کہیں قافلہ چھوٹ نہ جائے !!!!! - اشفاق پرواز

خدائے تعالیٰ کی بندگی کی دعوت دراصل دنیا کی سب سے عظیم نعمت ہے جو ایک انسان دوسرے انسان کو دے سکتا ہے۔یہ خیر خواہی میں سب سے بہترین خیر خواہی ہے کہ ہم اپنے بھائی کو جہنم کی آگ سے بچانے کی خاطر اور اپنے ساتھ جنت میں لے جانے کی خاطر اس فکر میں تڑپتے رہیں۔اس سے بڑھ کر اور کیا خیر خواہی ہو سکتی ہے کہ آپ اپنے بھائی کو ابدی زندگی میں خوشحال دیکھنا چاہتے ہوں؟ یہی وجہ ہے کہ تنظیم کی ترجیحات میں سب سے اولین درجہ دعوت کو دیا گیا ہے ۔

آج ملت کے نو جوانوں کا ایک بہت ہی قلیل طبقہ اپنی دعوتی ذمہ داریوں کو سمجھ پایا ہے۔نو جوانوں کا ایک بڑا گروہ سرے سے دعوتی ذمہ داری کا اس بنا پر انکار کرتا ہے کہ ہمیں سب سے پہلے خود اپنی ملت کے نوجوانوں کی اصلاح کی ضرورت ہے ۔ جب اتنا بڑا میدان ہمارے سامنے ہے تو اپنے لیے ایک نیا محاذ کھولنا کس طرح مناسب ہو سکتا ہے ؟ اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جاسکتا کہ آج امت کے نوجوانوں کی اکثریت دین اسلام کی بنیادی تعلیمات سے غافل ہی نہیں بلکہ اس کی ضد میں اپنی زندگی گزار رہی ہے ۔لیکن اس کا یہ مطلب نکا لا جائے کہ جب ہم اپنے نو جوانوں کی اصلاح و تربیت مکمل کر لیں تو دعوتی کام کی ضرورت باقی نہ رہے گی اور ہمارے غیر مسلم ساتھی خود بہ خود ان کی سیرت و کردار سے متاثر ہو کر حلقہ اسلام میں داخل ہوں گے، صحیح نہیں ہے۔ کیونکہ قرآن کی رو سے"دعوت" اور "اصلاح" دو الگ الگ کام ہیں جو کہ ہماری یکساں توجہ کے مستحق ہیں۔

یہاں پر یہ قیاس کرنا بالکل بھی مناسب نہ ہوگاکہ ہم اپنی ملت کے نوجوانوں کی اصلاح و تربیت سے فارغ ہوجایں تو پھر "دعوت" کی طرف توجہ کریں گے کیونکہ نہ تو ہم "اصلاح و تربیت" کے لیے کوئی ٹائم فریم مقرر کرسکتے ہیں کہ دس ، پندرہ یا بیس سالوں کی ڈیڈ لائن سے پہلے ہم یہ کام مکمل کرلیں گے اور نہ ہی ہم اصلاح و تربیت کا کوئی ایسا پیمانہ رکھتے ہیں جس پر انسانوں کو تولا جائے اور الیکٹرانک ریٹنگ ہمیں یہ بتادے کہ اس شخص کی تربیت مکمل ہوچکی ہے یا نہیں۔تربیت تو ایک مسلسل عمل ہے جو انسان کی سانس ٹوٹنے تک چلتا رہتا ہے ۔

اللہ کے رسول ﷺ نے جس کام کا آغاز دعوت سے کیا وہیں اس دعوت کے قبول کرنے والوں کی اصلاح و تربیت کا مناسب اور اعلیٰ معیار کا انتظام بھی فرمایا ۔آپﷺ مسلسل ان دونوں کاموں کو انجام دیتے رہے اس لیے آپﷺ کی دعوت نے جہاں اپنے وابستگان کو مسلم نوجوانوں سے روابط قائم کرنے کی ترغیب دی ہے وہیں کم از کم دو غیر مسلم نوجوانوں سے دعوتی روابط رکھنے کو لازمی ٹھہرایا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں:   پولیٹیکل اسلام؛ کام کا اسلوب اور فکر معاش - ڈاکٹر حافظ اسامہ اکرم

ہمارے نوجوانوں کی ایک دوسری بڑی اکثریت ایسی بھی ہے جو دعوتی کام کی اہمیت کا احساس تو رکھتی ہے لیکن اس کارِدعوت کو انجام دینے کے طریقے کار سے واقف نہیں ۔ اس کا نتیجہ ہے کہ ہم دعوتی کام کے آغاز سے پہلے ہی رک جاتے ہیں اور اپنی کالج لائف کا ایک بڑا حصہ اسی تذبذب میں گزار دیتے ہیں کہ شروعات کہاں سے ہو اور کیسے ہو؟ ہم مختلف شبہات میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔ کبھی ہمیں کالج میں اپنے امیج کا خیال اس کام سے روک دیتا ہے تو کہیں کالج انتظامیہ کا بے وجہ خوف تو کبھی دنیا کے کسی حصے میں ہونے والا کوئی سانحہ ہمارے قدم ڈگمگادیتا ہے۔ان تمام وجوہات کے ساتھ ساتھ ایک اور بڑی وجہ یہ ہے کہ ہم سمجھتے ہیں کہ جس شخص کو ہم دعوت دے رہے ہیں اس کے مذہب اور عقیدے کے متعلق ہمیں جب تک مکمل معلومات نہیں ہوں گی ہم اسے مطمئن نہیں کر سکیں گے۔یہ ایک بہت بڑی غلط فہمی ہے جس کا ہم شکار ہیں۔اس معاملے میں ہمیں اللہ کے رسولﷺ کے طریقے کو نمونہ بنانہ ہوگا چناچہ ہم آپﷺ کی پوری زندگی کو دیکھتے ہیں کہ کہیں آپﷺ نے لوگوں کو اسلام کی طرف بلانے کے لیے ان کی مذہبی کتابوں کا سہارا نہ لیا ہے نہ ان کے عقیدوں پر بحث کی ہے۔آپ ﷺ نے تمام نظام ہائے زندگی اور عقیدوں کی حکیمانہ انداز میں نفی کرتے ہوے اسلام کو کامیابی و نجات کا واحد راستہ قرار دیا ۔

