نیلی آنکھوں کے ساتھ لال آنکھیں بھی دیکھیں - عاطف نعیم

عاطف نعیم کافی دنوں سے الیکٹرانک وسوشل میڈیا کی ویب سائٹس، ارشد خان چائے والا کے نام سے بھری پڑی ہیں۔میں نے خود کو سنبھال کر رکھا کہ کچھ نہ لکھوں۔ مگر کیا کرتا، حالات ایسے بنے کہ میں چپ نہیں رہ سکتا تھا۔ سوشل میڈیا بھی کیا عجیب ہے جو ہیرو کو زیرو اور زیرو کو ہیرو بنانے میں مہارت رکھتا ہے۔جیسے اٹھارہ سالہ نیلی آنکھوں والا نوجوان ارشد خان ہے۔\n\nارشد-خان-چائے-والا چائے تو بہت بناتے ہیں مگر ارشد خان چائے والے کو پذیرائی اُس وقت ملی جب ایک فی میل فوٹو گرافر جویریہ نے اِس کی تصویر کو سوشل میڈیا پر آن کیا۔ تب ہر کوئی ارشد خان کی تصویر کو لائک کرنے لگا اورساتھ ہی ساتھ اہم ذمہ داری سمجھتے ہوئے فارورڈ بھی کرنے لگا۔دماغ کی پتلی لڑکیاں بے ہودہ قسم کے کُمینٹس بھی کرنے لگیں۔ کُمینٹس ملاحظہ کیجئے۔۔ظالما سانوں چائے پلادے۔۔۔کیا تمہارے اور بھی بھائی سُندر ہیں۔۔۔میں تمہیں ڈھونڈو گی اور ایک کپ چائے پیوں گی۔اسی طرح کے اور بھی۔\n%da%86%d8%a7%d8%a6%db%92-%d9%88%d8%a7%d9%84%d8%a7%d8%a2%d9%86%da%a9%da%be%db%8c%da%ba\nکیا اِن کو ایسی باتیں زیب دیتی ہیں کہ اس کو خوابوں کا شہزادہ ٹھہرائیں اور شادی تک کی پیشکش کر ڈالیں،اس کےساتھ سیلفیاں بنائیں، تصاویر کھینچاؤئیں، یہ ہمارے معاشرے کے اخلاقی دیوالیہ پن کی ایک جھلک ہے۔\n%d8%b3%d9%86%d8%af%d8%b1\nدوسری طرف حالات تو ایسے ہیں کہ ہماری شہ رگ، جنت نظیر وادی کشمیر میں معصوم بچوں، مردوں اور عورتوں کا قتلِ عام جاری ہے اور تو اور شام اور فلسطین میں مسلمان گاجر مولی کی طرح کٹ رہے ہیں ۔ کیا کبھی اُن کشمیری معصوموں کو الیکٹرانک اور سوشل میڈیا پر پذیرائی دی، جن کی آنکھیں لہو سےلال ظلم و بربریت کی وضع داستاں سُنا رہی تھیں۔نہیں نا۔۔؟ شاید اس لیے کہ وہ آنکھیں نیلی کی بجائے لال تھیں۔ کیا کبھی اُن کو پذیرائی ملی جن کی عید بھی گزری کرفیو کرفیو ۔ نہیں نا ۔۔؟ تو پھر کیا خوب ہوتا کہ ہم سوشل میڈیا میں اُن کشمیری بچوں کی تصویریں وائرل کرتے جن کی آنکھیں بھارتی گن شروں کی وجہ سے لال تھیں۔\n%d9%84%d8%a7%d9%84-%d8%a2%d9%86%da%a9%da%be%db%8c%da%ba\n%d9%be%d8%a7%da%a9%d8%b3%d8%aa%d8%a7%d9%86%db%8c\nاور کمینٹس میں لکھتے۔\nملاحظہ فرمائیں۔۔۔ بھارتی ظالموں ظلم بند کرو۔۔۔ننھے کشمیری جنید شہید سے پوچھتے کہ کیا تیرے اور بھی سُندر اور بہادر بھائی ہیں جو آزادی کی خاطر اپنی جان کا سودا کرنے کو تیار میں۔۔۔ بھارتی ظالموں کو کہتے کہ ہم تمہیں ڈھونڈیں گے اور ایک کپ چائے کی بجائے تمہیں زہر کا پیالہ پلائیں گے۔\nافسوس کہ ہماری نوجوان نسل کس ڈگر پر نکل پڑی ہے۔آخر کب تک ہم مغربی ہتھکندوں کا شکار ہوتے رہیں گے۔