میاں بیوی، دو رویے دو کردار - ڈاکٹر رضی الاسلام ندوی

رضی الاسلام ندوی (1) نکاح کے بعد میاں بیوی میں موافقت نہ ہوسکی. شوہر گھر سے چلاگیا، پھر اس نے پلٹ کر بیوی کی خبر نہ لی. وہ ایک ثقافتی تنظیم کا ممبر بن گیا، پھر اس نے سیاست میں دلچسپی لینی شروع کردی. وہ ایک بڑا نیتا بڑا سیاستدان بن گیا. آہستہ آہستہ وہ اقتدار کے مراکز پر قابض ہوگیا، اس کے نام کا ڈنکا بجنے لگا. اُدھر بیوی نے ایک اسکول جوائن کرلیا. دن گزرتے رہے، یہاں تک کہ اسکول سے اس کا ریٹائرمنٹ بھی ہوگیا. اس نے پوری زندگی شوہر کا انتظار کرتے اور اس کی آس لگائے ہوئے گزار دی، لیکن شوہر کو اب اس میں کوئی دلچسپی باقی نہ بچی تھی.\r\n\r\n(2) نکاح کے بعد میاں بیوی میں موافقت نہ ہوسکی. شوہر کو غصہ آگیا، اس نے تین طلاق دے دی، بے وقوف تھا، ایک طلاق سے کام چل سکتا تھا، بلاوجہ اور بلاضرورت اس نے تین طلاق دے دی. بہ ہر حال دونوں کے راستے جدا جدا ہوگئے. لڑکے نے دوسری لڑکی سے نکاح کرلیا اور پُر مسرت ازدواجی زندگی گزارنے لگا. لڑکی کا نکاح دوسرے لڑکے سے ہوگیا اور وہ بھی ہنسی خوشی زندگی گزارنے لگی.\r\nدونوں رویّوں میں سے کون سا رویّہ درست ہے؟\r\nبیوی کو لٹکا کر رکھنا، تاکہ وہ گھٹ گھٹ کر پوری زندگی کاٹ دے؟\r\nیا اسے آزاد کردینا، تاکہ وہ دوسرا رشتہ کرکے نئی زندگی کا آغاز کرے؟\r\n\r\nمیں حیرت زدہ ہوں کہ ملک کے دانشور، ترقی پسند، آزاد خیال، سیاست داں، سماجی کارکنان، قانون داں، عدل و انصاف کے اداروں سے وابستہ لوگ اور میڈیا، سب دوسرے رویے کو ظالمانہ، دہشت گردانہ اور مجرمانہ قرار دے رہے ہیں. گویا وہ زبانِ حال سے اوّل الذکر رویّے کے حامی ہیں.\r\nخرد کا نام جنوں رکھ دیا جنوں کا خرد\r\nجو چاہے آپ کا حسنِ کرشمہ ساز کرے

Comments

ڈاکٹر رضی الاسلام ندوی

ڈاکٹر رضی الاسلام ندوی

محمد رضی الاسلام ندوی نے ندوۃ العلماء لکھنؤ سے فراغت کے بعد علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے BUMS اورMD کیا. ادارہ تحقیق و تصنیف اسلامی ہند کے رفیق رہے. سہ ماہی تحقیقات اسلامی کے معاون مدیر اور جماعت اسلامی ہند کی تصنیفی اکیڈمی کے سکریٹری ہیں. قرآنیات اور سماجیات ان کی دل چسپی کے خاص موضوعات ہیں. عرب مصنفین کی متعدد اہم کتابوں کا اردو میں ترجمہ کیا ہے

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.