نام نہاد آزادی رائے کا فتنہ اور بلاگرز - انصار عباسی

آزادی رائے کا مطلب اگر مادر پدر آزادی ہے تو میں اسے نہیں مانتا اور اسی لیے صحافت میں ہوتے ہوئے بھی اس کی ہمیشہ مخالفت کی۔ اگر آزادی رائے کا مطلب کوئی یہ لیتا ہے کہ کوئی بھی اُٹھ کر گستاخی تک کرنے کا ارتکاب کر سکتا ہے تو میری نظر میں اس سے بڑا کوئی فتنہ ہو نہیں سکتا کیوں کہ الفاظ اور قلم کے غلط استعمال کی کاٹ تلوار سے زیادہ تکلیف دہ ہوتی ہے اور یہ تکلیف اُس وقت بہت بڑھ جاتی ہے جب آزادی رائے کے اس فتنہ کا نشانہ کوئی خاص مذہب اور اُس کے ماننے والے ہوں۔ اسی آزادی رائے کے فتنہ کو استعمال کرتے ہوئے مغربی میڈیا نے اسلام مخالف فلمیں بنائیں اور گستاخانہ مواد بار ہا شائع کیا جس نے دنیا بھر کے مسلمانوں کی دل آزاری کی۔ اسی نام نہاد آزادی رائے کے فتنہ کے نتیجے میں دنیا میں کئی جگہ انتشار اور فساد پھیلا لیکن مغرب ہے کہ آزادی رائے کے اس فتنہ پر بند باندھنے کے لیے تیار نہیں اور اس کی وجہ اسلامی دشمنی کے علاوہ کچھ نہیں۔

ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ پاکستان سمیت دوسرے اسلامی ممالک اس مسئلہ کو اقوام متحدہ سمیت دنیا بھرکے مختلف فارمز پر اٹھاتے تاکہ ایک ایسے فتنہ کو ختم کیا جا سکے جو نہ صرف دنیا بھر کے مسلمانوں کی دل آزاری کا سبب بنتا ہے بلکہ اس کی وجہ سے نفرتیں بڑھتی ہیں، احتجاج ہوتے ہیں جس کے نتیجے میں اب تک بڑی تعداد میں انسانی جانوں کا بھی ضیاع ہو چکا ہے۔ اس سلسلے میں مسلمان ممالک کے میڈیا، دانشوروں، سول سوسائٹی وغیرہ پر بھی اہم ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ اسلام مخالف اس فتنہ کو نہ صرف رد کریں بلکہ مغرب کو بھی باور کرائیں کہ اس سے انسانیت کی کسی قسم کی کوئی خدمت نہیں ہو رہی بلکہ اس کی وجہ سے معاشرے میں نفرتیں پیدا ہوتی ہیں اور انسان دشمنی کے رجحانات بڑھتے ہیں۔ اس فتنہ کے خاتمہ کے سلسلے میں اسلام کی تعلیمات بہترین حل پیش کرتی ہیں اور وہ یہ کہ کسی کے مذہب کو بُرا مت کہو اور مذاق مت اُڑاؤ۔ لیکن افسوس کی بات یہ ہے گزشتہ چند سالوں سے مغرب کے نام نہاد آزادی رائے کے فتنہ کو پاکستان میں بھی رواج دینے کی باتیں ہو رہی ہیں اور اس سلسلے میں ہمارا اپنا میڈیا، اہل دانش، سول سوسائٹی اور سیاست میں موجود ایک طبقہ اس مہم جوئی میں خوب بڑھ چڑھ کر حصہ لے رہا ہے۔ ایسا کرنا نہ صرف ہمارے آئین و قانون کے خلاف ہے بلکہ اسلامی تعلیمات کے منافی ہے۔

ان دنوں گمشدہ بلاگرز (bloggers) کے نام پر انسانی حقوق اور آزادی رائے کی بہت باتیں ہو رہی ہیں۔ چند دنوں میں ہی اس مسئلہ کو اتنا اچھالا گیا اور یکطرفہ طور پر اس انداز میں اچھالا گیا کہ امریکا، برطانیہ اور یورپ تک نے حکومت پاکستان سے ان بلاگرز کی فوری برآمدگی اور اُن کے تحفظ کے ساتھ ساتھ آزادی رائے اور انسانی حقوق کی پاسداری کا مطالبہ بھی پیش کر دیا۔ نہ میڈیا اور نہ ہی حکومت، پارلیمنٹ، سول سوسائٹی نے اس طرف توجہ دی کہ آخر ان بلاگرز نے کیا کیا کہ انہیں مبینہ طور پر غائب کر دیا گیا۔ اس معاملہ میں سوشل میڈیا میں کچھ مواد شیئر کیے جانے لگا اور بعد ازاں چند ایک ٹی وی شوز میں بتایا گیا کہ اصل معاملہ کیا ہے۔ اب تک جو اطلاعات مختلف ذرائع سے گمشدہ بلاگرز کے متعلق حاصل ہو رہی ہیں وہ انتہائی قابل مذمت اور خطرناک نوعیت کی ہیں۔ جو کچھ چند ایک ٹی وی چینلز کے شوز میں بتایا گیا اور جو سوشل میڈیا کے ذریعے سامنے آ رہا ہے، اگر وہ سچ ہے تو یہ حکومت کی ذمہ داری بنتی ہے کہ بغیر کسی اندرونی و بیرونی دباؤ کے ان افراد کو فوری طور پر باقاعدہ گرفتار کر کے ان کے خلاف قانونی کارروائی شروع کی جائے، انہیں عدالت کے سامنے پیش کیا جائے۔ اگر ان پر لگے الزامات درست پائے جائیں تو انہیں نشان عبرت بنا دیا جائے۔ اس سارے معاملہ میں انصاف کے تقاضوں کو پورا کیاجائے اور اس کی ذمہ داری اسٹیٹ خود اُٹھائے۔

ایسے حالات میں حکومت اور پارلیمنٹ کی طرف سے تصویر کے صرف اُس رخ پر توجہ دینا جسے مغرب اور نام نہاد آزادی رائے کے چیمپئین دیکھانا چاہتے ہیں، ایک ایسی غلطی ہوگی جس سے خرابی ہی پیدا ہوگی۔ اس لیے بہتر یہی ہوگا کہ جن پر الزام ہے انہیں انصاف کے کٹہرے میں لا کھڑا کیا جائے اور ملک کے قانون کے مطابق اس معاملہ سے نپٹا جائے۔

Comments

انصار عباسی

انصار عباسی

انصار عباسی انگریزی روزنامہ دی نیوز کے ایڈیٹر انوسٹی گیشن ہیں، روزنامہ جنگ میں کالم لکھتے ہیں۔ اسلام پسند خیالات کے حامل ہیں، کھل کر اظہار کرتے ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */