آپ فون غلط چارج کرتے ہیں

جی ہاں! ہم جانتے ہیں کہ آپ کے فون کی بیٹری بھی کبھی آپ کی توقع پر پوری نہیں اتری کیونکہ ہم خود اس 'عذاب' کو روز جھیلتے تھے۔ زیادہ تر تو ایسا ہوتا ہے کہ یہ دن بھر بھی مشکل سے چلتی ہے۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ اس میں آپ کے فون کا قصور کم اور آپ کا زیادہ ہے کیونکہ آپ اسے ہمیشہ غلط انداز میں چارج کرتے ہیں۔ تو چارج کرنے کا صحیح طریقہ کیا ہے؟

ہم سمجھتے ہیں کہ فون کو بار بار اور تھوڑا تھوڑا چارج کرنا اس کی بیٹری کو نقصان پہنچا سکتا ہے، اس لیے اس وقت چارج کریں جب اس کی بیٹری ختم ہونے کے قریب ہو۔ لیکن یہ تاثر بالکل غلط ہے۔ ایک بیٹری کمپنی کیڈیکس کی ویب سائٹ 'بیٹری یونیورسٹی' بتاتی ہے کہ ہمارے اسمارٹ فونز کی لیتھیم آیون بیٹریاں کس طرح کام کرتی ہیں اور کتنی حساس ہوتی ہیں؟ انسانوں کی طرح اگر یہ بھی مسلسل تناؤ اور دباؤ کا شکار رہیں تو انہیں نقصان پہنچ سکتا ہے اور ان کی زندگی کم ہو سکتی ہے۔ اگر آپ اپنے اسمارٹ فون کی بیٹری کو بہترین حالت میں رکھنا چاہتے ہیں تو ان باتوں کا دھیان رکھیں:

بیٹری یونیورسٹی کے مطابق مکمل چارج ہو جانے کے بعد بھی چارجر نہ نکالنا بیٹری کی زندگی پر بُرے اثرات ڈالتا ہے۔ ہم میں سے بہت سے لوگوں کی یہ عادت ہوتی ہے کہ رات کو سونے سے پہلے موبائل کو چارج پر لگا دیتے ہیں اور صبح اُٹھ کر نکالتے ہیں۔ یوں بیٹری پوری رات استعمال ہوتی رہتی ہے کیونکہ 100 فیصد چارج ہونے کے بعد جیسے ہی 99 اعشاریہ کچھ پر آتی ہے، چارج پر لگے رہنے کی وجہ سے پھر بھرنے لگ جاتی ہے۔ یوں ہمہ وقت چارج ہونے کی وجہ سے سخت تناؤ کا شکار ہو جاتی ہے۔ اس لیے ایک مرتبہ مکمل چارج ہو جانے کے بعد بیٹری کو بجلی سے نکال لیں۔ یہ بالکل ایسا ہی ہوگا جیسا کہ سخت ورزش کے بعد پٹھوں کو آرام دینا۔ اگر آپ سخت ورزش کرنے کے بعد بھی پٹھوں کو گھنٹوں تک بغیر کسی وقفے کے سخت تناؤ میں رکھیں تو کیا ہوگا؟ بالکل وہی بیٹری کے ساتھ ہو سکتا ہے۔"

دوسرا خیال یہ رکھیں کہ اسے 100 فیصد تک چارج نہ کریں۔ بیٹری یونیورسٹی کا کہنا ہے کہ لیتھیم آیون بیٹریوں کو مکمل چارج ہونے کی ضرورت نہیں ہوتی۔ اوپر جس تناؤ کا ذکر کیا ہے اس سے بچانے کے لیے ضروری ہے کہ اسے کبھی 100 فیصد تک نہ پہنچنے دیں۔ اس کے علاوہ کہ ایک ہی سیشن میں پوری بیٹری چارج کی بجائے، بہتر یہی ہے کہ تھوڑی تھوڑی دیر کے لیے مختلف اوقات میں چارجنگ کی جائے۔ یہ بیٹریوں کو "خوش" رکھنے کا اہم نسخہ ہے۔

پاکستان جیسے ملک میں جہاں گرمی بہت پڑتی ہے، فون کو ٹھنڈا رکھنا بہت ضروری ہے۔ اس لیے پہلے تو یہ کام کریں کہ جب بھی فون کو چارج پر لگائیں اس کا کور اتار لیں خاص طور پر جب آپ دیکھیں کہ چارجنگ کے دوران آپ کا فون زیادہ گرم ہو جاتا ہے۔ پھر اسے دھوپ سے بھی بچائیں۔ یہ اقدامات آپ کے فون کی بیٹری کی لمبی صحت اور زندگی کے ضامن ہوں گے۔

یاد رکھیں، بالخصوص پاکستان میں فونز کے خراب ہونے کی سب سے بڑی وجہ ان کی بیٹریاں ہوتی ہیں اور پریشان کن بات یہ ہے کہ اوریجنل بیٹریاں ملنا بہت مشکل ہے یعنی اگر آپ کے فون کی بیٹری خراب ہوئی تو آپ کو ناقص معیار کی گھٹیا بیٹریاں استعمال کرنا پڑیں گی اور یوں آپ کا اچھا بھلا فون آپ کے لیے بڑی آزمائش بن جائے گا اس لیے اپنی "اکلوتی" بیٹری کا بہت خیال رکھیں۔