وسوسۂ شیطان اور نفس میں فرق کیا ہے؟ - پروفیسر احمد رفیق اختر

حدیثِ قُدسی ہے کہ خداوندِ کریم نے نفسِ انسان کی شکل میں اپنا بدترین دشمن پیدا کیا۔ آخر نفس ہے کیا؟ مُدتوں، قرن ہا قرن سے self یا نفس پر گفتگو ہوتی رہی ہے۔ ایک اللہ کے ولی نے کہا کہ دو چیزیں آج تک سمجھ میں نہیں آئیں کہ فریبِ نفس کتنے ہیں اور مقامِ رسول اللہ صلى اللہ عليہ وسلم کتنے ہیں؟ دراصل تعلیماتِ نفس بیسویں اور اکیسویں صدی میں مرتب ہوئیں۔ اس سے پہلے اس علم کو یا لفظ کو کوئی علیحدہ وجود اور شناخت نہیں دی گئی، اس لیے کسی کی سمجھ نہیں آ رہا تھا کہ انسان کیا ہے؟ نفس کیا ہے؟ اور اس کا طرزِ عمل کیا ہے؟ یہ سلوک میں کہاں مزاحمت کرتا ہے اور انسانی ترقی میں کہاں معاونت کرتا ہے اور ازل سے ہر سمت کارخانہ نفس جاری و ساری تھا۔ اس کے باوجود یہ طلسمِ ہوشرُبا کا وہ جادوگر تھا کہ جس کے طلسم میں سے نکلنا کسی طلسم کُشا کے بس کی بات نہ تھی۔

یہ عجیب بات ہے کہ اللہ بھی نفس رکھتا ہے یہ نہیں کہ صرف ہمارا ہی نفس ہے۔ پروردگار نے قرآن حکیم میں فرمایا کہ :"وَيُحَذِ رُكُمُ اللہ نَفسَہ" (اللہ تمھیں اپنے نفس سے ڈراتا ہے) اور آپ کو یاد ہوگا پرانے زمانے میں فتنۂ اعتزال اُٹھا تھا، جن کو ہم مُعتزلہ کہتے ہیں جو آج پھر اُٹھ رہا ہے جو قرآن کو اللہ کا لفظ نہیں سمجھتا بلکہ خیالِ خدا سمجھتا ہے۔ وہ قرآن کو خیالِ خدا اور اس کے الفاظ پیغمبر صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے سمجھتا ہے۔

جدید فکر میں فتنے بھی پلٹائے جاتے ہیں۔ انسانی اوہام، انسانی وساوس اور فتنوں میں، نفس اور الہامِ شیطان میں کچھ فرق ہوتا ہے اور وہ بنیادی فرق جنیدِ بغداد نے ہمیں واضح کیا۔ جب اُن سے پوچھا گیا کہ استادِ محترم نفس میں اور فتنہ شیطان میں کیا فرق ہے؟ تو انہوں نے کہا کہ "شیطان جگہ بدلتا ہے، وہ ایک مقام پر نہیں ٹھہرتا اور وقت ضائع نہیں کرتا"، اگر ایک جگہ اس سے آپ بچ نکلے ہوں تو کسی اور شہوت کے رُخ میں آپ کو ڈال دیتا ہے۔ مگر نفس وہ خراب کار ہے جو مستقل اپنی شناخت برقرار رکھتا ہے اور کسی خواہش یا آرزو کے ذریعے یہ بار بار آپ پر اُسی چیز کا حملہ کرتا ہے جس سے آپ نجات حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ یہ بنیادی فرق ہے وسوسۂ شیطان میں اور نفس میں۔ میں اگر اسے انگریزی میں بیان کروں تو یہ Recurrent aggression of thought (کسی خیال کی جارحانہ انداز میں تکرار) ہے اور وسوسۂ شیطان جو ہے یہ Changeable position of immoralities ( نوعیت بدلنے والی بد اخلاقیاں) ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   نفس کی تمنا - امم فرحان

(لیکچر "نفس، انسان اور شیطان" سے ماخوذ)

ٹیگز