ایرانی آرمی چیف کی حملے کی دھمکی، پاکستان کا شدیداحتجاج

اسلام آباد: پاکستان نے ایرانی چیف آف اسٹاف کی جانب سے حملے کی دھمکی پر ایرانی سفیر سے شدید احتجاج کیا ہے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق ایرانی افواج کے چیف آف اسٹاف میجر جنرل محمد باقری کے اشتعال انگیز بیان پر پاکستان میں تعینات ایرانی سفیر کو دفتر خارجہ طلب کرکے شدید احتجاج کیا گیا ہے۔ ایرانی سفیر کو واضح الفاظ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کو ایرانی افواج کےچیف آف اسٹاف کے بیان پر شدید تحفظات ہیں، ایرانی کمانڈر کے بیانات سے منفی تاثر پیدا ہوا، اس طرح کے بیانات سے دونوں ملکوں کے تعلقات خراب ہونے کا اندیشہ ہے، اس لیے ایرانی حکام کو اس قسم کے بیانات سے گریز کرنا چاہیے۔

واضح رہے کہ ایرانی افواج کے چیف آف اسٹاف میجر جنرل محمد باقری کا گزشتہ روز بیان منظر عام پر آیا تھا جس میں انہوں نے پاکستان میں دہشت گردوں کے ’’محفوظ ٹھکانے‘‘ کی موجودگی کا الزام لگاتے ہوئے دھمکی دی تھی کہ اگر ان ٹھکانوں کو ختم نا کیا گیا تو ایرانی فوج پاکستان پر حملہ کردے گی۔ محمد باقری نے دھمکی دیتے ہوئے کہا تھا کہ اگر پاکستان نے اپنی حدود میں موجود دہشت گردوں کو گرفتار نہیں کیا، ان کے ٹھکانے خود تباہ نہیں کیے اور پاک ایران سرحد پر نگرانی مؤثر نہ بنائی تو ایران ہر اس جگہ حملہ کرنے کا حق رکھتا ہے جہاں دہشت گردوں کے ٹھکانے موجود ہوں۔

واضح رہے کہ ایران کی جانب سے پاکستان پر حملے کی دھمکی ایک ایسے وقت دی گئی ہے جب مغربی سرحد پر افغانستان اور مشرقی سرحد پر بھارت نے پاکستان کے خلاف مسلسل محاذ کھول رکھا ہے۔