بے بنیاد عقیدوں اور تحریف شدہ کتابوں کے سہارے اسلام کو ظاہر کرنے کی کوئی بھی ضرورت نہیں ہے ۔دین اسلام کا بنیادی علم اور دیگر عقائد کی واقفیت کم از کم ہمارے اس کام کے لیے بہت کافی ہے۔دعوت کے لیے کسی خاص طریقے کو اپنے لیے اُصول بنا لینا بھی کسی حد تک مناسب نہیں ہے۔بلکہ دعوت فرد اور موقع کے لحاظ سے مختلف انداز میں دی جا سکتی ہے۔میرا ذاتی تجربہ یہ ہے کہ جب تک ہم اس میدان میں کود نہیں پڑتے تب تک دعوت کے مختلف طریقے ہم پر نہیں کھل سکتے ۔ہمیں رسول اللہ ﷺکی زندگی میں ہر پہلو بڑی بہترین مثالیں ملتی ہیں ۔آپﷺ کے دعوتی انداز میں ہمیں خیر خواہی ،ہمدردی اور ایثار کے جذبات نمایاں نظر آتے ہیں لہٰذاہمارا انداز دعوت بھی انہی جذبات سے سرشار ہونا چاہیے۔نہ کہ ہم مدعو کو چلینج (Challange ) کر کے اس سے مقابلہ آرائی کریں ۔

یہ بھی پڑھیں:   پولیٹیکل اسلام؛ کام کا اسلوب اور فکر معاش - ڈاکٹر حافظ اسامہ اکرم

اپنی زندگی کے اس سفر میں جب میں فریضہ دعوت کی انجام دہی میں اپنی پستی اور کوتاہیوں پر نظر ڈالتا ہوں اور گہرے شعور کے ساتھ اس کام کا تہیہ کرتا ہوں تومیں اپنے آپ کو کالج لائف کے آخری ایام میں پاتا ہوں۔ اس وقت تک بہت دیر ہو چکی ہوتی ہے ۔کچھ ہی دنوں میں ہم کالج چھوڑنے والے ہوتے ہیں اور وہ ہمارے ساتھ دن رات اٹھنے بیٹھنے والے ہمیشہ کے لیے ہم سے جدا ہونے والے ہوتے ہیں۔نہ جانے ان میں سے کوئی اعلٰی تعلیم کے لیے باہر چلا جائے ،کوئی ملازمت کے حصول کے لیے کسی دوسرے شہر چلا جائے اور ہم سب اپنی اپنی مصروفیاتِ زندگی میں گم ہو کر رہ جائیں اور ان سب سے ہمارا تعلق اس وقت تک کے لیے ختم ہو جائے جب ہم میدانِ حشر میں جمع ہوں۔ہمارے یہی ساتھی ہمیں اللہ کے حضور ﷺ قصور وار ٹھہرائیں کہ ہم نے ان سے حق کو چھپائے رکھا ۔

دعوت کے جتنے مواقع کالجوں میں ہیں یقین جانیے کالج سے باہر کی دنیا میں بہت کم میسر آسکتے ہیں ۔آج مجھے اس بات کا احساس بڑی شدت سے ہو رہا ہے جب میں نے کالج کی زندگی سے باہر قدم رکھا ہے اور یقین مانے کہ اسی بات نے مجھے قلم اٹھانے پر مجبور کیا کہ میں اپنے رفقا کو اس بات سے آگاہ کروں کہ وہ اپنے دعوتی سفر کا آغاز کرنے میں دیر نہ کریں ۔

اسلامی جمعیت طلبہ جموں و کشمیر طلبہ کی نمائندہ تنظیم ہے اور اس کا دائرہ کار طلبہ برادری ہیں۔ لہٰذا ایک داعی گروہ ہونے کی حیثیت سے جمعیت کو ارشاد ربانی کی روشنی میں اپنے دعوتی پروگرام کو آگے بڑھانا ہوگا۔ طلبہ کی نفسیات کو سمجھنا ضروری ہے ۔ اور بڑی ہمدردی ، شفقت اور وسیع القلبی کا مظاہرہ کرنا ہوگا۔ طلبہ کا مزاج تند و تیکھا ہوتا ہے اس لیے احتیاط ضروری ہے کہ کہیں کوئی مخاصمت کی صورت پیدا نہ ہو۔داعی بننا صبر کا متقاضی ہوتا ہے،تبھی ممکن ہے کہ جمعیت کے کار کناں اختلافات کوبرداشت کر سکتے ہیں اور اپنے حسن کردار و شیرین گفتار اور محبت و اخوت کے اتھاہ جذبات سے دوسروں کو متاثر کرسکتے ہیں۔ورنہ بعیدنہیں کہ تند مزاجی طلبہ کو اسلامی جمعیت طلبہ سے متنفر کردے۔

بقولِ اقبال،

کوئی کارواں سے چھوٹا کوئی بدگماں حرم سے
کہ میر کارواں میں نہیں خوئے دل نوازی