جو چپ رہے گی زبان خنجر لہو پکارے گا آستیں کا: علی عالم زادہ

کس کی آستین ، اور کونسا خنجر..ایک گرنیڈ پھینکو نہ رہے گی آستین اورنہ ہی لہو بچے گا، رہیں‌گےتوبس چیتھڑے اس زندہ قوم کے.\n\nباقی رہا خنجرتواس کی قوت گویائی تو ان دھماکوں کی گونج میں‌کب کی سلب ہو چکی، بےچارہ اس دور کے انساں کی جلادی پرمہربلب سہما ہوا خود سے لگی توقعات پر بے وجہ ہی شرمندہ کسی کونے کھدرے میں‌منہ چھپائے بیٹھا ہے.\n\nآرمی پبلک سکول پشاور جسے ہم نے سانحہ اے پی ایس کا نام دے رکھا ہے کی گونج سے ابھی کانوں کے پردوں کی لرزش تھمی نہیں‌تھی کہ کوئٹہ میں قوم کی خدمت کا عزم کرنے والے ماؤں کے لال، جنہوں نے ابھی صرف عزم ہی کیا تھا ،جنہوں نے ابھی اس یزیدی دنیا کے “پریکٹیکل تھپیڑوں” سے آشنائی اورانتہا پسندی کے بھڑکے ہوئے آتش کدے کی تپش کو محسوس ہی نہیں‌کیا تھا بڑے بڑے خواب آنکھوں میں‌سجائے دہشتگردی کے عفریت کا شکار ہو گئے.\n\nلیکن ایسا ہوا کیوں؟ کس کے گناہ کا کفارہ ادا کیا ان پرعزم جوشیلے جوانوں نے. یہ تو اپنی جان دینے ہی نکلے تھے اپنے گھروں سے ان شہیدوں کی مائیں‌بھی یہ جانتی ہوں‌گی کہ ان کے بیٹوں نے جس مقدس پیشے کا انتخاب کیا ہے اس میں ایک نہ ایک دن ایسی خبر بیواؤں کی مانگ اور ماؤں کی نیندیں اجاڑنے آ ہی جاتی ہے تاہم کیا انہوں نے سوچا بھی ہو گا یہ زیرتربیت سپاہی جو ابھی جوبن پر پہنچے ہی نہیں جنہیں‌ابھی خود اپنی حفاظت کے طریقہ کار سے مکمل واقفیت نہیں انہیں‌ یوں بے موت قربان کر دیا جائے گا.\n\nکون ہے اس دہشتگردی کا ذمہ دار، کس کی اتنی ہمت ہےکہ پاکستان کی دنیا کی بہترین افواج کے جاری آپریشن میں‌بھی ہمارے بچوں، بوڑھوں اورجوانوں کو مارنے چلے آتے ہیں، جتنی بھی احتیاطی تدابیر کر لی جائیں جتنے بھی ناکے، چیکنگ پوائینٹز، مورچے یا آپریشن کر لیں لیکن ابھی ایک زخم بھی ٹھیک سے بھرا نہیں‌ ہوتا کہ اسے پھر سے تازہ کر دیا جاتا ہے.\n\nابلتے لہو کے دھاروں نے پوری قوم کو اضطراب میں مبتلا کر دیا ہے. اور اضطراب کیوں نہ ہو؟ جن کے بچے مرتے ہیں ان میں‌تو بس اضطراب ہی زندہ رہ جاتا ہےایک جھوٹی آس ایک امید پر سسکتے زندگی گزارتے ہیں‌کہ شاید کبھی ہمارے بچوں کے خون ناحق کا انصاف ہو سکے شاید کبھی تو اس درد کا مداوا ہو سکے اور کچھ تو ایسے بھی ہوتے ہیں جو صدمے کی شدت سے سود و زیاں کے احساس سے بھی مبرا ہو جاتے ہیں مرنے والوں کے ساتھ گھر والے بھی مرجاتے ہیں بس ضروریات زندہ رہ جاتی ہیں زندہ لاشیں ایک دوجے کو دیکھتے ایک دوسرے کے لئے جینے کی کوشش میں سسک سسک کر اپنے زندہ لاشے گھسیٹتے رہتے ہیں.\n\nسانحہ کوئٹہ بے شک ایک المیہ ہے لیکن اس سے بھی بڑا ایک المیہ ہے کہ اس سانحے میں جام شہادت نوش کرنے والوں کو تو ایمبولینسیں‌بھی میسرنہ آ سکیں ان شیر جوانوں کے شہید لاشوں کو مسافر بسوں کی چھتوں پر رکھ کر بھجوایا گیا\n\nprotocol\nجبکہ دوسری جانب اس سلطنت پاکستان کے بادشاہوں کو جب کوئی خطرہ ہوتا ہے، جو کہ انہیں‌ہمیشہ ہی ہوتا ہےتو ان کے ہمراہ پروٹوکول کے قافلے چلتے ہیں.سرکاری گاڑیوں کی ایک لمبی قطار جو عوام کے خون پسینے کی کمائی سے حاصل کی جاتی ہیں اسی “باشعور” عوام کے راستے روک کر فراٹے بھرتے گزر جاتی ہیں. کیونکہ یہ “بڑے لوگ” ہیں “اہم لوگ” ان کے سر پہ ملک چلتا ہے انہیں کچھ ہو جائے تو شاید ہمارا وطن “یتیم” ہو جائے گا تو پھر ان کا کیا جو اپنی جانوں کو مشقتوں کی بھٹی میں تپا کر فولاد بناتے ہیں اس وطن عزیر کی حفاظت کےلیئے ،ان جوانوں نے اپنے “ڈنڈ” نہیں دکھانے ہوتے اور اگر دکھائیں بھی تو اس طاقت کا مظاہرہ وطن کے دشمنوں کے لئے ہوتا ہے بادشوں کی بادشاہی کے مظاہرے کی طرح نہیں‌جودشمن سے “دیدہ دل فرش راہ کیئے” ملتے ہیں اور دشمن چاہے ملک پر حملہ بھی کر دے لیکن ایک مذمتی بیان جاری کرنے سے پہلے بھی لاکھوں روپے مشورے دینے کی مد میں‌لینے والوں کے تحفظات دور کرنے کے چکر میں‌پڑے رہتے ہیں‌اور”باشعور”عوام نگاہیں جمائے بیٹھی رہتی ہے کہ ابھی بادشاہ سلامت کوئی ایسا فرمان جاری کریں گے کہ جلتے کلیجوں میں‌ٹھنڈک اتر جائے گی .\n\nلیکن یہ جمی ہوئی نگاہیں اسی امید پر جمے جمے پتھرا جاتی ہیں‌ اور بازی کوئی اور مار جاتا ہے. یہ جو سلطنت اسلامی جمہوریہ پاکستان کا ہلالی پرچم ہے یہ تو ہم نے لہرانے کے لیئے بنایا تھا. پاک سر زمین شاد باد کا ترانہ پڑھتے اس معززپرچم کو فخر بھرا سیلیوٹ کرنے کیلئے لیکن یہ کیا…کہ ہمارا سبز ہلالی پرچم شہیدوں کی لاشوں پر لپیٹ لپیٹ کر اتنا خوں رنگ کر دیا گیا ہے اس کا سفید حصہ ہی نہیں بلکہ سبز بھی ان بچوں کے خون کی لالی میں‌ڈوب گیا ہے .\n\nخون کی یہ لالی ہم سے لہو لہو لہجے میں‌پوچھتی ہے کہ اس پاک وطن پر چھاتے ہوئے سرخ اندھیروں کے بادل کب چھٹیں گے اس پرچم کا لہو اگلتا رنگ کب دھل کر ہلالی ہوگا؟\n\nاس پرچم کے لئے جان دینے والوں‌کو “پروٹوکول” کب ملے گا ؟\nیہ “بادشاہ” کب مسافر بسوں میں سفر کریں گے ..\n\nآخر کب ہم جاگیں‌گے..کب تک “سانوں کی ” کی بین بجاتے رہیں گے ؟ “سانوں کی” جی کوئٹہ میں‌ہواجوبھی ہوا، پرہم تو محفوظ ہیں‌..پشاور میں‌ہوا تو “سانوں کی” ہم تو محفوظ ہیں‌،ہمارے بچے محفوظ ہیں ..\n\nآخرمیں‌ دوخبریں آپ کے ساتھ شیئر کرتا چلوں‌، دیکھتے ہیں ان خبروں میں‌چھپی شہیدوں کی چیخیں‌آپکے کانوں تک پہنچتی ہیں‌یا پھر وہی”سانوں‌کی” کی گردان کرتے دامن بچا جاتے ہیں.\n\nپہلی خبر یہ ہے کہ بلوچستان کے وزیراعلی کی توجہ گزشتہ مہینے ہی کوئٹہ کے ٹریننگ سینٹرکی گارے سے بنی بناء‌حفاظتی اقدامات کے پانچ فٹ کی دیواروں کی جانب مبذول کروائی گئی تھی ،جس پر انہوں نے جو ایکشن لیا وہ قوم کے سامنے ہے اور دوسری خبر یہ بھی ہے کہ اسحق ڈارنے “جاتی عمرہ” کے حفاظتی اقدامات کیلئے 75 کڑوڑ روپے کی مانگ کی ہے.\n\nیہ “سانوں کی ” اب اور نہیں‌چلے گی، بے حسی کے اس دلدل سے نکلیئے کہ اس سے پہلے کوئی آپ کے “زندہ لاشے” سے ناک پر رومال رکھے اپنا پاک دامن بچاتے “سانوں کی ” کہتا ہوا گزر جائے