ستّر سال کا سفر - مفتی منیب الرحمٰن

13اگست کو قیامِ پاکستان کو ستّر سال پورے ہوجائیں گے اور 14اگست کو ہم پاکستان کا اکہترواں یومِ آزادی اور ستّرویں سالگرہ منائیں گے۔ قیامِ پاکستان کے وقت دونوں حصوں مغربی پاکستان (اب پاکستان) اور مشرقی پاکستان (اب بنگلہ دیش) کی آبادی تین، تین کروڑ(مجموعی چھ کروڑ) تھی۔ اب پاکستان کی آبادی تقریباًبیس کروڑ اور بنگلہ دیش کی ساڑھے سولہ کروڑ ہے۔ ستّر سال میں کم وبیش نصف مدت فوجی اور نصف مدت سول حکمرانی رہی۔مغربی پاکستان کے ون یونٹ ہونے کی بنیاد پر پہلا دستور 1956ء میں بنا اور 1958ء میں اُسے منسوخ کردیا گیا۔ دوسرا دستور 1962میں بنا۔ یہ بالواسطہ انتخاب پر مبنی تھا اور1969میں اُسے بھی منسوخ کردیا گیا۔ 7دسمبر کو متحدہ پاکستان میں 'ون مین ون ووٹ' کے اصول پر پہلے قومی انتخابات ہوئے اور 16دسمبر 1971ء کو ہندوستان کی فوجی مداخلت کے نتیجے میں مشرقی پاکستان الگ ہوکر بنگلہ دیش بن گیا۔ 10 اپریل 1973ء کو اسلامی جمہوریہ پاکستان کا پہلا متفقہ دستور پاس ہوا اور 14 اگست 1973ء کو نافذ ہوا۔آج تک پاکستان کے چاروں صوبوں، قبائلی علاقہ جات، شمالی علاقہ جات اور آزاد کشمیر کے جڑے رہنے کی اساس یہی دستور ہے۔ اس دستورمیں اب تک بائیس ترامیم ہوچکی ہیں۔

الغرض ہندوستان کے برعکس پاکستان میں جمہوریت کا تسلسل جاری نہ رہ سکا، نہ سیاسی جماعتیں مضبوط ہوئیں اور نہ دستوری حدود کے اندر رہتے ہوئے ادارے مضبوط ہوسکے۔اس لیے ہمارے ہاں مقتدرہ پوری قوت کے ساتھ جلوہ گر رہی۔ اب، درست یا غلط، یہ تاثر دیاجارہا ہے کہ آزاد عدلیہ کا مقتدرہ کے ساتھ ایک غیر مَرئی تعلق قائم ہوگیا ہے، واللہ اعلم بالصواب۔ہمارے ہاں پارلیمنٹ، جمہوری اداروں اور سیاسی جماعتوں کے مستحکم نہ ہونے کی ذمے داری خود سیاست دانوں پر بھی عائد ہوتی ہے۔1985ء میں غیر جماعتی بنیاد پرقومی انتخابات ہوئے، اس کا مقصد بھی سیاسی جماعتوں کو کمزوراور منقسم کرنا تھااور ایسا ہی ہوا۔ لسانی بنیادوں پر سیاسی جماعتوں کی تشکیل اور مذہبی گروہوں کے مسلح جتھے اور ان کی باہم آویزش کا آغاز بھی فوجی حکمرانی کے دور میں شروع ہوا۔ جنرل ضیاء الحق مرحوم اور جنرل پرویز مشرف کے ادوار کے نتائج پاکستان اب تک بھگت رہا ہے اور بظاہر ان سے ملک وقوم کے مکمل نجات پانے کے آثار ناپید ہیں۔

