ترکی میں ناکام فوجی بغاوت کا ایک سال - ڈاکٹر عمیر محمود صدیقی

15 جولائی کو ترکی میں ناکام فوجی بغاوت کو ایک سال پورا ہوا۔ مشرق وسطیٰ اور پوری امت مسلمہ کے موجودہ حالات میں جبکہ 9/11 کے False flag Operation کے بعد 50 لاکھ مسلمان مار دیے گئے ہوں، ترکی ایک نئی اسلامی قوت کے طور پر ابھر کر سامنے آیا ہے جس میں یقینی طور پر رجب طیب اردگان کا بہت بڑا کردار ہے۔4GW کے اس دور میں جہاں Non State Actors کی غیر سرکاری تنظیموں اور اندرونی بغاوتوں کے ساتھ ملکوں کے حصے بخرے کیے جارہے ہیں، نقشہ جات کو تبدیل کیا جا رہا ہے، ترکی میں فوجی بغاوت کا ناکام ہو جانا اللہ رب العزت کی نعمت عظمی سے کم نہیں۔ مستقبل میں اس جنگ کی آگ مدینہ طیبہ تک پہنچے گی اور اس وقت میں پاکستان اور ترکی کا کردار انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ ان دوممالک میں ایسے مسلمان بستے ہیں جو محمد رسول اللہ ﷺ سے دوسروں کی بنسبت زیادہ محبت کرتے ہیں اور اپنا سب کچھ حضور نبی کریم ﷺ کے نام پر قربان کرنے کے لیے ہمہ وقت تیار ہیں۔

پہلی جنگ عظیم کے بعد جب سلطنت عثمانیہ کے ٹکڑے کیے گئے، جنرل ایلن بی 1917ء میں بیت المقدس میں داخل ہوا تو مدینہ طیبہ کے دفاع میں فخری پاشا کے کردار کو نہیں بھلایا جا سکتا۔ 100 سال کی ذہنی تخریب کاری کے باوجود ترکوں کے دل سے حضور ﷺ کی محبت کو ختم نہ کیا جا سکا۔ مستقبل قریب میں عرب کے نقشے کو تبدیل کرنے کے لیے پاکستان اور ترکی میں ایسے افراد کا بر سر اقتدار نہ ہونا عالمی قوتوں کے مفاد میں ہے جو اسلام پسند ہوں اور عشق رسول ﷺ میں اپنا سب کچھ قربان کرنے کے لیے تیار ہوں۔

ناکام فوجی بغاوت کے ایک سال پورا ہونے پر طیب اردگان نے بارگاہ الٰہی میں شکرانے کے طور پر 15جولائی کو درود و سلام پڑھتے ہوئے گزارا ہے جو اس بات کی علامت ہے کہ ترک اپنا قائد اور ناجی محمد رسول اللہ ﷺ کو ہی سمجھتے ہیں۔ نبی کریم ﷺ پر درود و سلام پڑھنا جنت کے راستے کو آسان کرنا ہے۔ صلوٰۃ و سلام پڑھنے سے اللہ کی رضا حاصل ہوتی ہے۔ اللہ کی طرف سے ثواب اور نبی کریم ﷺ کی طرف سے جواب نصیب ہوتا ہے۔ پیارے نبی ﷺ سے تنہائی کا تعلق قائم ہوتا ہے۔ دل کا زنگ دور ہوتا ہے۔ باطن کے دروازے وا ہوتے ہیں۔ زبان پاک ہوتی ہے۔ ہر دعا مقبول ہوتی ہے۔ بھولی ہوئی چیزیں یاد آتی ہیں۔ چہرہ روشن ہوتا ہے۔ سنت پر عمل آسان ہوتا ہے۔ قبر کا اندھیرا دور ہوتا ہے۔ امتی کا ذکر سید العالمین کی مجلس خاص میں کیا جا تا ہے۔ درجات بلند ہوتے ہیں۔گناہ معاف ہوتے ہیں۔ لا متناہی فوائد کے علاوہ قیامت کے دن حضور نبی کریم ﷺ کی شفاعت نصیب ہو گی۔

یہ بھی پڑھیں:   اسلامی ریاست: امکانات، خدشات، اور ضرورت - عمر ابراہیم

مسلمانوں کو چاہیے کہ جب کبھی نبی کریم ﷺ کی شان اقدس میں کوئی ملعون توہین کی جسارت کرے تو ہم رد عمل میں نبی کریم ﷺ کی سنتوں کو زندہ کریں اور ہر امتی درود و سلام کا نذرانہ اپنے آقاﷺکی بارگاہ میں پیش کرے۔ نیز اس بات کا اظہار کریں کہ ہمیں غلامی رسول ﷺ میں زندگی بھی قبول ہے۔ اللہ تعالیٰ ترک مسلمانوں اور تمام عالم اسلام کی حفاظت فرمائے۔ صرف یہی کلمہ طیبہ شرق تا غرب شمال تا جنوب بلا تفریق رنگ و نسل تمام مسلمانوں کو ایک نظم میں جوڑ سکتا ہے۔ مسلمانوں کو تجدید ایمان کی ضرورت ہے۔

Comments

ڈاکٹر عمیر محمود صدیقی

ڈاکٹر عمیر محمود صدیقی

ڈاکٹر عمیر محمود صدیقی شعبہ علوم اسلامیہ، جامعہ کراچی میں اسسٹنٹ پروفیسر اور کئی کتابوں کے مصنف ہیں۔ مختلف ٹی وی چینلز پر اسلام کے مختلف موضوعات پر اظہار خیال کرتے ہیں۔ علوم دینیہ کے علاوہ تقابل ادیان، نظریہ پاکستان اور حالات حاضرہ دلچسپی کے موضوعات ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں