ختم نبوت کے حلف میں ترمیم سے میں نے کیا سیکھا؟ - عادل سہیل ظفر

" اِسلامی جمہوریہ پاکِستان" کی" مُسلم اکثریت " پر مبنی " مُسلم حکومت " نے اپنے " غیرت مند مُسلمان" ہونے کا ثبوت پیش کرتے ہوئے، اپنی حقیقت پر سے مزید پردہ اُٹھاتے ہوئے واضح کر دِیا ہے کہ اُس حکومت میں شامل، اُس حکومت کی مجلسوں (پارلمینٹس، اسمبلیز) میں جا کر بیٹھنے والے سب ہی لوگ خواہ وہ دِین داری کے لبادے میں ہوں یا دُنیا داری کے پیرہن میں، سب کے سب میرے وطن کے تقریباً سب ہی باسیوں کی طرح ذِہنی غُلام ہیں۔ جِنہوں نے اِن مجلس نشینوں کو چُنا وہ اِن کے غلام ہیں اور یہ مجلس نشین اُن کے غلام ہیں جِن کے اشاروں پر وہ حرکت کرتے ہیں۔

اِس موضوع پر بہت سے احباب بہت کچھ کہہ چکے، اور کہہ رہے ہیں، اور کہیں گے کہ، آئین میں، کِسی قِسم کے حلف نامے یا اقرار نامے کی الفاظ میں تبدیلی کرنے سے آئینی، قانونی اور دُنیاوی طور پر کِس کو کیا فائدہ ہوسکتا ہے، اور یہ سب کچھ کیوں کیا گیا؟ میں اِس بحث میں داخل نہیں ہونا چاہتا کیونکہ یہ بہت واضح ہے کہ یہ سب کچھ صِرف ایک ایسے شخص کی سربراہی کو بحال کرنے کے کیا گیا جو آئینی اور قانونی طور پر سیاست و سیادات کے لیے نااہل قرار پا چکا، اور سیاست و سیادات بھی وہ جو فقط دُنیا کی غلاظتوں میں لُتھڑی ہوئی ہے۔

میں تو اپنے ہم وطنوں کی توجہ اِس طرف مبذول کرنا چاہتا ہوں کہ ذرا اپنی ذہنی غُلامی کا معیار پہچانیے، اپنے اِیمان کو جانچیے، کیا واقعتاً آپ آزاد ہیں؟ ہم سب اکثر اِس قِسم کی باتیں کرتے ہیں کہ " اللہ کو حساب دینا ہے "، کیا واقعتا ہم روز حساب پر اِیمان رکھتے ہیں؟ اگر ہاں تو پھر یہ سوچیے کہ جب اللہ عزّو جلّ کے سامنے حاضری ہو گی اور یہ سوال ہو گا کہ، ہم نے بتا دِیا تھا کہ ہم نے ہمارے رسول محمد کو تم لوگوں کے پاس اِس لیے بھیجا تھا کہ لِتُؤمِنُوا بِاللَّہِ وَرَسُولِہِ وَتُعَزِّرُوہُ وَتُوَقِّرُوہُ وَتُسَبِّحُوہُ بُکرَۃً وَاَصِیلاً تاکہ تُم لوگ اللہ پر اِیمان لاؤ اور رسول پر اور میرے رسول کی عِزت کرو اور اُس کی توقیر کرو اور صُبح اورشام اللہ کی پاکیزگی بیان کرو
تو تم لوگوں نے کیا کِیا؟ میرے رسول کی کیا عِزت کی؟ میرے رسول کی کیا توقیر کی؟ تمہارا اِیمان، تمہاری حُب رسول تو تمہارے اختیار کردہ لیڈرز، جماعتوں، اور افکار کے غلام تھے، کہ میرے رسول کی رسالت کے بعد میری طرف سے کوئی دلیل کوئی بُرھان نہ ہوتے ہوئے، بلکہ میرے فرمان مَا كَانَ مُحَمَّدٌ أَبَا أَحَدٍ مِنْ رِجَالِكُمْ وَلَكِنْ رَسُولَ اللَّهِ وَخَاتَمَ النَّبِيِّينَ وَكَانَ اللَّهُ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِيمًا (محمدؐ تم لوگوں میں سے کسی بھی مرد کے باپ نہیں لیکن وہ اللہ کے رسول ہیں، اور سب نبیوں کے (سلسلے کا) اختتام کرنے والے ہیں، اور اللہ ہر بات کو خُوب عِلم رکھتا ہے)، کا کُفر کر تے ہوئے کِسی اور کو نبی ماننے والوں کا ساتھ دینے والوں کو اور تمہاری دُنیا اور آخرت لوٹنے والوں کو اپنا راہبر بنائے رکھا، اور یہاں تک جا پہنچے کہ ایسے کفار کو اپنے سربراہ بنا لینے پر بھی راضی ہو گئے۔

