اُمید میں بہار، نااُمیدی میں کفر - ابراہیم جمال بٹ

ماں کے لاڈلے بیٹے کو اسکول سے ایک نوٹس ملی جس میں اسے اس بات سے مطلع کیا گیا کہ ’’آپ کا بیٹا پڑھائی میں اس قدر سست ہے کہ اس سے دوسرے بچوں کے متاثرین ہونے کا احتمال ہے اس لیے آپ اسے کسی دوسرے کسی اسکول میں داخلہ کرائیں ……‘‘ سکول انتظامیہ کی طرف سے بھیجا گیا یہ خط جب ماں نے پڑھا تو کچھ دیر کے لیے وہ پریشان ہو گئی لیکن جب بچے نے خط کے بارے میں پوچھا تو ماں نے کہا کہ اس میں سکول انتظامیہ کی طرف سے تمہارے بارے میں کہا گیا کہ ’’تمہارا بیٹا بہت ہی ذہین و فطین ہے اور اس کی ذہانت کو چار چاند لگانے کے لیے کسی دوسرے اچھے اسکول کا انتخاب ضروری ہے، لہٰذا آپ اس کا داخلہ کسی اور اسکول میں کرائیں تاکہ یہ بچہ مزید اچھی طرح سے اپنی ذہانت میں اضافہ کر سکے۔ ……‘‘

سالہا سال گزرنے کے بعد اس بچے کی ماں آخر کار اس دنیا سے انتقال کر گئیں تاہم ان کا وہ خط جو انہوں نے الماری میں رکھا تھا موجود رہا۔ ایک دن اچانک بیٹا جو اب بہت بڑا ہو چکا تھا الماری سے کچھ ڈھونڈ رہا تھا کہ ایک چھوٹی سے ڈائری ملی جو اس کی ماں نے الماری میں رکھی تھی۔ ڈائری کے اوراق پھیرتے پھیرتے ایک لفافہ بند خط بھی اس میں تھا جسے کھول کر بیٹا دم بخود ہو کر رہ گیا، دراصل یہ وہی خط تھا جو اسکول انتظامیہ نے ماں کے نام لکھا تھا۔ بیٹا اس میں ساری تفصیل پڑھ کر ایک اہم درس سمجھ گیاکہ انسان میں امید اور اس کی حوصلہ افزائی پیدا کرنے کی کوشش کرنی چاہیے جس سے ناامیدی کافور ہو جاتی ہے اور امید کا پھل نصیب ہو پاتا ہے۔ کچھ دیر خاموش رہنے کے بعد بیٹا اپنی ماں کی سوچ پر فخر کرنے لگا اور اس کا وہ جھوٹ جو اس نے بیٹے کی ناامیدی کو ختم کرنے کے لیے کہی تھی پر دل ہی دل میں ماں کی عظمت کو سلام کہا۔ ماں کا یہی لاڈلا بیٹا ہے جو آج پوری دنیا میں مشہور ومعروف ہے، انہوں نے بجلی کے بلب کا تجربہ کیا اور کامیابی نے اس کے قدم چومننے میں کوئی دیر نہیں لگائی، جی ہاں یہ ’’تھامس ایڈیسن‘‘ تھے جسے اپنی ماں کے دیے ہوئے حوصلہ نے وہ کام کرایا جس کا بظاہر وہ حقدار نہیں تھا۔

یہ بھی پڑھیں:   مؤمن کا بےسکونی، بدشگُونی، مایوسی کا شِکار ہونا – عادل سہیل ظفر

خدا ذوالجلال والاکرام نے قرآن پاک میں فرمایا ہے کہ ’’اللہ کی رحمت سے مایوس نہ ہو‘‘۔ بلکہ کسی دانشور نے بھی کیا خوب کہا ہے کہ: ’’لوگوں میں اُمید پیدا کرو لیکن اس کے لیے اپنے اندر حکمت اور نرمی لانے کی ضرورت ہے۔‘‘

سیرت رسول اللہﷺ میں آیا ہے کہ جب کوئی بیمار ہوتا تھا تو خود رسول اللہ ﷺ عیادت کے لیے جاتے،نہ صرف مریض کی شفایابی کے لیے دعا کرتے بلکہ اسے تسلی اور اطمینان دیا جاتا کہ ان شاء اللہ جلد صحت یابی نصیب ہو گی۔ ……بلکہ سیرت صحابہ رضی اللہ عنہم کی سیرت میں آتا ہے کہ وہ جب کسی کے چہرے کو دیکھتے اور ظاہر ہوتا کہ وہ بیمار لگ رہا ہے تو اس کی حالت کو دیکھ کر ایسے بات کرتے کہ جیسے اسے کچھ نہیں ہوا ہو۔ دراصل یہ سب کچھ اطمینانی کیفیت کا پیدا کرنا ہی تھا جو ’’مرنے سے پہلے ہی مارنے کے کام کے بدلے بیمار میں جینے کی ہمت دیتا تھا۔

بہرحال، کام کتنا بھی مشکل ہو، ہر کام کیا جاسکتا ہے لیکن اس کے لیے بڑوں کا ساتھ، ان کی ہمدردی، ان کی طرف سے حوصلہ افزائی، اور سب سے بڑی چیز توکل علی اللہ ہے۔ یہ ایسے گُر ہیں جن پر کاربند رہ کر انسان مشکل سے مشکل کام کرنے سے بھی نہیں کتراتا۔ ماں باپ، اساتذہ و مربی اور بڑے بزرگوں کی طرف سے اگر بندہ ٔخدا کو ہر محاذ پر کام کرنے کا حوصلہ ملے تو ایک طالب علم، ایک تجارت پیشہ، ایک استاد جو بچوں کو نکھارتا بھی ہے اور بگاڑتا بھی ہے، وہ شخص جو دعوت دین کے کام میں مزید وسعت لانے کا خوگر ہو، کو اپنے کام میں حوصلہ نصیب ہو گا جس سے ایک بڑا اور کٹھن کام بھی اسے آسان سا دکھائی دے گا۔

آج اس کی اشد ضرورت ہے، ناامیدی کے پھیلانے سے امید کے دروازے بند ہو جاتے ہیں، آج ہر کوئی ناامیدی ہی کا پرچار کر رہا ہے۔ ایک استاد اپنے شاگردوں کو یہ کہنے میں کوئی جھجھک محسوس نہیں کر رہا ہے کہ ’’تم سب نہیں پڑھو گے، تم سب کے سب پڑھائی میں کمزور ہو‘‘۔ ماں باپ اپنے بچوں میں مثبت سوچ، یقین اور حوصلہ دینے کے بجائے ان میں منفی سوچ، غیر یقینیت اور حوصلہ شکنی کا عملی درس دے رہے ہیں۔ ایک داعیٔ دین یہ کہہ کر عوام کو اپنے سے دور کر دیتا ہے کہ تو بدعتی، تو کافر، تو فاسق وغیرہ ہے۔ ایسی صورت حال میں دنیا میں رہنے والے لوگوں کی سوچ ہی بدل گئی ہے۔ وہ کسی بھی کام کو کرنے سے پہلے اس کے منفی پہلو پر سوچتے ہیں، اس کا لفظ لفظ اسے دوسروں سے قریب کے بجائے دوری کا سبب بن رہا ہے۔ وہ خود چاہے کچھ بنے یا نہ بنے لیکن دوسروں پر جج بن کر ان کی حوصلہ شکنی میں پیش پیش رہتا ہے۔ اصل میں یہ تربیت جس میں مثبت سوچ، یقین محکم اور حوصلہ افزائی کا فقدان ہے، کی وجہ سے نئی پود میں مال ومتاع کی کثرت کے باوجود اطمینانی کیفیت نصیب نہیں ہوتی، کی کمی ہے جس کی وجہ سے اطمینان اور حوصلے کی کمی پائی جاتی ہے۔ اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں ہر کام حکمت، نرم مزاجی سے کرنے اور اپنوں کے ذہن وگمان میں یقینیت کا ماحول پیدا کرنے کی توفیق بخشے۔ آمین!

error: اس صفحے کو شیئر کیجیے!