پس ہمارے سیاستدانوں کو اپنی ناکامیوں، نادانیوں اور عاقبت نااندیشی کا بھی اعتراف کرنا چاہیے۔ اسی لیے ہم وقتاً فوقتاً لکھتے رہتے ہیں کہ ملک کو سیاست دان کی نہیں، قائد اور مُدَبِّر کی ضرورت ہے، جو لمحۂ موجود کا اسیر بن کرنہ رہے، اسے دور اندیش اور وژنری ہونا چاہیے، کوتاہ بینی کا انجام تو سامنے ہے۔ میں کہا کرتا ہوں: اولاد ماں باپ کے تجربے سے اور شاگرد استاد کے تجربے سے سبق حاصل نہیں کرتا، تاوقتیکہ اسے خود ٹھوکر نہ لگے۔ لیکن بدقسمتی سے ہمارے سیاست دان اور حکمران تاریخ یا دوسروں کے تجربات سے سبق حاصل کرنا تو درکنار، خود ٹھوکر کھاکر بھی سبق حاصل نہیں کرتے، ان کا شعار اپنی غلطیوں کو بار بار دہرانا اور ہربار ایک ہی انجام سے دوچار ہونا ہے، رسول اللہ ﷺکا ارشاد ہے :’’تم ضرور ہو بہوپچھلی امتوں کے طریقوں کی پیروی کروگے، یہاں تک کہ اگر وہ کسی گوہ کے سوراخ میں داخل ہوئے ہوں گے، تو تُم بھی ان کی پیروی کروگے، ہم نے عرض کی : یا رسول اللہ ﷺ! آپ کی مراد یہود و نصاریٰ ہیں، آپ ﷺنے فرمایا : اور کون ؟، (صحیح بخاری : 7320) ‘‘۔ سو ہمارے سیاستدانوں کی کمزوریاں اُن کی فطرتِ ثانیہ بن چکی ہیں، جیسے آج جنابِ نواز شریف کوعوام کا مینڈیٹ اورپارلیمنٹ کی بالادستی سب کچھ یاد آرہا ہے، لیکن کیا انہوں نے چار سال تک پارلیمنٹ، کابینہ اور خود اپنی سیاسی جماعت کو وہ وُقعت دی، جو ان کا استحقاق تھا۔

یہ بھی پڑھیں:   بادشاہ گر بننے کا خواب - اختر عباس

1988ء سے 1999ء تک کے جمہوری ادوار میں سیاسی قائدین ایک دوسرے کے خلاف استعمال ہوتے رہے۔ 2002ء کے انتخابات میں مصنوعی سیاسی جماعت تشکیل دینے کے لیے اداروں کو استعمال کیا گیا، اس کے باوجود تعداد پوری ہوتی ہوئی نظر نہ آئی تو پیپلز پارٹی میں سے کچھ منتخب لوگوں کو توڑ کر 'پیٹریاٹ' کے نام سے ایک گروپ بنایا گیا۔ 2008ء کے انتخابات کے بعد پیپلز پارٹی اپنے اتحادیوں سمیت اقتدار میں آئی اورجنابِ آصف علی زرداری صدر منتخب ہوئے۔ لیکن آزاد عدلیہ نے انہیں دباؤ میں رکھا، اس حکومت پر کرپشن اور نا اہلی کی چھاپ لگی، یہ عوام کے لیے کوئی فیض رسانی نہ کرسکی۔ واحد اعزاز جو اس کے حصے میں آیا، وہ نحیف ونزار جمہوری نظام کا تسلسل تھا۔ 2013ء کے انتخابات کے بعد مسلم لیگ ن کی حکومت آئی، لیکن سیاسی جماعتوں کی محاذ آرائی جاری رہی۔ 2014ء کے دھرنے کے دوران جنابِ عمران خان کے منہ سے ’’امپائر کی انگلی اٹھنے ‘‘کے الفاظ نے یہ تاثر دیا کہ اس احتجاج کو کسی غیبی قوت کی پشت پناہی حاصل ہے اور پھر جنابِ جاوید ہاشمی کے بیانات نے اس تاثر کو تقویت دی، یہ ایسی باتیں ہیں جن کا مدار قرائن پر ہوتا ہے، کسی تحریری وثیقے کی صورت میں ان کا ثبوت کسی کے پاس نہیں ہوتا۔

سپریم کورٹ نے جس آئینی وقانونی سبب کی بنیاد پر جنابِ نواز شریف کو نا اہل قرار دیا ہے،اس کی معقولیت کے بارے میں آئینی وقانونی ماہرین کی آراء منقسم ہیں، یہ بات مسلّم ہے کہ کئی لوگوں کے لیے یہ فیصلہ نعمتِ غیر مترقبہ ثابت ہواہے، لیکن اس سے ملک کے آئینی وقانونی، عدالتی اور جمہوری نظام کے استحکام اور ساکھ کے بارے میں سوالات اٹھ رہے ہیں اور عالمی میڈیا بھی اسے موضوعِ بحث بنا رہا ہے۔ ہمیں اپنی محدود عصبیتوں سے نکل کر بحیثیت مجموعی ملکی اور قومی وقار کو بھی دیکھنا چاہیے۔ ہمیں اس سے غرض نہیں ہے کہ کون چلا گیا اور اس کی جگہ کون لے گا، شخصیات ہماری دلچسپی کا موضوع نہیں ہیں،یہ اُن کا مسئلہ ہے جو ان سے وابستہ ہیں یا جن کا کوئی مفاد اُن سے وابستہ ہے،اسی طرح ایوانِ اقتدار میں پیدا ہونے والے خلا کو پر کرنا بھی اُن کی دلچسپی کا موضوع ہے، جو بزعم خویش اس کے امیدوار اور حق دار ہیں،ہمارا ان امور سے کوئی تعلق نہیں ہے۔1993ء میں پہلی معزولی کے بعد ہماری جناب نواز شریف سے ایک ملاقات ہوئی تھی،اس کے بعد اس پوری مدت میں ستمبر 2015ء کو وزیرِ اعظم ہاؤس میں’’اتحادِ تنظیماتِ مدارس پاکستان ‘‘کے قائدین کے ہمراہ اُن سے ہماری صرف ایک عمومی ملاقات ہوئی، جس میں اُس وقت کے چیف آف آرمی اسٹاف، ڈی جی آئی ایس آئی، وزیرِ داخلہ، وزیرِ مذہبی اموراورمقتدرہ کے دیگر ذمے داران موجود تھے۔

ان ستر سالوں میں پاکستان نے جو غیر معمولی کارنامہ انجام دیا، وہ ایٹم بم بنانا اور ایٹمی دھماکا کرنا ہے، اس کے نتیجے میں پاکستان کو ایک طرح کا تحفظ مل گیا ہے۔ اگر خدانخواستہ پاکستان پر دشمن نے روایتی جنگ مسلط کی، توسب کو معلوم ہے کہ اس کا روایتی حربی اسلحہ، مادّی ومالی وسائل اور عددی قوت پاکستان سے کئی گنا زائد ہے، لہٰذا اپنے دفاع اور بقا کے لیے آخری چارۂ کار کے طور پرپاکستان ایٹم بم کو استعمال کرسکتا ہے، اسی لیے ایٹم بم کو سدِّ جارحیت کا ذریعہ قرار دیا جاتا ہے،پس یقین ہے کہ پاکستان کو 1971ء کے المیے ایسے حالات کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔سابق صدر ایوب خاں کے دور میں تربیلہ ڈیم اور منگلا ڈیم بنے، مگر اس کے بعد آبی ذخائر کے حوالے سے اس شعبے میں ہم بحیثیت قوم کوئی اضافہ نہ کرسکے۔

