نہیں بلکہ دوسری زبانوں میں بھی جن اہل نظر اور ارباب علم کی نگاہ سے سیرت کی کتابیں گزری ہیں وہ محسن انسانیت کو پڑھ کر اس کی انفرادیت کو ضرور محسوس کریں گے‘‘ ضمیمے کے ساتھ یہ کتاب ۷ ابواب پر مشتمل ہے۔ پہلا باب سیرت کا پیغام، نصب العین اور تاریخی مقام کے عنوان سے ہے۔ دوسرا باب شخصیت ایک نظر میں کے نام سے ہے تیسرا باب مکی دور سے تعرض کرتا ہے چوتھا باب مدنی دور سے بحث کرتا ہے۔ پانچواں باب تلواروں کی چھاؤں پر ہے جو نظریہ جہاد اور غزوات النبوی سے متعلق ہے۔ قاری اس کتاب سے تب ہی پوری طرح سے مستفید ہوسکتا ہے جب وہ یہ باب ذہن میں مستحضر رکھیے کہ سیرت کا مطالعہ کس مقصد کے لیے کرنا ہے؟

عہد نبوی کا تمدن : ڈاکٹر یٰسین مظہر صدیقی

عصر حاضر میں ڈاکٹر یٰسین مظہر صدیقی کا شمار بڑے سیرت نگاروں میں ہوتا ہے۔ انھوں نے سیرت نبوی کے مختلف پہلووں پر قابل ذکر کام کیا ہے۔ ’عہد نبوی کا تمدن ‘ بھی اس کی ایک کڑی ہے۔ کتاب پانچ ابواب پر مشتمل ہے پہلا باب عہد نبوی کے کھانوں پر ہے جس میں کھانے کی بنیادی ضروریات کو آیات قرآنی کے حوالے سے مختلف زاویوں سے اجاگر کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ دوسرا باب عہدنبوی کے ملبوسات پر ہے جس میں تمام ضروری لباسوں پر بحث کی گئی ہے۔ تیسرا باب آرائش بدن کے مختلف پہلووں کا احاطہ کرتا ہے۔ چوتھواں باب عہد نبوی کے مکانات اور اسباب زیست سے تعرض کرتا ہے۔ پانچواں باب میں مختلف تقریبات کا ذکر ہے۔ اس کتاب کا مطالعہ ضرور کرنا چاہیے۔

دروس سیرت : ڈاکٹر محمد سعید البوطی ؒ

یہ کتاب دراصل عالم عرب کے معروف عالم دین اور مربی ڈاکٹر محمد سعید البوطی کی عربی تصنیف فقہ السیرۃ النبویۃ کا اردو ترجمعہ ہے جسے معروف اسکالر ڈاکٹر رضی الاسلام ندوی صاحب نے نہایت شستہ انداز میں اردو میں منتقل کیا ہے۔ یہ سات ابواب پر مشتمل ہے پہلے باب میں سیرت نگاری پر بحث کی گئی ہے باقی ابواب کے نام یہ ہیں : ولادت سے بعثت تک، بعثت سے ہجرت تک، نئے معاشرے کی بنیادیں، دفاعی جنگ کا مرحلہ، اور فتح، مقدمات اور نتائج۔ اس کتاب کی بنیادی خصوصیت یہ ہے کہ قاری کو ہر موقع پر یہ نصحیت اور تحریک ملتی ہے کہ مجھے بھی سیرت پاک کی کرنوں میں اپنے آپ کو رنگنا چاہیے۔

الرحیق المختوم : مولانا صفی الرحمٰن مبارک پوری ؒ

الرحیق المختوم کا پس منظر یہ ہے کہ ۱۹۷۶ ء میں کراچی کی بین الاقومی سیرت کانفرنس کے اختتام پر رابطہ عالم اسلام نے سیرت نبوی ﷺ کے موضوع پر مقالہ نویسی کا ایک عالمی مقابلہ کرنے کا اعلان کیا جس میں دنیا بھر کے اہل علم کو سیرت نبوی کے موضوع پر مقالہ لکھنے کے لیے دعوت دی گئی۔ اس مقابلہ میں دنیا بھر سے ۱۷۱ مقالے پیش کیے گئے جن میں ۸۴ مقالات عربی زبان میں تھے۔ ان مقالات کی خوب جانچ پڑتال کی گئی جس کے بعد رابطہ عالم اسلام کی قائم کردہ سیرت کمیٹی کی سفارشات کے مطابق مولانا صفی الرحمٰن مبارکپوری کا مقالہ ’الرحیق المختوم‘ جو لحاظ سے تحقیقی نوعیت کا ہے اور اس کو پہلے انعام کامستحق قرار دیا گیا۔ اس ایوارڑ یافتہ کتاب کو لوگوں میں ہر اعتبار سے پزیرائی ملی اور علمی حلقوں نے اس کو خوب سراہا۔ اس وقت یہ سیرت کی بہترین کتابوں میں سے ایک ہے۔

حیات سرورکائنات محمد : مارٹن لنگس( ابو بکر سراج الدین)

حیات سرورکائنات محمد (Muhammad : His life Based on Earliest Sources) ایک نو مسلم انگریزی ادب کے اسکالر مارٹن لنگس(ابو بکر سراج الدین) نے لکھی ہے۔ یہ کتاب سیرتی لٹریچر میں ایک اہم اضافہ ہے اور اس کا متعدد زبانوں میں ترجمہ بھی ہوچکا ہے۔ اس تصنیف کی ایک خاص بات یہ ہے کہ مصنف نے عربی کے بنیادی اور اصل ماخذسے استفادہ کر کے احوال و کوائف سے غیر معمولی نتائج اخذ کیے ہیں جو یقینا قارئین کے لیے دلچسپی کا باعث ہیں۔ اس کا شستہ اردو ترجمعہ سعید معین الدین قادری نے کیا ہے۔