عید ……… سو لفظوں کی کہانی- مبشر علی زیدی

رمضان کی با ئیسویں کو بازار میں اتنا رش!
میں حیران پریشان رہ گیا۔
بازار میں سیکڑوں خواتین تھیں۔
خوش نہیں، بے حد خوش۔
کبھی ایک دکان پر جاتیں،
ملبوسات کی قیمت پوچھتیں۔
کبھی دوسری دکان پر جاتیں،
ناپ کا جوتا نکلواتیں۔
کبھی چوڑی کی دکنیا کا معائنہ کرتیں،
کبھی آرٹیفشل جیولری کے ڈیزائن دیکھتیں۔
ان کے ساتھ مرد بھی تھے
لیکن کم اور خیالات میں گم۔
میں نے بیوی سے پوچھا،
’’عید میں ابھی ایک ہفتہ ہے۔
بازار میں اتنا رش کیوں ہے؟
سب خواتین اتنی خوش کیوں ہیں؟‘‘
بیوی نے کہا،’’شاپنگ، شاپنگ، شاپنگ،
ہماری تو یہی عید ہے۔‘‘