سرجیکل اسٹرائیک اور اسلام کی تعلیمات - رضی الاسلام ندوی

رضی الاسلام ندوی آج کل سرجیکل اسٹرایک کا بہت چرچا ہے. اس کی گونج سب سے پہلے ہندوستان کے حکم رانوں کی زبان سے سنی گئی. انھوں نے دعوی کیا کہ ان کی فوج نے پاکستان میں سرحد کے کئی کلومیٹر اندر گھس کر کارروائی کی اور دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو تباہ و برباد کر دیا، اس طرح اس خونی کارروائی کا بدلہ لے لیا جو پاکستانی گھس بیٹھیوں نے اڑی کے فوجی ہیڈکوارٹر میں انجام دی تھی. پھر تو یہ اصطلاح دوسرے ممالک بھی استعمال کرنے لگے، خبر آئی کہ امریکہ شام میں محدود سرجیکل اسٹرائک پر غور کر رہا ہے.گویا اب تک وہ دیگر ممالک کے اندرونی معاملات میں دخل اندازی سے گریزاں رہا ہے اور ان کی سالمیت اور اقتدارِ اعلی کااحترام کرتا رہا ہے. پھر تو یہ اصطلاح مذاق بن کر رہ گئی اور تفریحِ طبع کے طور پر کرکٹ اور دیگر میدانوں میں بھی اس کا استعمال ہونے لگا.\r\n\r\nممالک کی سرحدوں کا احترام ایک بین الاقوامی معاہدہ ہے. حالتِ امن میں اس کی پابندی مہذّب ہونے کی علامت سمجھی جاتی ہے اور اس کی خلاف ورزی کو سخت معیوب تصوّر کیا جاتا ہے. اسلام نے اس کو کتنی اہمیت دی ہے اور اس کی پامالی سے کتنی سختی سے روکا ہے، اس کا اندازہ درج ذیل حدیث سے بہ خوبی لگایا جا سکتا ہے:\r\nحضرت معاویہ رضی اللہ تعالٰی عنہ کا رومیوں سے ایک مدّت تک کے لیے جنگ نہ کرنے کا معاہدہ تھا. انھوں نے سوچا کہ اس عرصہ میں اپنی فوج کو سرحد کے قریب کردیں، تاکہ مدّت پوری ہونے کے بعد اس کی توسیع نہ کریں، بلکہ مسلم فوج فوراً دشمن پر حملہ آور ہوجائے. انھوں نے فوج کو سرحد کی جانب کوچ کرنے کا حکم دے دیا. فوج نے ابھی تھوڑا فاصلہ ہی طے کیا تھا کہ پیچھے سے ایک شخص برق رفتاری سے گھوڑا دوڑاتا ہوا پہنچا. وہ چیخ رہا تھا: [pullquote]اللہ اکبر، اللہ اکبر، وَفَاءٌ وَلا غَدر[/pullquote]\r\n\r\n(اللہ اکبر، اللہ اکبر، معاہدہ کی پابندی کرو، غدّاری نہ کرو)\r\n\r\nیہ شہ سوار حضرت عمرو بن عبسہ رضی اللہ عنہ تھے. ان سے دریافت کیا گیا کہ کیا معاملہ ہے؟ انھوں نے جواب دیا: میں نے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ و سلم کو یہ ارشاد فرماتے ہوئے سنا ہے: کسی قوم سے عہد و پیمان باندھا جائے تو جب تک مدت پوری نہ ہو، ہرگز اسے نہ کھولا جائے اور اس پر حملہ نہ کیا جائے، یا فریق مخالف کے علم میں لاکر معاہدہ کو ختم کر دیا جائے.\r\nحضرت معاویہ رضی اللہ عنہ تک یہ بات پہنچائی گئی تو انھوں نے فوراً فوج کو واپس ہونے کا حکم دے دیا.\r\n(ابوداؤد :2759،ترمذی : 1580، احمد :4/112،281)\r\n\r\nیہ ہے اسلام کی تعلیم سرحدوں کا احترام کرنے کے سلسلے میں، جو مذہب حالتِ امن میں ریاست کو اندرونِ ملک فوجی سرگرمیاں تیز کرنے کی اجازت نہ دیتا ہو، وہ سرحد پار کرکے دوسرے ملک میں چھاپہ مار کارروائی کرنے کی کیوں کر اجازت دے گا؟\r\nکہاں اسلام کی یہ اعلی و ارفع تعلیم اور کہاں مکّاری و عیّاری پر مبنی انسانوں کی دست درازیاں اور ڈھٹائی اور بےشرمی کے ساتھ معاہدوں کی بے دریغ پامالی!

Comments

ڈاکٹر رضی الاسلام ندوی

ڈاکٹر رضی الاسلام ندوی

محمد رضی الاسلام ندوی نے ندوۃ العلماء لکھنؤ سے فراغت کے بعد علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے BUMS اورMD کیا. ادارہ تحقیق و تصنیف اسلامی ہند کے رفیق رہے. سہ ماہی تحقیقات اسلامی کے معاون مدیر اور جماعت اسلامی ہند کی تصنیفی اکیڈمی کے سکریٹری ہیں. قرآنیات اور سماجیات ان کی دل چسپی کے خاص موضوعات ہیں. عرب مصنفین کی متعدد اہم کتابوں کا اردو میں ترجمہ کیا ہے

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */