پہلی تاریخ کا بڑا چاند - ڈاکٹر زاہد شاہ

آج تو چاند بڑا تھا، مفتی منیب الرحمن نے ایک روزہ ضائع کردیا؟

بعض لوگ اس اعتراض کی وجہ یہ بیان کر رہے ہیں کہ پہلی کا چاند بڑی تھا، اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ دوسری تاریخ کا تھا، اور اس تناظر میں حکومت اور رؤیت ہلال کمیٹی کا اعلان درست نہیں تھا.

پہلی بات یہ ہے کہ حکومت کا اعلان حقیقتاً غلط بھی ہو، تب بھی شریعت کا یہی حکم ہے کہ لوگوں کا روزہ تب ہوگا جب حکمران اعلان کرے. (شامی 320/4) اگر حکمران غلط کر رہا ہے تو اس کی وبال ان پر ہے.

دوسری بات یہ کہ یہی بات نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام کے دور میں بھی لوگ کیا کرتے تھے، لیکن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام ایسا کہنے سے لوگوں کو منع کرتے تھے کہ بڑے اور چھوٹے کی بحث چھوڑ دو، اگر پہلی بار دیکھا ہے تو بس پہلی کا ہے. حتی کہ ایک دفعہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پہلی کے چاند کو بڑا کہنے پر سخت غصہ ہوئے اور اسے بدترین دور اور قیامت کی نشانی قرار دیا، چنانچہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ قیامت کی قریبی نشانیوں میں سے ایک چاند پھول جانا ہے، اور وہ یہ کہ پہلی تاریخ کے چاند کو کہا جائے گا کہ یہ دوسری تاریخ کا چاند ہے کیونکہ بڑا ہے. (المعجم الصغیر 115/2).

تیسری بات یہ ہے کہ بڑا ہونے کی اصل وجہ طبعی قوانین ہوتے ہیں، مثلاً افقی زاویہ 10درجے سے زیادہ سورج سے دور ہونا، افقی بلندی، غروب کے وقت چاند کا افق پر 8 درجے سے زیادہ بلندی پر ہونا، عمر 20 گھنٹے سے زیادہ ہونا، اس طرح موسم وغیرہ کی بنیاد پر بعض اوقات چاند بڑا ہوتا ہے.

چوتھی بات یہ ہے کہ بعض اوقات چاند ہوتا ہے لیکن زاویے، یا عمر کی کمی وغیرہ کی وجہ سے نظر نہیں آتا، ظاہر ہے کہ اس صورت میں آئندہ رات کو بڑا ہی ہوگا.

پانچویں بات یہ ہے کہ شریعت نے روزے کے لیے پہلی یا دوسری تاریخ کو شرط اور علت نہیں قرار دیا، بلکہ چاند کا انسانی آنکھ سے نظر آنا قرار دیا ہے، اس وجہ سے کلینڈر یا نیومون سے آغاز شرعا درست نہیں ہے. حدیث میں ہے کہ اگر گرد و غبار یا بادل کی وجہ سے چاند نظر نہ آئے تو پھر پہلے مہینے کے 30 دن پورے کرو. اس کا مطلب یہ ہے کہ چاند تو ہوگا مگر بادل اور گردوغبار کی وجہ سے نظر نہیں آئے گا. ظاہر ہے کہ اگلے دن چاند دوسری تاریخ کا ہوگا اور بڑا نظر آئے گا، لیکن شرعا پہلی کا شمار ہوگا کیونکہ گردوغبار یا بادل کی وجہ سے نظر نہیں آیا تھا، اور حساب اور شرعی حکم تب ٹھہرتا ہے جب نظر آئے.

لہذا چھوٹا بڑا ہونے کی وجہ سے شرعی حکم پر اثر نہیں پڑتا، نہ شرعا ایسا کہنا اور اس پر کمیٹی کی شرعی حثیت کم کرنا یا مشکوک کرنا درست ہے.