یہ سوال ہر ایک مُسلمان سے ہونا ہے، خواہ وہ کِسی بھی مسلک و مذہب کا سالک رہا ہو، کیونکہ سب کا نبی ایک وہی آخری نبی محمد صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم ہے، جِس کے بعد نہ کوئی نبی تھا نہ کوئی معصوم۔

پس میرے بھائیو، میری بہنو! اپنی آخرت کی فِکرکرتے ہوئے، اپنے رسول کریم محمد صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کی عِزت و توقیر کے لیے، اُن لاکھوں لوگوں کی قُربان کردہ جانوں، مال، اور عِزتوں کی تکریم کرتے ہوئے، جنہوں نے " پاکِستان کا مطلب کیا، لا اِلہَ اِلا اللہ " کے لیے قُربانیاں دِیں۔ اپنے اِس نام نہاد "اِسلامی" پاکستان پر کِسی کافر، کِسی چور، کِسی لُٹیرے کی سربراہی کے امکانات تک بھی نہ ہونے دیجیے۔

یاد رکھیے، بلکہ یقین رکھیے کہ اللہ تعالیٰ کے سامنے کوئی بھی دُوسرا آپ کے کِسی کام نہیں آئے گا اور یہ بھی یاد رکھیے یہ جِس نام نہاد جمہوریت کے لیے آپ اپنی دُنیا اور آخرت کی رسوائیاں مول لے رہے ہیں یہ آپ جمہور کی آزادی کا خاتمہ ہے۔

دیکھیے جِن لوگوں کو آپ اپنے راہبر اپناتے ہیں وہ آپ کو کون سی راہوں پر دھکیلے چلے جا رہے ہیں ؟ اپنے اذہان کو اِس غلامی سے آزاد کروائیے، اپنے قُلوب کو اِس غلامی سے پاک کیجیے، اللہ جلّ و عُلا اور اُس کے رسول کریم محمد صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی غُلامی اپنائیے، اِسی میں دُنیا اور آخرت کی حقیقی کامیابی ہے۔

آج ہم بحیثیت قوم اپنے رسول کریم محمد صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کے اِس فرمان کے عین مُطابق دِکھائی دے رہے ہیں کہ یُوشِکُ الاُمَمُ اَن تَدَاعَی عَلَیکُم کما تَدَاعَی الاَکَلَۃُ اِلی قَصعَتِہَا بہت قریب ہے کہ(کافر)قومیں تُم لوگوں کے خِلاف (ہر قِسم کی کاروائیاں کرنے کے لیے )اِس طرح ایک دوسرے کو دعوت دیں گی جیسے کھانا کھانے والوں کو اُس کے حلقے (دستر خوان ) کی طرف دعوت دی جاتی ہے۔ کِسی(صحابی رضی اللہ عنہ ُ) نے عرض کیا "کیا ہم لوگ اُس دِن(یعنی اُس وقت تعداد میں)کم ہوں گے ؟"، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نےاِرشادفرمایا بَل اَنتُم یَومَئِذٍ کَثِیرٌ وَلَکِنَّکُم غُثَاء ٌ کَغُثَاء ِ السَّیلِ وَلَیَنزَعَنَّ اللَّہ من صُدُورِ عَدُوِّکُم المَہَابَۃَ مِنکُم وَلَیَقذِفَنَّ اللَّہ فی قُلُوبِکُم الوَھنَ (نہیں )بلکہ تُم لوگ تو اُس وقت دِن (یعنی اُس وقت )بہت زیادہ ہوگے، لیکن تُم لوگ سیلاب کی (یعنی سیلاب کے پانی میں بہنے والی ) بُھس (خشک گھاس پھونس )کی طرح ہو گے، اور ضرور اللہ تعالیٰ تُمہارے دُشمنوں کے دِلوں میں سے تُمہارا خوف اُتار دے گا اورضرور اللہ تُم لوگوں کے دِلوں میں وھن ڈال دے گا ، تو کِسی (صحابی رضی اللہ عنہ ُ)نے عرض کِیا "اے اللہ کے رسول اوریہ وھن کیا ہے؟" تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم اِرشاد فرمایا حُبُّ الدُّنیَا وَکَرَاھِیَۃُ المَوتِ دُنیا کی محبت اور موت سے کراہت (یعنی ناپسندیدگی)(سُنن ابن ماجہ /حدیث 4297/کتاب الملاحم /باب5، السلسلۃ الصحیحۃ / حدیث 958)

جی ہاں، یہ حقیقت آج واقعاتی طور پر ثابت ہو رہی ہے، کہ، مُسلمانوں کی بہت ہی بڑی اکثریت اِس بیماری کا شِکار نظر آ رہی ہے، ہر طرف سے کافر اور اُن کے حلیف نام نہاد مُسلمان ایک دُوسرے کو دعوت دے دے کر مُسلمانوں کے خِلاف کارروائیاں کر رہی ہیں، کہیں مُسلمان کی قدامت پسندی کے خِلاف، کہیں مُسلمان کی بُنیاد پرستی کے خِلاف، کہیں مُسلمان عورت کے پردے کو اُس کے لیے قید کہہ کہہ کر اور کہیں مُسلمان عورت کی پردہ داری کی وجہ سے اُس مُسلمان عورت کو بے وقعتی کہہ کہہ کر، کہیں مُسلمانوں کی غیر سُودی معیشت کے خِلاف، کہیں قُران کریم کے خِلاف کہ وہ دہشت گردی کی تعلیم دیتا ہے، کہیں مُسلمانوں کے دِینی مدراس کے خِلاف کہ وہاں دہشت گرد بنائے جاتے ہیں، اور کہیں مُسلمانوں کے رسول صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم کے خِلاف کہ اُن کی رسالت و نبوت میں حصہ دار اور اُن کے بعد بھی کِسی اور کو نبی یا رسول ماننے والوں کو اپنے بھائی کہہ کر، ایسے لوگوں کو اپنے راہبر بنا نے کے راستے کھو ل کر، اور ہم مُسلمان محبتِ رسول صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کے دعوے کرتے ہوئے اِک دُوجے کا گریبان پھاڑنے میں مشغول ہیں۔ اللہ کے واسطے اپنے لا یعنی اختلافات کو ایک طرف رکھ دیجیے، اپنی اپنی جماعتوں اور لیڈرز کے چنگل سے نکل آئیے،

اللہ سُبحانہ ُ و تعالیٰ اور اُس کے رسول کریم محمد صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی فتح و نصرت والا راستہ اپنائیے کہ در حقیقت یہی راستہ آپ کی دُنیا اور آخرت میں آپ کے لیے فلاح و کامیابی والا راستہ ہے۔

Comments

عادل سہیل ظفر

عادل سہیل ظفر

عادِل سُہیل ظفر جیاد ، معاشی ذمہ داریاں نبھانے کے لیے ملٹی فنگشن پراڈکٹس ٹیکنیشن کے طور پر ملازمت کرتے ہیں۔ اللہ عزّ و جلّ کا دِین ، اللہ ہی کے مُقرر کردہ منہج کے مُطابق سیکھنے اور جو کچھ سیکھا اُسے نشر کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

  • جناب عادل صاحب ایک بار عربی لفظ " خاتم النبییین " کا ترجمہ اردو اور انگریزی کی کسی مستند لغت میں ضرور دیکھ لیں