مِلاوٹ، خیانت، بد دیانتی، دھوکہ دہی کا انجام - عادل سہیل ظفر

ہمارے مسلم معاشرے میں عمومی طور پر اور پاکستانی معاشرے میں خصوصی طور پر کھانے پینے کی چیزوں میں مِلاوٹ اور خرید وفروخت میں خیانت اور بد دیانتی معمول سا بن گئی ہیں۔ یہ کام کرنے والے دُنیا میں کچھ مال تو کما لیتے ہیں لیکن اُنہیں اِس بات کا شاید احساس تک بھی نہیں ہوتا کہ اُس مال کے بدلے میں وہ اپنی آخرت میں سے کیا گنوا رہے ہیں ؟ اپنی اُس زندگی کو، جِس کی کوئی انتہا ء نہیں، کوئی خاتمہ نہیں، اُس زندگی کو گذارنے کے لیے کیا کما رہے ہیں ؟

الحمد للہ، کہنے کو تو ہم سب مُسلمان ہیں، اور تقریباً سب ہی کو قیامت، حساب، جنّت و جہنم، انعام و سزا، ثواب و عذاب کی خبر ہوتی ہے، لیکن بس خبر ہی ہوتی ہے، اُس پر اِیمان نام کی کوئی چیز عملی طور پر اب ہماری زندگیوں میں شاذ شاذ ہی دِکھائی دیتی ہے، ز ُبانی اقرار بہت کرتے ہیں، لیکن عمل کرتے ہوئے گویا سب کچھ بھول جاتے ہیں، ولا حول ولا قوۃَ اِلا باللَّہِ۔

اللہ تعالیٰ کے فرمان فَذَكِّرْ إِن نَّفَعَتِ الذِّكْرَىٰ O سَيَذَّكَّرُ مَنْ يَخْشَى پس آپ نصیحت کیجیے کہ( شاید) نصیحت کرنا فائدہ مند ہو O تو جو (اللہ سے) ڈرتا ہے وہ نصیحت پا لے گا (سُورت الاعلیٰ (87)/آیات 9،10) کے مُطابق اپنے مُسلمان بھائی بہنوں کی خدمت میں کچھ نصیحت پیش کر رہا ہوں، اور اپنی کِسی سوچ و فِکر کی بنیاد پر نہیں، بلکہ اللہ عزّ و جلّ کے رسول کریم محمد صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کے فرامین کے ساتھ اور اُن کی بنیاد پر پیش کر رہا ہوں۔

توجہ فرمائیے کہ مِلاوٹ، خیانت اور بددیانتی کرنے کا کیا انجام ہے ؟

أبو ھریرہ رضی اللہ عنہ ُ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے اِرشاد فرمایا مَن حَمَلَ عَلِینَا السِّلَاحَ فَلیسَ مِنَّا،و مَن غَشّنَا فَلیسَ مِنَّا جِس نے ہم پر ہتھیار اُٹھایا وہ ہم میں سے نہیں،اور جِس نے ہمارے ساتھ دھوکہ بازی کی وہ ہم میں سے نہیں۔* (1)

ایک دفعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم ایک کھانا بیچنے والے کے پاس سے گذرے تو اُنہوں نے کھانے کے برتن میں ہاتھ داخل فرمایا تو اُن کے ہاتھ مُبارک کو کھانے کا نیچے والا حصہ نرم محسوس ہوا، تو اُنہوں نے دریافت فرمایا مَا هَذَا يَا صَاحِبَ الطَّعَامِ اے کھانے(کا سامان بیچنے)والے یہ کیا ہے ؟

اُس نے کہا "اے اللہ کے رسول، بارش کا پانی اِس میں پڑ گیا ہے، "

تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے اِرشادفرمایا أَفَلاَ جَعَلْتَهُ فَوْقَ الطَّعَامِ كَىْ يَرَاهُ النَّاسُ تم نے اِسے کھانےکے اُوپر کیوں نہیں رکھا تاکہ لوگ اِسے دیکھ سکیں، مَن غَشَّ فَلیسَ مِنیِّ، جِس نے دھوکہ بازی کی وہ مجھ میں سے نہیں۔* (2)

عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ عنہ ُ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے اِرشادفرمایا مَن غَشّنَا فَلیسَ مِنَّا و المَکرُ و الخِدَاعُ فی النَّارِ جِس نے ہمارے ساتھ بد دیانتی کی وہ ہم میں سے نہیں اور دھوکہ اور فریب جہنم میں ہیں۔ یعنی یہ کام کرنے والے کا ٹھکانہ جہنم ہے۔* (3)

"غِشٌ" یعنی خیانت، بد دیانتی اور "خَدعٌ"یعنی دھوکہ، دِل کی سیاہی، اور مکر۔ یہ صِفات قول اور فعل دونوں میں پائی جاتی ہیں، لہذا اِس سے مُراد یہ نہیں، کہ چونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم نے یہ بات سودا بیچنے والے کو کہی تھی لہذا یہ ممانعت صرف خرید و فروخت کے معاملات میں ہے، بلکہ زندگی کے ہر معاملہ میں، خیانت و بد دیانتی، دھوکہ دہی، مکر و فریب، سب حرام کام ہیں، اور کسی بھی قِسم کی دھوکہ دہی، خیانت اور فریب وغیرہ کرنے والا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کے اِن مذکورہ بالا فرامین شریفہ کے مُطابق، قیامت والے دِن اُن میں شمار نہیں ہو گا جن کا حشر اُن کے اُمتی کی حیثیت سے ہونا ہے۔

ذرا سوچیے کہ یہ کِس قدر خوفناک انجام ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کا اُمتی ہونے کی حیثیت میں، آخرت کی جو کوئی بھی رعایت یا خیر ملنے کی اُمید ہے وہ اُمید تک نہ رہے گی، اور فقط تباہی اور عذاب ہی نصیب ہو گا۔

اللہ عزّ و جلّ ہم سب کو واقعتا ً یہ مان لینے، اور اِس پر اِیمان لانے کی ہمت دے، اور اِسی کے مُطابق عمل کرنے کی توفیق دے کہ دُنیا کی زندگی چند روزہ ہے، اور اِس میں کیے گئے ہر عمل اور کہے لکھے گئے ہر قول کے مُطابق ہی ہماری ہمیشہ والی ابدی زندگی بننی ہے


* ( 1 ) * ( 2 ) صحیح مُسلم/حدیث101،102/کتاب الاِیمان/باب43،کی پہلی اور دوسری حدیث ( 2 ) صحیح ابن حبان/حدیث 4885/کتاب البیوع کی تیسری حدیث،

* ( 2 ) المُستدرک الحاکم/حدیث2154،سُنن الدارمی/حدیث2541/کتاب البیوع باب10، صحیح ابن حبان،المُستدرک الحاکم اور سُنن الدارمی کی روایات میں﴿جِس نے دھوکہ بازی کی وہ مجھ میں سے نہیں﴾کی بجائے﴿جِس نے ہمارے ساتھ دھوکہ بازی کی وہ ہم میں سے نہیں﴾کے اِلفاظ ہیں،

* (3) تعلیقات الحسان علیٰ صحیح ابن حِبان/حدیث5533، کتاب الحضروالإِباحۃ کی پانچویں حدیث إِمام الالبانی رحمہُ اللہ نے حسن قرار دِیا۔

Comments

عادل سہیل ظفر

عادل سہیل ظفر

عادِل سُہیل ظفر جیاد ، معاشی ذمہ داریاں نبھانے کے لیے ملٹی فنگشن پراڈکٹس ٹیکنیشن کے طور پر ملازمت کرتے ہیں۔ اللہ عزّ و جلّ کا دِین ، اللہ ہی کے مُقرر کردہ منہج کے مُطابق سیکھنے اور جو کچھ سیکھا اُسے نشر کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com