وہ آپ کے بچوں کا مستقبل تھا - محمود فیاض

محمود فیاض دوستو! \nپانامہ لیکس اور سپریم کورٹ میں زیرسماعت کیس کو سیاسی جماعتوں کی جنگ نہ بناؤ۔ سیدھی سے بات ہے، جو شخص پچھلے تیس سال سے آپ کے پیسے کا رکھوالا تھا، اس کی نیت و کردار پر سوال اٹھا ہے۔ اور وہ حساب بتانے کے بجائے جھوٹ پر جھوٹ سنا رہا ہے۔ \n۔ ۔ ۔ \nاس بات کو باقی کسی بات سے ملا کر پڑھنے کی ضرورت کیوں ہے ؟\n۔ \nاور جو آپ لوگوں کا کھربوں روپیہ ملک سے باہر گیا ہے،\nوہ آپ کے بچوں کا مستقبل تھا۔ \nوہ آپ کے بچوں کے اسکول تھے۔ \nوہ آپ کے ماں باپ کے لیے ہسپتال تھے۔ \nوہ آپ کے گاؤں کی سڑکیں تھیں۔ \nوہ آپ کی فصلوں کی کھاد و پانی کا پیسہ تھا۔ \n۔جو آپ کو ملنے کے بجائے کسی کرپٹ گرگے کے ذریعے اس ملک کے لوٹنے والوں کی جیبوں میں منتقل ہوا، اور پھر پانامہ اور اس جیسے کئی کنووں میں چھپا دیا گیا۔\n۔\nسوال صرف کاغذ کے نوٹوں کا نہیں۔ \n۔\nسوال یہ ہے کہ آپ کے جو بچے اس محرومی کی وجہ سے اسکول نہ جاسکے، اور آج ریڑھیاں لگائے ہوئے ہیں، وہ نقصان تو واپس نہیں ہو سکے گا۔\n۔\nسوال یہ ہے کہ آپ کے جو پیارے بغیر علاج و دوا کے دنیا سے چلے گئے، اس پیسے کے ملک میں نہ لگنے کی وجہ سے، وہ تو واپس نہیں آ سکتے نا؟\n۔\nسوال یہ ہے کہ آپ کی جو نسلیں اور وقت برباد ہو گیا، وہ تو کبھی واپس نہیں آئے گا نا۔\n۔\nتو ایسے لیڈر کے بھیس میں لٹیروں کی ہمدردی کیوں؟ جس نے آپ کی نسلوں کا مستقبل اپنی اولاد کے چند سالوں کی عیاشی کی خاطر برباد کر دیا۔ جس نے آپ سے آپ کی زندگی چھین لی۔ \n۔\nمنیر نیازی کے شعر پر پھر سے رویے ۔۔۔ \nمیری ساری زندگی کو بے ثمر اس نے کیا\nعمر میری تھی مگر اس کو بسر اس نے کیا \n۔

Comments

محمود فیاض

محمود فیاض

محمود فیاض نےانگلستان سے ماس کمیونیکیشنز میں ماسٹرز کیا اور بین الاقوامی اداروں سے وابستہ رہے۔ آج کل وہ ایک عدد ناول اور ایک کتاب پر کام کر رہے ہیں۔ اساتذہ، کتابوں اور دوستوں کی رہنمائی سے وہ نوجوانوں کے لیے محبت، کامیابی اور خوشی پر لکھتے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */