حضرت مولانا! خاندانی منصوبہ بندی کی حمایت کیوں؟ عثمان حبیب

آج کل ٹی وی چینلز پر خاندانی منصوبہ بندی کے حوالے مختلف اشتہارات چل رہے ہیں، جس میں حضرات علمائے کرام اور مولانا حضرات، چھوٹے خاندان پر تلقین کرتے دکھائی دیتے ہیں. ان کی خدمت میں چند سوالات پیش کیے جا رہے ہیں، امید ہے کہ وہ جواب سے نوازیں گے.

(1) انسان اشرف المخلوقات ہے یا بہت سے مخلوقات سے اشرف ہے؟ قرآن کے نص سے کیا ثابت ہوتا ہے؟

(2) بہتر زندگی کی تعریف کیا ہے؟ قرآن و سنت کی نظر میں بہتر زندگی سے کیا مراد ہے؟ بہتری کا پیمانہ آپ نے مغرب سے لیا ہے یا اسلام سے؟

(3) مناسب حکمت عملی کیا ہوتی ہے؟ قرآن و سنت کیا بتاتے ہیں؟

(4) اچھی تعلیم کسے کہتے ہیں؟ پندرہ سو سال تک 1924ء میں خلافت عثمانیہ کے خاتمے تک مسلمانوں کو کون سی اچھی تعلیم دی جاتی تھی؟ اس زمانے میں اسکول تھے نہ کالج اور نہ یونیورسٹی، تو کیا مسلمان جاہل تھے، تعلیم سے محروم تھے، اب وہ پڑھے لکھے ہو گئے ہیں، یہ تعلیم کیا فرض ہے؟ سرسید تو کہتے تھے کہ سیکولر تعلیم آدمی کو مذہب سے دور کرتی ہے، مغرب سے محبت پیدا کرتی ہے مگر مجبوری ہے، میں اپنے علم الکلام سے اس کی خرابی ٹھیک کروں گا۔ آپ کہہ رہے ہیں یہ اچھی تعلیم ہے تو سرسید غلط تھے یا آپ غلط ہیں؟

(5) قرآن و سنت میں کہاں لکھا ہے کہ چھوٹا خاندان ہو تو زندگی آسان ہوتی ہے، بڑا خاندان ہو تو زندگی مشکل ہوتی ہے۔ صحابہ کرام، اکابرین کے خاندان بڑے بڑے تھے توکیا وہ سب مشکل کی زندگی گزارتے تھے۔ آپ کیا کہہ رہے ہیں؟

(6) جس حکم خداوندی کو آپ پیش کر رہے ہیں، اس کا اصل مطلب اور محمل کیا ہے؟ اس حکم خداوندی کے نیچے جو کچھ آپ نے لکھا یا آپ سے لکھوایاگیا ہے، کیا وہ اس سے میل کھاتا ہے؟

(7) اگر بچوں کی پیدائش میں وقفہ نہ ہو تو ان کی تربیت نہیں ہو سکتی، یہ قرآن کے کس نص سے ثابت ہے؟ تربیت کا تعلق وقفے سے کب ہو گیا ہے؟ یہ سبق آپ نے کس آیت اور کس حدیث سے لیا ہے؟ اسلامی علمیت میں تو یہ بحث کبھی نہیں ہوئی، آج اس بحث نے کیسے جنم لیا اور کیوں؟

(8) بہتر پرورش کیا ہوتی ہے؟ قرآن و سنت بہتر پرورش کا کیا معیار بتاتے ہیں؟ حکومت سندھ اور حکومت پاکستان تو تعلیم، پرورش، تربیت، معیار زندگی کے تمام معیارات مغرب سے مستعار لیتی ہے۔ آپ کن معیارات کی بات کر رہے ہیں؟

(9) بچوں کو اچھی زندگی کا حق دینے کا کیا مطلب ہے؟ اچھی زندگی کیا ٹی وی، کمپیوٹر، گاڑی، موبائل یا کچھ اور؟ کم بچوں اور چھوٹے خاندان کی زندگی اچھی ہوتی ہے تو کیا زیادہ بچوں، بڑے خاندان کی زندگی بہت بری ہوتی ہے؟ یہ سب باتیں، الفاظ، اصطلاحات کہاں سے سیکھی جا رہی ہیں؟ آپ کے بیان سے تو یہ معلوم ہو رہا ہے کہ جو لوگ زیادہ بچے، بڑا خاندان بناتے ہیں، وہ احمق اور بے وقوف ہوتے ہیں کیونکہ سمجھداری میں خوشیاں ہوتی ہیں اور سمجھ دار وہ ہے جس کا خاندان چھوٹا ہے، اس کی زندگی آسان ہے؟

(10) کسی صحابی، عالم کا خاندان چھوٹا نہیں تھا، عام آدمی کا خاندان بھی 1970ء تک بڑا ہوتا تھا، یہ سبق آپ کو کون پڑھا رہا ہے کہ بڑا خاندان آفت ہے، مصیبت ہے، لعنت ہے؟آپ تو اپنی تاریخ کا انکار کر رہے ہیں۔ حضرت مولانا، یہ بیان آپ کا نہیں ہے، یہ پاپولیشن ویلفیئر ڈپارٹمنٹ کا ہے جو امریکہ سے آیا ہے۔ آپ نے بغیر پڑھے، بغیر سوچے، بغیر سمجھے دستخط کر دیے ہیں۔ اپنی تصویر بھی چھپوا دی ہے، کیا یہ آپ کو زیب دیتا ہے؟ آپ عالم دین ہیں اور آپ اپنی تاریخ کا، اسلام کا، قرآن کا، دین کے احکامات کا خود ہی انکار کر رہے ہیں؟

(11) کل تک آپ خاندانی منصوبہ بندی کے خلاف تھے، اور آج اس سے متعلق اشتہارات کا حصہ بن رہے ہیں، آپ کل غلط تھے یا آج غلط ہیں؟

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com