نااہلی کے فیصلے پر اٹھنے والے دس سوالات - محمد زاہد صدیق مغل

تحریک انصاف کے ووٹرز کو تسلی دینے کے لیے ان کے ہمدرد احباب یا تو عامی سیاستدانوں کے سوالات کے جوابات دینے میں مصروف ہیں اور یا پھر ایسے فرضی تجزیے کر رہے ہیں جن کا اصل فیصلے سے کچھ لینا دینا نہیں، بلکہ خود اس فیصلے ہی کی رو سے گمراہ کن ہیں۔

ذیل میں ہم متعلقہ واصل سوالات کو متعین کرکے پیش کیے دیتے ہیں تاکہ فیصلے کے بارے میں اس قسم کے گمراہ کن پراپیگنڈے کی حقیقت واضح رہے۔ ان میں سے اکثر پر پہلے بھی اپنی تحریروں میں گفتگو کی جاچکی ہے۔

1) کیا پاکستان کے متعلقہ قوانین (روپا) میں اثاثوں کی ایسی تعریف متعین ہے جس کی رو سے مدعا علیہ پر اس آمدن کا ذکر کرنا لازم تھا؟

2) اگر یہ قانون اس بارے میں واضح نہیں تو اس کے بعد کیا الیکشن کمیشن کے متعلقہ قوانین کی طرف رجوع نہیں کیا جانا چاہیے تھا کہ وہ ان اثاثوں کی ڈیکلیریشن کے بارے میں کیا کہتے ہیں؟ ایسا کیوں نہیں کیا گیا؟

3) جس ڈکشنری کی تعریف کو معیار بنالیا گیا کیا متعلقہ ملکی قوانین یا الیکشن کمیشن کے قوانین کی رو سے وہ امیدواروں کے لیے بائنڈنگ تھی؟

4) کیا الیکشن کمیشن نے ماضی میں وہ تعریف تمام امیدواروں کے لیے دستیاب کر رکھی تھی؟

5) اس تعریف کو ماضی کی تاریخوں کے لیے کیسے مؤثر مان لیا گیا؟

6) اس ڈکشنری میں ریسیوایبل کی جو تعریف دی گئی ہے کیا اسے درست معنی میں استعمال کرکے لاگو کیا گیا؟ کیا یہ تعریف افراد کے لیے ہے یا فرمز کے لیے؟ یہی ڈکشنری "اجرت" کی جو تعریف متعین کرتی ہے کیا اس کی رو سے بغیر سروسز فراہم کیے ہوئے بھی کوئی آمدن ریسیوایبل کی اس تعریف میں شامل ہوتی ہے جو اس ڈکشنری میں درج ہے؟ کیا تمام اکاؤنٹنگ سسٹم کی رو سے ریسیوایبل اثاثہ ہوتا ہے؟ اگر نہیں تو کسی ایک سسٹم کو مفروضے کے طور پر فیصلے کی بنیاد ماننے کی وجہ ترجیح کیا ہے؟

یہ بھی پڑھیں:   بابری مسجد کا فیصلہ اور ہماری ذمہ داریاں - سید سعادت اللہ حسینی

7) کیا بزنس ورلڈ سے متعلق ایسے خالصتا ٹیکنیکل اشو پر متعلقہ علم کے ماہرین کی رائے لیے بغیر عدالت خود سے اس کی تعریف متعین کرسکتی تھی؟
8) اس قسم کے متنازعہ و مبہم معاملات میں قانون کی رو سے "بینفٹ آف ڈاؤٹ" ہمیشہ کسے ملتا ہے؟

9) اگر یہ نکتہ اتنا ہی اہم تر تھا کہ صرف اسی کی بنیاد پر فیصلہ دیا جانا تھا تو کیا عدالت نے فیصلہ دینے سے قبل اس مخصوص نکتے پر جرح کروائی؟ اس مخصوص نکتے پر مدعا علیہ کو اپنا موقف واضح کرنے کا موقع دیا؟ کیا عدالت روپا قانون کے تحت اپنی اوریجنل جورسڈیکشن میں بغیر evidentiary hearing کے disputed facts (متنازعہ امور) کا تعین کر سکتی ہے؟

10) باسٹھ تریسٹھ کے کسی امیدوار کو نااہل قرار دینے کا آئین میں درج طریق کار کیا ہے؟

Comments

محمد زاہد صدیق مغل

محمد زاہد صدیق مغل

محمد زاہد صدیق مغل نسٹ یونیورسٹی کے شعبہ اکنامکس میں تدریس کے فرائض سر انجام دیتے ہیں۔ قائد اعظم یونیورسٹی اسلام آباد سے معاشیات میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی۔ ملکی و غیر ملکی جرائد و رسائل میں تسلسل کے ساتھ تحقیقی آراء پیش کرتے رہتے ہیں۔ ان کی تحقیق کے خصوصی موضوعات میں معاشیات، اسلامی فنانس وبینکنگ اور جدیدیت سے برآمد ہونے والے فکری مباحث شامل ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.