جیو دلیل جیو ٹیم دلیل - ریحان اصغر سید

عموما لوگ اس غلط فہمی میں مبتلا ہیں کہ ویب سائٹس بنانا اور انھیں چلانا بہت نفع بخش اور آسان کام ہے. ویب سائٹ بنواتے ہی آپ کو ہزاروں ڈالر کی آمدن شروع ہو جاتی ہے. جبکہ حقیقت اس کے بلکل برعکس ہے. پاکستان میں اردو بلاگنگ ویب سائٹ، خاص طور پر ایک نظریاتی ویب سائٹ کو چلانے کے لیے آپ کو پہاڑ جیسا حوصلہ، استقامت اور مستقل مزاجی چاہیے. یہ ایک باعزم ٹیم کا کل وقتی اور تھینک لیس کام ہے، جس کا نہ کوئی معاوضہ ملتا ہے نہ ذاتی تشہیر ہوتی ہے. ویب سائٹ پر ہونے والے سائبر حملے، تکنیکی خرابیاں، مصنفین کے ناز نخرے، معاصر ویب سائٹس سے مسابقت کا دباؤ، لکھاریوں اور انتظامی امور ٹیم کی ناراضگی اور علحیدگی سمیت درجنوں ایسے مسائل ہوتے ہیں، جس کا ایک عام قاری کو اندازہ بھی نہیں ہوتا. یہی وجہ ہے کہ ویب سائٹس بنتی ہیں، بکھرتی ہیں اور منظر نامے سے غائب ہو جاتیں ہیں. اس لیے جب دلیل اپنی پہلی سالگرہ پاکستان میں بلاگنگ ویب سائٹس کی فہرست کی درجہ بندی میں اگر پہلے نمبر پر ہونے کے اعزاز کے ساتھ منا رہی ہے تو یہ کوئی معمولی کامیابی نہیں ہے. اور یہ اللہ کے فضل کے بعد دلیل ٹیم کی انتھک محنت اور کاوشوں کا نیتجہ ہے.

دلیل ڈاٹ پی کے سے قبل دائیں بازو کے قاری اور لکھاری اپنے لیے کوئی مناسب پلیٹ فورم دستیاب نہ ہونے کے قلق اور تشنگی میں مبتلا تھے. عامر خاکوانی بھائی نے بروقت ایک متوازن، مذہب پسند، اور ہمارے اقدار کی ترجمان ویب سائٹ کی ضرورت کو نہ صرف محسوس کیا بلکہ اس خواب کی عملی تعبیر کے لیے اپنے وسائل، وقت اور صلاحیتوں کو وقف کر دیا. یہ عامر بھائی کی نیک نیتی کا فیض ہی تھا کہ دلیل نے دنوں اور ہفتوں میں ہی بے پناہ پذیرائی حاصل کر لی اور جلد ہی پاکستان کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی بلاگنگ ویب سائٹ بن گئی. بیچ میں کچھ سرور کے مسائل اور دیگر تکنیکی وجوہات کی بنا پر ویب سائٹ کچھ ہفتے بند رہی جس کی وجہ سے سائٹ کی ساکھ اور مقبولیت کو کافی دھچکا لگا لیکن اپنی ٹیم کی شب و روز کی محنت کی وجہ سے دلیل اب دوبارہ کامیابیوں کی شاہراہ پر سرپٹ بھاگ رہی ہے اور مقبولیت کی نئی بلندیوں کو چھو رہی ہے.

دلیل نے نہ صرف بہت سے نئے لکھاریوں کو لکھنے کا موقع اور پلیٹ فورم مہیا کیا ہے بلکہ بہت سے پرانے فیس بک لکھاریوں نے دلیل کی بدولت سنجیدگی اور مستقل مزاجی سے لکھنا شروع کر دیا ہے. بلاگنگ ویب سائٹ نئے اور ایسے لکھاریوں کےلیے ایک بہت بڑا پلیٹ فارم ہوتی ہیں جن کی اپنی فین فالونگ محدود ہوتی ہے. اگر آپ کی بات اور تحریر میں وزن ہے تو آپ راتوں رات قابل ذکر اور معروف لکھاری بن سکتے ہیں.