یہ بھی پڑھیں:   لبرل جمہوریت اور اسلامی حکمرانی کا مستقبل؟ - عمر ابراہیم

لیکن یہ بات پوری قوم کے ذہن میں رہنی چاہیے کہ ایٹم بم آج تک صرف امریکہ استعمال کرسکا ہے، مسلم ممالک پر تو چڑھائی کرنے میں امریکہ ایک لمحے کی تاخیر بھی نہیں کرتا اور 'مدر آف آل بمز' بھی گرادیتاہے، لیکن شمالی کوریا کے خلاف اقتصادی پابندیوں، Fire & Fury(آگ اور غیظ وغضب) اور طاقت کے استعمال کی دھمکیوں کے باوجودتاحال کوئی عملی اقدام نہیں کرسکا۔ سوویت یونین افغانستان میں اپنی ہزیمت و پسپائی اور تحلیل برداشت کرگیا، لیکن ایٹم بم چلانے کی ہمت نہیں کرسکا، اس کے لیے اور بہت سے عوامل درکار ہوتے ہیں۔ان میں ملک وقوم کا سیاسی ومعاشی استحکام، قومی اتفاقِ رائے اور ملی اتحاد بھی شامل ہیں۔1965ء کی پاک بھارت جنگ میں جو قومی وملی جذبہ ہر فرد اور ہر طبقے میں نظر آتا تھا، وہ 1971ء میں ناپید تھا۔ ہمارا المیہ یہ ہے کہ ہماری نئی نسل پاکستان کی تاریخ سے بالکل بے بہرہ ہے اور تاریخ پڑھائی بھی نہیں جاتی۔ میڈیا جو تاریخ بتاتا ہے، وہ متنازع ہے۔ تاریخ کے حوالے سے ہر ایک کی تعبیر اپنی اپنی عصبیتوں کے تابع ہے، ایک کے نزدیک کوئی ابلیس ہے تو دوسرے کے نزدیک فرشتہ، ایک کے نزدیک کوئی شہید ہے، تو دوسرے کے نزدیک قاتل۔ پاکستان میں کرپشن کی ابتدا جعلی کلَیموں سے شروع ہوئی، لوگوں کے نسب بدل گئے، کئی نامی بے نام ہوگئے اور کئی بے نام نامور بن گئے،نذیر دہقانی نے کہا ہے:


کیسے کیسے ایسے ویسے ہوگئے
ایسے ویسے کیسے کیسے ہوگئے

پھر کرپشن ہمارے جسدِ ملّی کے رگ وپے میں سرایت کرتی چلی گئی، پہلے راشی اور مرتشی ہونا عیب تھا، پھر اعزاز بن گیا۔ علم اور کردار بے توقیر ہوگئے اور دولت ذریعۂ وقار وافتخار بن گئی۔یہ اخلاقی امراض وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ مرضِ مُزْمِن ( Chronic Disease) کی شکل اختیار کرگئے۔ آج پیچھے مڑ کر دیکھتے ہیں تو صدر ایوب خان اور جناب ذوالفقار علی بھٹو کے ادوار غنیمت نظر آتے ہیں، خصوصاً صدر ایوب خان کے دورمیں اعلیٰ بیوروکریسی کے انتخاب میں اقربا پروری نہیں تھی، ان کا علمی، فکری اور نظریاتی معیار کافی بلند تھا، اب ایسا نہیں ہے۔اسی طرح جن اکابرعلماء ومشائخِ اہلسنت نے تحریکِ پاکستان میںجاندار کردار ادا کیا تھا،آج ان کے اسمائے گرامی آپ کونصابی کتابوں اورقومی تاریخ میں نہیں ملیں گے،محسن بھوپالی نے کہا تھا:


نیرنگیِ سیاستِ دوراں تو دیکھیے
منزل انہیں ملی جو شریک سفر نہ تھے

Comments

مفتی منیب الرحمن

مفتی منیب الرحمن

مفتی منیب الرحمن، چیئرمین مرکزی رؤیت ہلال کمیٹی پاکستان، صدر تنظیم المدارس اہلسنت پاکستان، سیکرٹری جنرل اتحاد تنظیمات مدارس دینیہ پاکستان، مہتمم دارالعلوم نعیمیہ اہلسنت پاکستان

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

error: اس صفحے کو شیئر کیجیے!