مُنافق اور مُنافقت کی نشانیاں - عادِل سُہیل ظفر

مُنافقت کا معنی ٰ ہے اپنے قول او رعمل سے وہ کچھ ظاھر کرنا جو دِل میں موجود عقائد و عزائم کے خِلاف ہو اور اِسلام میں منافقت کا مفہوم، دِل میں کفر، شرک اور گناہوں کا اقرار اور عمل کے وجود کے ساتھ، اپنے آپ کو قولی اور عملی طور پر اِیمان والا، اللہ کی توحید کو ماننے والا، اور گناہوں سے دُور رہنے و الا ظاہر کرنا۔

اللہ تعالیٰ نے جہنم کا سب سے نچلا درجہ، منافقین، یعنی، منافقت کرنے والوں کا ٹھکانہ مقرر فرما رکھا ہے إِنَّ الْمُنَافِقِینَ فِی الدَّرْكِ الْأَسْفَلِ مِنَ النَّارِ یقیناً منافقین جہنم کے سب سے نچلے درجے میں ہوں گے (سُورت النِساء (4)/آیت145)

خواہ یہ مُنافق، نفاق اکبر (بڑی مُنافقت) پر عمل کرنے والے ہوں، یا نفاق اصغر (چھوٹی مُنافقت) پر، اعتقادی نفاق والے ہوں یا عملی مُنافقت والے، سب کا ٹھکانہ وہی ہے۔

مُنافقت کی کچھ خصوصیات ایسی بھی ہیں جنہیں اکثر لوگ محض نفسیاتی، یا شخصی عادات سمجھتے ہیں، جب کہ اللہ تعالیٰ کے ہاں وہ مُنافقت والے کام ہیں، اور اُن کاموں کو کرنے والے، اُن صِفات کے حامل لوگ مُنافق ہیں۔

اللہ تعالیٰ نے ہمارے لیے اُس کی شفقت و رحمت کے حصول کے اسباب میں سے ایک سبب یہ بھی عطاء فرمایا ہے کہ اپنے رسول کریم محمد صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کی ز ُبان مُبارک سے ہمیں اُس کے ہاں مُنافقت قرار پائے جانے والے کاموں کی خبر عطاء فرمادی، اُس کے ہاں مُنافق قرار پائے جانے والوں کی صِفات کی پہچان عطاء فرما دی۔

آئیے مُنافقت اور مُنافقت کی اُن نشانیوں کو جانتے ہیں:

رسول اللہ صلی اللہ علیہ و علی آلہ وسلم نے اِرشاد فرمایا أَرْبَعٌ مَنْ كُنَّ فِیهِ كَانَ مُنَافِقًا خَالِصًا، وَمَنْ كَانَتْ فِیهِ خَصْلَةٌ مِنْهُنَّ كَانَتْ فِیهِ خَصْلَةٌ مِنَ النِّفَاقِ حَتَّى یدَعَهَا: إِذَا اؤْتُمِنَ خَانَ، وَإِذَا حَدَّثَ كَذَبَ، وَإِذَا عَاهَدَ غَدَرَ، وَإِذَا خَاصَمَ فَجَرَ جِس میں (یہ) چار (خَصلتیں، صِفات، نشانیاں ) ہوں وہ خالص مُنافق ہے، اور جِس میں اِن میں سے کوئی ایک خصلت ہو تو اُس میں نِفاق کی خَصلت ہے یہاں تک کہ وہ اُسے چھوڑ دے، (1) جب اُس کے پاس اَمانت رکھوائی جائے تو وہ اُس میں خیانت کرے (2)جب بات کرے تو جھوٹ بولے (3)جب وعدہ کرے تو وعدہ خِلافی کرے (4)جب جھگڑا کرے تو پھٹ پڑے (یعنی بے حیائی پر اتر آئے ) (متفقٌ علیہ)

اور اِرشاد فرمایا ثَلَاثٌ مَنْ كُنَّ فِیهِ فَهُوَ مُنَافِقٌ، وَإِنْ صَامَ وَصَلَّى وَ حَجَ وَ أعتمَرَ وَقَالَ إنی مُسْلِمٌ: مَنْ إِذَا حَدَّثَ كَذَبَ، وَإِذَا وَعَدَ أَخْلَفَ، وَإِذَا اؤْتُمِنَ خَانَ جس میں تین (خَصلتیں، صِفات، نشانیاں )ہوں (تو)وہ مُنافق ہے خواہ وہ نماز (بھی)پڑھتا ہو، اور روزہ(بھی) رکھتا ہو، اورحج(بھی) کرتا ہو، اور عمرہ(بھی) کرتا ہواور، (یہ بھی ) کہتا ہو کہ میں مُسلمان ہوں، (یہ وہ شخص ہے ) جو (1)بات کرے تو جھوٹ بولے (2)وعدہ کرے تو وعدہ خِلافی کرے (3)جب اسے امانت داربنایا جائے تو خیانت کرے (صحیح الجامع الصغیر /حدیث 3043)

اور اِرشاد فرمایا إِنَّ الْحَیاءَ وَالْعَفَافَ وَالْعِی عن اللِّسَانِ لا عِی الْقَلْبِ، وَالْعَمَلَ مِنَ الإِیمَانِ، وَإِنَّهُنَّ یزِدْنَ فِی الآخِرَةِ، وَینْقِصْنَ مِنَ الدُّنْیا، وَمَا یزِدْنَ فِی الآخِرَةِ أَكْثَرُ مِمَّا ینْقِصْنَ فِی الدُّنْیا ؛ وَإِنَّ الشُّحَّ والفُحشَ وَالْبَذَاءَ مِنَ النِّفَاقِ، وَإِنَّهُنَّ یزِدْنَ فِی الدُّنْیا، وَینْقِصْنَ مِنَ الآخِرَةِ، وَمَا ینْقِصْنَ فِی الآخِرَةِ أَكْثَرُ مِمَّا یزِدْنَ فِی الدُّنْیا بے شک حیاء اورعِفت اور ز ُبان کی کم علمی نہ کہ دِل کی کم علمی، اور (اُس کے مُطابق)عمل اِیمان میں سے ہیں، اور بے شک یہ سب آخرت (کی خیر)میں اضافہ کرتے ہیں، اور دُنیا (کے شر)میں کمی کرتے ہیں، اور جو کچھ یہ آخرت میں اضافہ کرتے ہیں وہ دُنیا میں کمی سے زیادہ ہے، اور بے شک لالچ، اور بے حیائی، اور بے ہودہ گفتگو نِفاق میں سے ہیں اور یہ سب دُنیا (کے شر)میں اضافہ کرتے ہیں اور آخرت (کی خیر)میں کمی کرتے ہیں اور جو کچھ یہ آخرت (کی خیر)میں سے کم کرتے ہیں وہ اس سے زیادہ ہے جو یہ دُنیا میں سے بڑھاتے ہیں (سلسلہ الاحادیث الصحیحہ/حدیث3381)

صحابہ رضی اللہ عنہم وأرضاھُم أجمعین کے اقوال میں سے:

دوسرے بلا فصل خلیفہ أمیر المومنین عمرابن الخطاب رضی اللہ عنہما سے کا کہنا ہے کہ میں نے اپنی انگلیوں کی تعداد سے زیادہ دفعہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وعلی آلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا کہ إِنَّ أَخْوَفَ مَا أَخَافُ عَلَى هَذِهِ الْأُمَّةِ الْمُنَافِقَ الْعَلِیمَ میں اس اُمت پر صاحبء علم منافقوں کے بارے میں بہت ڈرتا ہوں

پوچھا گیا، منافق صاحبء علم کیسے ہو سکتا ہے؟

تو أمیر المومنین عمرابن الخطاب رضی اللہ عنہما نے اِرشاد فرمایا عَالِمُ اللِّسَانِ، جَاهِلُ الْقَلْبِ وَالْعَملِ زبان کا عِالم لیکن دِل اور عمل سے جاھل (الاحادیث المختارہ /حدیث 236/ روایۃ عمر ابن الخطاب رضی اللہ عنہ ُ /ابو عثمان عبدالرحمٰن بن مل النھدی عن عمر رضی اللہ عنہ ُ)

صاحبء کتاب امام محمد بن عبدالواحد المقدسی کا کہنا ہے کہ اسے مخلتف اسناد سے روایت کیا گیا ہے، جن میں مرفوع بھی ہیں اور موقوف بھی ہیں اور زیادہ درست یہ ہے کہ یہ موقوف ہے، یعنی عُمر رضی اللہ عنہ ُ کافرمان ہے،

حذیفہ ابن الیمان رضی اللہ عنہ ُ سے پوچھا گیا کہ "منافق کون ہے ؟"

فرمایا الَّذِی یصِفُ الْإِسْلَامَ وَلَا یعْمَلُ بِهِ یعنی وہ جو اِسلام کا دعویٰ دار ہو لیکن اُس پر عمل نہ کرتا ہو"

عبداللہ ابن عمر رضی اللہ عنہما سے کہا گیا کہ "ہم حکمرانوں اور سرداروں کے پاس جاتے ہیں تو کچھ اور بات (یعنی ان کی تعریف ہی)کرتے ہیں اور جب وہاں سے نکلتے ہیں تو اس بات کے خلاف بات کرتے ہیں " تو ابن عمر رضی اللہ عنہما نے فرمایا كُنَّا نَعُدُّهَا نِفَاقًا ہم اُسے مُنافقت میں گنا کرتے تھے (صحیح البخاری /کتاب الاحکام/باب 27)

مختلف الفاظ میں یہ اثر بہت سی کتابوں میں صحیح اسناد کے ساتھ مروی ہے، مثلاً سُنن ابن ماجہ/حدیث 3975 /کتاب الفتن /باب 12، مسند احمد /حدیث 5829، وغیرھا۔

مذکورہ بالا احادیث شریفہ، اور اقوال ء صحابہ رضی اللہ عنہم اجمعین میں مُنافق کی درج ذیل نشانیاں بتائی گئی ہیں

(1) خیانت

(2) جھوٹ

(3) عہد شکنی، وعدہ خِلافی

(4) غداری

(5) غصے کی حالت میں بے قابو ہو کر برائی اور بدکلامی پر اُ تر آنا

(6) لالچ

(7) بے حیائی

(8) بے ہودہ گفتگو، فحش کلامی

(9) بہت اچھی اور عالمانہ باتیں کرنا، لیکن اُن کی حقیقت نہ جاننا،

اِن مذکورہ بالا نشانیوں کی روشنی میں ہم سب ذرا اپنے بارے میں سوچیں تو کہ ہم کونسی سی نشانیاں پائی جاتی ہیں ؟ اور ہمارے اَرد گِرد کس کس میں کیا کیا نشانی پائی جاتی ہے ؟ اور اگر ہمارے اندر اِن میں سے کوئی نشانی ہے تو اُس سے نجات کی کوشش کریں، اور اپنے جِس مُسلمان بھائی بہن میں اِن میں سے کوئی نشانی پائیں اُسے بھی حِکمت اور نرمی کے ساتھ آگاہ کرتے ہوئے اصلاح کی رغبت دلائیں، اللہ تعالیٰ ہم سب کو مُنافقت اور مُنافقین سے محفوظ رکھے۔

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */