جاگتے رہیو - پروفیسر مفتی منیب الرحمن

صوبۂ سندھ کی اسمبلی نے قبولِ اسلام کے بارے میں ایک ایکٹ پاس کیا ہے، جسے ’’امتناعِ قبولِ اسلام ایکٹ‘‘ کہنا بہتر ہوگا۔ اس ایکٹ کی رُو سے قرار دیا گیا ہے: ’’18سال سے کم عمر میں کوئی غیر مسلم اسلام قبول نہیں کرسکتا‘‘۔ مزید یہ کہ :’’جو غیر مسلم 18 سال کی عمر میں اپنی آزادانہ مرضی سے اسلام قبول کرے، تو وہ 21دن تک اس کا اعلان نہیں کرسکتا ‘‘۔\r\n\r\nہماری نظر میں یہ بِل دستورِ پاکستان کے آرٹیکل 2، 2A ،8 ،20 ،31 اور 227 کے منافی ہے۔ آرٹیکل31 ریاست کو پابند کرتا ہے کہ وہ مسلمانوں کو قرآن و سنت کے مطابق زندگی گزارنے کے بارے میں سازگار ماحول پیدا کرے ۔ آرٹیکل 2A اور 227 ریاست کو قرآن و سنت کے مطابق قانون سازی کا پابند کرتا ہے۔ شریعت کی رُو سے جب کوئی ذی شعور شخص اپنی آزادانہ مرضی سے صدقِ دل کے ساتھ کلمہ پڑھ لے، تو وہ مسلمان ہوجاتا ہے، اس کے لیے ریاست کی منظوری کہیں بھی شرط نہیں ہے۔ شریعت اسلام کے اظہار پر کوئی پابندی عائد نہیں کرتی، سوائے اس کے کہ کسی کے لیے انتہائی جبر و اکراہ کی صورت پیدا ہوجائے۔ اسی طرح شریعت میں اسلام قبول کرنے کے لیے 18سال کی عمر یا بلوغت شرط نہیں ہے۔ حق و باطل، خیر وشر اور نیک و بد میں تمیز کی صلاحیت رکھنے والے کسی بھی باشعور شخص کے اسلام قبول کرنے پر شرعاً اور قانوناً کوئی پابندی عائد نہیں کی جا سکتی۔ ویسے بھی بلوغت کے لیے 18 سال عمر مقرر کرنا شریعت کی رُو سے لازم نہیں ہے، شریعت میں بلوغت کے لیے اور بھی معیارات اور علامات ہیں۔ کسی کو اسلام قبول کرنے سے روکنا، اُس کے کفر پر راضی ہونا ہے اور فقہی اصول ہے کہ ’’رضا علی الکفر‘‘ کفر ہے۔\r\n\r\nہماری رائے میں جن اسمبلی ممبران نے ’امتناعِ قبولِ اسلام‘ کا یہ قانون منظور کیا ہے، انہوں نے اپنی عاقبت کی بربادی کا سامان کیا ہے، ان پر لازم ہے کہ اس پراللہ تعالیٰ سے توبہ کریں اور اپنی غلطی کا ازالہ کریں۔ سابق چیف جسٹس آف پاکستان اورگورنر سندھ جسٹس (ر) سعید الزماں صدیقی کی ذمے داری ہے کہ وہ اِس قانون کی توثیق نہ کریں اور اِسے نظرِثانی اور قرآن و سنت کے مطابق ڈھالنے کے لیے واپس اسمبلی کو بھیجیں، کیونکہ یہ ایکٹ آزادی مذہب اور حقوقِ انسانی کے بھی منافی ہے، اپنے مذہب کے اظہار کے لیے کسی پر قانونی پابندی عائد کرنا شریعتِ اسلامی اور پاکستان کے آئین کے خلاف ہے۔ وفاقی شرعی عدالت اور اسلامی نظریاتی کمیشن کو بھی اس سلسلے میں اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔\r\n\r\nجہاں تک جبراً مسلمان بنانے پر تعزیری سزا مقرر کرنے کا تعلق ہے، اُس پر ہمیں کوئی اعتراض نہیں ہے۔ لیکن رہا یہ سوال کہ آیا کسی کو اسلام قبول کرنے پر مجبور کیا گیا ہے، یہ طے کرنا عدالت کا کام ہے، یہ کسی انتظامی افسر کا دائرۂ اختیار نہیں ہے۔ عدالت میں کسی بھی الزام کے ثبوت کے لیے اقرار یا شہادت یا عدالت کے نزدیک قابلِ قبول قرائن و شواہد کا پیش کرنا ضروری ہوتا ہے، یہ بازیچۂ اطفال نہیں ہے۔\r\n \r\nپاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین جنابِ بلاول بھٹو زرداری اس خواہش کا اظہار کر چکے ہیں کہ کسی غیر مسلم کو بھی پاکستان کا صدر یا وزیرِ اعظم بنایا جائے، ہمیں اُن کی اس خواہش پر حیرت ہے۔ وہ اپنے آپ کو جنابِ ذوالفقار علی بھٹو مرحوم کا سیاسی وارث سمجھتے ہیں اور انہیں اس حقیقت کا علم ہی نہیں کہ جنابِ بھٹو مرحوم کی وزارتِ عظمیٰ کے دور میں پارلیمنٹ نے مکمل اتفاقِ رائے سے اسلامی جمہوریۂ پاکستان کے دستور کی منظوری دی تھی۔ پھر انہی کے دور میں دستور کی دوسری متفقہ ترمیم کے ذریعے منکرینِ ختمِ نبوت یعنی قادیانیوں کو غیر مسلم قرار دیا گیا تھا اور اسلامی جمہوریہ پاکستان کے دستور کے جَدوَل سوم میں صدر اور وزیرِ اعظم کا جو حلف نامہ درج ہے، اُس میں اسلام کے بنیادی عقائد اور ختمِ نبوت کا اقرار بھی شامل ہے۔ یہ ساری پیش رفت پاکستان پیپلز پارٹی اور جناب ذوالفقار علی بھٹو کے لیے ایک اعزاز ہے۔ لہٰذا جنابِ بلاول بھٹو کی سیاسی تربیت پر مامور پیپلز پارٹی کے سینئر رہنمائوں سے میری گزارش ہے کہ وہ بلاول صاحب کو فرصت کے لمحات میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین کا مطالعہ کرائیں۔ وہ سیاسی رہنما جو پاکستان میں حصولِ اقتدار کی تگ و دو میں شامل ہیں اور منصبِ صدارت یا وزارتِ عظمیٰ تک رسائی اُن کا خواب ہے، انہیں دستورِ پاکستان کا مطالعہ ضرورکرنا چاہیے، کیونکہ کسی بھی ملک میں وہی سیاسی جماعت قانونی قرار پاتی ہے جو اُس ملک کے دستور کو تسلیم کرے، اُسے سربلند رکھنے کا عزم کرے اور اُسے لفظاً و معنا دستور کے مندرجات کا فہم بھی ہو۔\r\n\r\nصوبۂ سندھ میں ہندومذہب کے ماننے والوں کے لیے حکومت نے سرکاری چھٹی کا اعلان کیا، اس پر ہمیں کوئی اعتراض نہیں ہے، لیکن پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین جنابِ بلاول بھٹو زرداری نے ہندوؤں کی مذہبی تقریب میں شرکت کی اور اُن کی رسوم کو ادا کیا، اُن کا یہ طرزِ عمل ہمارے لیے حیرت کا باعث ہے۔\r\n\r\n دوسرااہم واقعہ ایک قومی اخبار میں 24 نومبر کو حیرت انگیز انکشافات پر مشتمل جنابِ انصار عباسی کا کالم ہے، وہ لکھتے ہیں:\r\n’’یوایس کمیشن برائے بین الاقوامی آزادی مذہب‘‘ اور ’’پیس اینڈ ایجوکیشن فاؤنڈیشن پاکستان‘‘ کے اشتراک سے ایک تحقیقی رپورٹ مرتب ہوئی ہے، جس کے مندرجات انتہائی حد تک خطرناک ہیں، اس کے مندرجات سے عیاں ہے کہ اِس کے مرتّبین کے ذہنوں میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کے ریاستی مذہب اسلام کی حقانیت کے بارے میں انتہائی تعصب بھرا ہوا ہے۔ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ’’بے شک اللہ تعالیٰ کے نزدیک (مقبول ) دین صرف اسلام ہے، (آل عمران:19)‘‘۔ فرمایا: ’’اور جو اسلام کے سوا کسی اور دین کو اختیار کرے گا، تو وہ اُس سے ہرگز قبول نہیں کیاجائے گا، (آل عمران:85)‘‘۔ اسلام تو دینِ حق ہے اور دستور کی رُو سے اسلامی جمہوریہ پاکستان کا ریاستی مذہب ہے اور آئین کی رُو سے اِس کا تحفظ اور فروغ ریاست کی ذمہ داری ہے۔ اسلام کی حقانیت تو مسلَّمہ ہے، انسان کی جبلّت تو یہ ہے کہ باطل مذاہب کے ماننے والے بھی اپنے اپنے مذہب کو ہی برحق جانتے ہیں ، خواہ وہ حقیقت کے خلاف ہو۔ اس رپورٹ کی رُو سے مسلمانانِ پاکستان کا اپنے دین اسلام کو ’’واحد مبنی بر حق ‘‘ دین سمجھنا ایک منفی قَدر ہے اور اہلِ پاکستان کو اس پر شرمسار ہونا چاہیے، رپورٹ میں کہا گیا ہے:\r\n’’سرکاری اسکولوں کی نصابی کتابیں، جو اکتالیس لاکھ سے زائد بچوں تک پہنچتی ہیں، وہ اسلام پر مبنی نقطۂ نظر کو بطورِ واحد جائز اور قابلِ قبول سوچ ظاہرکرتے ہوئے مذہبی اقلیتوں کی منفی اور دقیانوسی انداز میں تصویر کشی کرتی ہیں‘‘۔ اسلام تو درکنار، اِس تبصرے کی رُو سے ہر صاحبِ مذہب کے لیے اپنے مذہب کو ’’واحد مبنی بر حق دین‘‘ سمجھنا جرم قرار پائے گا۔ زمین پر موجود انسانوں کی غالب تعداد کسی نہ کسی مذہب سے وابستہ ہے اور اِس رپورٹ کی رُو سے وہ سب قابلِ ملامت ہوں گے۔ مذکورہ رپورٹ کی رُو سے اسلام کو پاکستان کی کلیدی خصوصیت اور شناخت کے طور پر پیش کیا جانا، مذہبی اقلیتوں کے ساتھ تنازع کا سبب ہے، وہ لکھتے ہیں: \r\n’’پاکستان کے مذہبی تنوُّع کے باوجود، پورے نصاب میں اسلام کو پاکستان کی کلیدی خصوصیت اور پاکستان کی شناخت کے طور پر پیش کیا جاتا ہے، یہ مذہبی اقلیتوں کے مذہبی عقائد کے ساتھ تنازُع میں آتا ہے‘‘۔ غور کا مقام ہے کہ اسلام کو پاکستان کی شناخت قرار دینا، یہ دوسرے مذاہب کے ساتھ تنازع کا سبب ہے، یہ سوچ بیمار ذہنیت کی علامت ہے اور اس سے عیاں ہے کہ اس رپورٹ کے پسِ پردہ مقصد ’’وَحدتِ اَدیان‘‘ کے نظریے کو فروغ دینا ہے۔ ریاستِ پاکستان کا اپنے مذہب سے لاتعلق ہونا کس طرح ممکن ہے؟