مجھے ذاتی طور پر دلیل کی جو چیز پسند ہے وہ اس کے مضامین کے موضوعات کا تنوع ہے. دلیل پر آپ کو صرف سیاسی اور حالات حاضرہ کے مضامین نہیں ملتے بلکہ ہمارے معاشرتی مسائل، سماجی رویے، مذہب، ملت تعلیم، خارجہ پالیسی، کشمیر. طنز و مزاح، ادبی مضامین کے علاوہ یہاں آپ کو کہانیاں اور افسانے بھی پڑھنے کو ملتے رہتے ہیں. بھارت سے تعلق رکھنے والے لکھاریوں کے توسط سے بھارت اور کشمیر کی اندرونی صورتحال کی عکاسی کرتی تحریریں بھی بڑی چشم کشا اور فکر انگیز ہوتی ہیں،

جہاں تک مزید بہتری کی بات ہے تو میری ذاتی رائے میں چونکہ دلیل نئے لکھاریوں کو زیادہ موقع دیتی ہے جس سے بعض دفعہ تحریر کا معیار کچھ متاثر ہوتا ہے، اس میں مزید بہتری کی ضرورت ہے. ہمارے ایک ہم نوالہ اور ہم پیالہ دوست از راہ تفنن فرماتے ہیں کہ دلیل پر ہر داڑھی والے مرد اور ہر حجاب والی خاتون کی تحریر چھپ جاتی ہے، چونکہ بات سچی ہے، اس لیے ہم ایسے ”فتنہ پرور“ دوستوں کو سوائے گھورنے کے کیا کہہ سکتے ہیں. میری دوسری خواہش یہ ہے کہ دلیل google adsense کی طرف جائے تاکہ دلیل ٹیم کے ارکان کو ان کی محنت کا معقول معاوضہ ملے اور دلیل وہ پہلی رجحان ساز ویب سائٹ بنے جو اپنے لکھاریوں کو چاہے برائے نام ہی سہی لیکن معاوضہ ادا کرے.

دلیل کے ساتھ میرا ذاتی تجربہ بہت شاندار رہا ہے. یہ دلیل خان اور عامر خاکوانی بھائی کی بندہ پروری اور ذرہ نوازی ہی ہے جو فدوی جیسا غیر مستقل مزاج آدمی تسلسل سے کچھ لکھتا رہتا ہے. خاص طور پر میں نے دلیل کے لیے جو کہانیاں لکھی ہیں، اس کے پیچھے دلیل بھائی کی مسلسل تھپکیاں اور ٹہوکے کارفرما ہیں.

دلیل کے بارے میں مخالف حلقے کی طرف سے یہ تاثر پھیلایا گیا کہ یہاں مخالف نکتہ نظر کو جگہ نہیں ملتی، حالانکہ اس بات میں وزن نہیں ہے. میری کئی طنزیہ تحریریں اس کی گواہ ہیں. دلیل کی ادارتی ٹیم ہر تحریر کا باریک بینی سے جائزہ لینے اور کانٹ چھانٹ کے بعد ہی چھاپتی ہے، جب دن میں آپ کو درجنوں تحریریں شائع کرنی ہوں تو یہ کام مزید محنت طلب اور مشکل ہو جاتا ہے.

میری دعا ہے کہ دلیل کی کامیابیوں کا سفر یوں ہی جاری و ساری رہے، ہم رہیں نہ رہیں یہ ویب سائٹ یوں ہی سوشل میڈیا ہر جگمگاتی رہے. اللہ تعالی اپنے فضل سے اسے عامر بھائی اور باقی دلیل ٹیم کے لیے صدقہ جاریہ اور توشہ آخرت بنا دے.

آخر میں دلیل ٹیم کے جذبے اور خود اعتمادی کا ایک واقعہ بیان کرنا چاہوں گا.
کچھ عرصہ پہلے کچھ شرارتی دوستوں اور ایک ”شریکہ“ ٹائپ ویب سائٹ نے دلیل کے خلاف فیک ویوز کے الزام اور ریٹنگ میں پیچھے رہ جانے کی تہمت کا طوفان اٹھا رکھا تھا. میں نے اس ویب سائٹ کے خلاف ایک سخت تحریر لکھ کر بھیجی تو دلیل خان بھائی نے جواب دیا کہ ہم الفاظ نہیں، کارکردگی سے ان کو جواب دیں گے. اور کچھ ہی ہفتوں میں دلیل ٹیم نے ”شریکہ“ ویب سائٹ کو ریٹنگ میں پیچھے چھوڑ دیا، لیکن مذکورہ کم ظرفوں کی طرح اس چیز کو دوسروں کی تضحیک اور تمسخر بنانے کے لیے استعمال نہیں کیا. یہ اعلی ظرفی اور اپنے مقصد پر نظر رکھنے کی عمدہ مثال ہے.