عورت، مرد، گھر اور انٹرنیٹ - نورین تبسم

کہا جاتا ہے کہ عورت کی سوچ بہت محدود ہوتی ہیں۔ اُسے سب سے پہلے تو اپنی ذات سے ہٹ کر کچھ دکھائی نہیں دیتا۔ اُس کی خواہشات اُس کے وجود سے شروع ہو کر اُسی پرختم ہو جاتی ہیں۔ دُنیا میں کیا ہو رہا ہے؟ کیوں ہو رہا ہے؟ اُسے کوئی غرض نہیں۔ بس اُس کی سنی جائے، اُس کی مانی جائے۔ یہ نہیں سوچتی کہ غور تو کرے کہ اُس نے ہمیشہ دوسرے نمبر پر ہی رہنا ہے۔ ازل سے لکھ دیا گیا ہے ذرا سی ترمیم کی گنجائش نہیں۔ تو پھر برابری کے دعوے کیا معنی رکھتے ہیں۔ کیا کیا جائے کہ جو اُس نے اپنی ذات کے حوالے سےسوچ لیا وہی حرفِ آخر ہے۔

محترم اشفاق احمد اپنی کتاب "سفر در سفر" میں لکھتے ہیں:
"مرد کا کام عورت کو سمجھنا نہیں، اس کو محسوس کرنا، اس کی حفاظت کرنا، اس سے محبّت کرنا ہے۔ عورت کو اگر اس بات کا علم ہو جائے کہ مرد اس کو سمجھنے لگا ہے، یا اس کے جذبات کو جانچنے کا راز پا گیا ہے تو وہ فوراً تڑپ کر جان دے دی گی۔ آپ عورت کے ساتھ کتنی بھی عقل ودانش کی بات کریں، کیسے بھی دلائل کیوں نہ دیں، اگر اس کی مرضی نہیں ہے تو وہ اس منطق کو کبھی نہیں سمجھے گی۔ اس کے ذہن کے اندر اپنی منطق کا ایک ڈرائنگ روم ہوتا ہے، جسے اس نے اپنی مرضی سے سجایا ہوتا ہے، اور وہ اسے روشن کرنے کے لیے باہر کی روشنی کی محتاج نہیں ہوتی۔ اس لیے وہ کسی عقل ودانش اور دلائل کے معاملے میں مانگے کی روشنی پر ایمان نہیں رکھتی۔ اس نے جو فیصلہ کر لیا ہوتا ہے وہی اس مسئلے کا واحد اور آخری حل ہوتا ہے"۔ (صفحہ145 تا 149)

اسی لیے تخلیق اوّل بُرد بار انداز اختیار کرتے ہوئے اُس کی ہاں میں ہاں ملاتا ہے، اُس کا دل رکھتا ہے، اُس پر ترس کھاتا ہے اور سب سے بڑھ کر اپنی ہمدردی کے نرم گوشے کی پناہ میں رکھتا ہے۔ اس کو چاہنا، اُس سے محبت کرنا تو فطرت میں لکھ دیا گیا ہے، یہ جبلتِ آدم ہے جس سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔ ورنہ محبت تو اُس سے کی جاتی ہے جو ہر لحاظ سے مکمل ہو، جس میں ڈھونڈے سے بھی کوئی خامی نہ ملے، سب سے بڑھ کر جو ہماری زبان سمجھ سکے، ہمارے ساتھ قدم سے قدم ملا کر ہمارے وجود کا حصہ دکھائی دے۔ سو مرد کی سب سے بڑی مجبوری عورت کو برداشت کرنا اور سب سے بڑی کمزوری اُس سے محبت کرنا ہے۔ اس مجبوری اور کمزوری سے فرار کی قطعاٍ گنجائش نہیں۔ یہ دُنیا کا سب سے بڑا امتحان بھی ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ بڑے سے بڑا ولی اللہ بھی اس امتحان سے نہیں بچ سکا اور اس میں کامیاب ہونا راہِ سلوک کا پہلا قدم ہے۔ اس راہ میں مرد وعورت کی تخصیص نہیں کی جاسکتی کہ کس کا حوالہ معتبر ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   کیا عورت مرد کی ٹیڑھی پسلی سے پیدا ہوئی- راجہ احسان

صوفی کون ہوتا ہے؟ وہ جسے ہر چہرے میں ایک کا عکس نظر آتا ہے، اور ایک کے سوا کچھ نظر نہیں آتا۔ عورت وہ صوفی ہے جس کی سوچ گھر سے شروع ہو کر گھر پر ہی ختم ہوتی ہے. عورت دُنیا فتح کر لے، پھر بھی اپنی ذات اپنے گھر سے دور نہیں جا سکتی۔

گھر عورت کے لیے دُنیا کی سب سے بڑی لذت سب سے بڑا تحفہ ہے۔ قوتِ تسخیر سے چاند پر جا پہنچے تو وہاں بھی پہلی خواہش گھر کی ہی کرے گی۔ دُنیا کے بتی والے چوک میں لفظوں کا بیوپار کرتے کرتے قوتِ تخیل سے ان راستوں پر بھی اپنے پرایوں کی خوشبو گھروں کے دائرے میں گردش کرتی محسوس ہوتی ہے۔ اس چوک کے وہ چار راستے جو "فیس بک،گوگل پلس، ٹوئٹر اور لنکڈ ان" کی جانب کھلتے ہیں۔

سب سے پہلے ٹوئٹر کی دُنیا کسی فائیو سٹار ہوٹل کی طرح دکھائی دی، جہاں ہر ایک اپنی مستی میں مست ہے۔ ذرا دیر کو کسی کی خوشبو یا رنگ اپنی طرف مائل کرتے ہیں، پھر اپنوں کے ساتھ خوش گپیاں شروع ہو جاتی ہیں۔ لیکن دیکھنے والی آنکھ انفرادیت پر متوجہ ضرور ہوتی ہے۔

لنکڈ اِن کا دیسی کلچر وہ بدیسی کلب دکھائی دیا جہاں بغیر سوٹ اور نکٹائی کے داخلہ ممنوع ہوتا ہے۔ پر ہم بدیسی کسی طرح راہ نکال ہی لیتے ہیں اور وہاں جا کر خود ہی راستے تلاش کرتے ہیں، اور کبھی کبھی ہماری سادگی کے اُجلے رنگ کسی کو اپنی طرف مائل بھی کر لیتے ہیں۔

گوگل پلس دارالحکومت کے پوش سکیٹرز میں بنے گھروں کی طرح ہے، جہاں سب اپنی دنیا میں مست ہیں۔ ہرایک کی اپنی ذاتی اخلاقیات اور اپنے لیے خود ہی کی مقررکردہ حدود ہیں۔ جس طرح پانچوں انگلیاں برابر نہیں، اسی طرح یہاں بھی اچھائی اور برائی کی ہر دو انتہائیں دیکھی جا سکتی ہیں۔ دوسرے نیٹ ورکس پرگوگل پلس کو ترجیح دیتے ہوئے احساسِ تفاخر پھر بھی نمایاں دکھتا ہے۔ یہاں کے مکین اپنی تمام تر 'اعلٰی ظرفی' کے باوجود چھوٹے گھر والوں کے ساتھ بیٹھنے سے ذرا ہچکچاتے بھی ہیں۔ اس میں شک نہیں کہ گوگل پلس کی اہمیت بہت زیادہ ہے اور اس کے دائرۂ کار سے بھی اختلاف کی گنجائش نہیں، مگر اس کے مکینوں کا طرزِعمل اُن کی لاعلمی ظاہر کرتا ہے۔ مکان اور اس کے حدود اربعہ کی اہمیت سے انکار نہیں۔ یہ روز روشن کی طرح کا عیاں سچ ہے، لیکن بڑے مکانوں میں رہنے والے ضروری نہیں قد آور بھی ہوں۔ انسان کے اندر کی روشنی اہم ہے جو مٹی کے گھروندوں میں رہ کر بھی یوں سر ابھارتی ہےکہ محلوں کے مکین جھک کر دیکھنے پر مجبور ہو جاتے ہیں۔ بڑے گھر میں رہائش رکھنے سے انسان بڑا نہیں ہوجاتا۔ چھوٹے گھروں میں پیدا ہونے والے بھی بہت بڑے کام کر جاتے ہیں۔ بس ان کو مواقع ملنے میں تاخیر ہو جائے تو اور بات ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   کیا عورت مرد کی ٹیڑھی پسلی سے پیدا ہوئی- راجہ احسان

آخر میں آتے ہیں چھوٹی سی دُنیا فیس بک کی جانب، جو بنانے والے بدیسی چہروں سے زیادہ ہماری زبان کی چاشنی کی وجہ سے بالکل اپنی سی لگتی ہے۔ ہمارے معاشرے کے گلی کوچوں کےعام گھر جیسی، جہاں ایک دوسرے پر نظر بھی رکھی جاتی ہے اور آزادی بھی ملتی ہے۔ بڑا بن کر کسی غلطی کی نشاندہی کی جاتی ہے تو کبھی گرنے سے پہلے تھام لیا جاتا ہے۔ بےغرض مشورے دینے والے، خیال رکھنے والے اچھے پڑوسی ملتے ہیں تو آڑے وقت پر کام آنے والے مخلص دوست بھی۔ لیکن ہر جگہ 'سب اچھا ہے' نہیں ہوتا۔ چہروں پر پے در پے نقاب چڑھائے ایسے اجنبی بھی پڑوس میں آ جاتے ہیں جن کی اصلیت معلوم ہونے پر انسان کا انسانیت پرسےاعتبار اٹھنے لگتا ہے۔

آخری بات!
عورت کا اصل ٹھکانہ اس کا اپنا گھر، اپنا خاندان ہے، جس میں انسانوں کے بدن کی مہک ہو، جدید دور کی مشینوں کے لمس کی نہیں۔ اپنوں کے ساتھ کا غیرمرئی احساس ہو، اجنبی چہروں کے لمحاتی احترام کا نہیں۔ عورت کے لیے نام اور مقام سے بڑھ کر اس کا گھر اہم ہے، جہاں وہ گمنام، بےمقام رہتے ہوئے، اپنی ذات کی نفی کر کے، اپنی خواہشوں پر دوسروں کی ذات کو مقدم جان کر ہی معاشرے میں باعزت کہلائی جاسکتی ہے۔

عورت کا اصل امتحان، اصل ہنراور اصل حسن اپنی ذات کی بند گلی میں سے کوئی ایسی درز دریافت کرنا ہے جہاں سے آنے والی تازہ ہوا اُس کا اپنے اوپر یقین قائم رکھے، اور یہ کڑا امتحان ہی زندگی کہانی میں کامیابی یا ناکامی کا فیصلہ کرتا ہے۔

Comments

نورین تبسم

نورین تبسم

جائے پیدائش راولپنڈی کے بعد زندگی کے پانچ عشرے اسلام آبادکے نام رہے، فیڈرل کالج سے سائنس مضامین میں گریجویشن کی۔ اہلیت اہلیہ اور ماں کے سوا کچھ بھی نہیں۔ لکھنا خودکلامی کی کیفیت ہے جو بلاگ ڈائری، فیس بک صفحے کے بعد اب دلیل کے صفحات کی جانب محوِسفر ہے۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.