\r\n\r\nرپورٹ کے مرتّبین کی خواہش ہے کہ پاکستان کی تاریخ بدل دی جائے، تحریکِ پاکستان اور قیامِ پاکستان کے اَغراض و مقاصد کو پسِ پشت ڈال دیا جائے، پاکستان اپنے ماضی سے نظریاتی رشتہ توڑ دے اور اِس کے لیے معاشرتی علوم، مطالعہ پاکستان اور تاریخ کے نصاب کو بدل دیا جائے، کیونکہ اُن کی نظر میں یہ نصاب تنازعات کو بیان کرتا ہے، وہ لکھتے ہیں:\r\n’’معاشرتی علوم، مطالعہ پاکستان اور تاریخ کے نصاب میں طلبہ کو تاریخ کی وہ قسم پڑھائی جاتی ہے جو پاکستان کے قومی اور اسلامی تشخُّص کو فروغ دیتی ہے اور اکثر مذہبی لحاظ سے بھارت کے ساتھ تنازُعات کو بیان کرتی ہے‘‘۔ رپورٹ کے مرتّبین اس لیے بھی نالاں ہیں کہ مسلمانانِ پاکستان محمد بن قاسم اور سلطان محمود غزنوی کو اپنا ہیرو سمجھتے ہیں اور اُن کا ذکر فخر کے ساتھ کرتے ہیں، اُن کی نظر میں یہ شِعار ناقابلِ قبول ہے، وہ لکھتے ہیں:\r\n’’تمام سطحوں کی نصابی کتب میں بار بار ابھرتا رجحان جنگ اور جنگ کے ہیرو کی ستائش پر بہت زور دیتا ہے۔ خاص طور پر محمد بن قاسم اور سلطان محمود غزنوی کے سترہ مشہور حملوں سے سندھ کی فتح کو بہت فخر کے ساتھ ہر نصابی کتاب میں شامل کیا گیا ہے۔ برِصغیر میں تہذیب کے آغاز کے طور پر ان دو واقعات کو اجاگر کرنا، جبکہ آرٹ، فنِ تعمیر اور ثقافت کے ارتقا کا درسی کتب میں نظرانداز کیا جانا ایک اہم مسئلہ ہے‘‘۔ وہ مزید لکھتے ہیں: ’’اسلام کے بطورِ ’واحد صحیح‘ ایمان ہونے کو درسی کتب سے ختم کیا جائے ‘‘۔ اُن کی خواہش ہے:’’منفی تلقین ختم ہونی چاہیے اور بصیرت افروز تعلیم کے لیے غیر جانبدارانہ مواد اپنایا جائے‘‘۔ انہوں نے امریکی حکومت کو مشورہ دیا ہے: ’’نصابی کتب میں عدم برداشت اور متعصب مواد کو مکمل طور پر ختم کرنے کے لیے پاکستان کی وفاقی اور صوبائی حکومتوں کی حوصلہ افزائی کی جانی چاہیے‘‘۔ رپورٹ میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ پنجاب اور خیبرپختونخوا کی صوبائی حکومتوں نے اس رپورٹ کے مرتّبین کی دانش سے استفادہ کرتے ہوئے اپنے نصاب کو بہتر بنایا ہے۔\r\n\r\nپیس اینڈ ایجوکیشن فاؤنڈیشن کے ذمہ داران نے ہمارے نام ایک ای میل پیغام میں لکھا ہے:’’ہم اس رپورٹ کے مندرجات سے برات کا اعلان کرتے ہیں‘‘۔ ہم اُن کے اعلانِ برات کی تحسین کرتے ہیں، لیکن اس سے ہماری تشویش کامکمل ازالہ نہیں ہوتا، کیونکہ الزام یہ ہے کہ وہ اس رپورٹ کی تیاری کے تمام مراحل میں شریکِ عمل رہے ہیں اور اس رپورٹ کے مرتّبین کی دانش کو یکجا کرنے میں اُن کا پورا پورا حصہ ہے۔ اس لیے میں نے عنوان قائم کیا ہے:’’جاگتے رہیو!‘‘اور علامہ اقبال نے کہا تھا:\r\n وطن کی فکر کر ناداں ، مصیبت آنے والی ہے\r\nتری بربادیوں کے مشورے ہیں آسمانوں میں