ظالم معاشرہ میں حقوق کی ناپید آواز - اسامہ الطاف

اپنے حقوق سے بے بہرہ انسان قابل رحم بھی ہوتا ہے اور مستحق سزا بھی. مغربی ممالک کو آزادی اورحقوق کے تحفظ کے حوالے سے امتیازی درجہ حاصل ہے. یہی وجہ ہے کہ مغربی عوام خوشحال ہے، ایک مغربی آدمی اپنے حقوق پر سمجھوتہ نہیں کرتا، بلکہ اپناحق حاصل کرنے کے لیے حکومت وقت سے ٹکرانے سے بھی گریز نہیں کرتا۔ یہاں یہ بات واضح کرنا ضروری ہے کہ مغربی ممالک کی ان جوانب میں تعریف کرنے کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ مغربی معاشرہ ایک مثالی معاشرہ ہے، بلکہ یہ وہ اسلامی روایات ہیں جن کو مسلمانوں نے ترک کردیا، اور غیروں نے انہی پر عمل کرکے دنیا میں اپنا لوہا منوا لیا، اور اگر کسی کو مغرب کی اتنی تعریف بھی نہیں بھاتی تو وضاحت کے کے لیے عرض ہے کہ مغربی ممالک میں حکام کے احتساب، غلطیوں سے سیکھنے اور پلٹنے کے بعد جلد جھپٹنے کی تعریف حضرت عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ نے بھی کی ہے۔ مسئلہ یہ ہے کہ مغربی معاشرہ اپنے حقوق کے حوالے سے اقدامات اٹھانے میں انتہائی مستحکم اور باشعور ہے، اس کے برعکس اسلامی دنیا میں استخرابی قوتوں کے پڑاؤ اور قبضہ سے ذہنوں پر کمتری، بےحسی اور لاپرواہی کا جو گند جمع ہوا تھا، وہ مقبوضہ افواج کے جانے کے بعد بھی صاف نہیں ہوسکا. صرف یہی نہیں بلکہ اس قبیح عمل میں خود غرضی کا عنصر بھی شامل ہے، جس کا نتیجہ یہ ہے کہ ہمارے معاشرہ میں ہر شخص نے اپنی ڈیڑھ اینٹ کی مسجد بنا رکھی ہے، اپنےذاتی نظریات و خیالات اور مفادات کے حصار میں جب تک ہر شخص کی ڈیڑھ اینٹ کی مسجد کو خطرہ نہیں ہوتا، اس کو باہر کی زندگی گندی سیاست، لہو لعب اور بےفائدہ نظر آتی ہے، جبکہ حقیقت یہ ہے کہ ہر آدمی کو (فطری تقاضوں کے تحت) اپنے ذاتی اغراض اور مفادات کا تحفظ کا سب سے آسان طریقہ یہی نظر آتا ہےکہ اپنی ڈیڑھ اینٹ کی مسجد میں تنہائی اختیار کرلے۔\n\nاس خود غرضی کی انتہا ایک طرف، مزید ستم ظریفی یہ کہ اس نظریہ پر عمل کرنے والے بڑے فخر سے اپنے آپ کو غیرسیاسی بھی کہتے ہیں، حالانکہ اس زمانہ میں غیر سیاسی ہونا جرم ہے، اور یہی سیاست سے دوری ہے جس کی وجہ سے ہمارے اوپر آج زیادتی پر زیادتی ہوتی ہے. ہمارا مال لوٹا جاتا ہے، ہمارا حق چھینا جاتا ہے، ہمارے اوپر ظلم ہوتا ہے، اور ہم خود کو عقل کل سمجھ کر یہ کہتے ہیں کہ جی ہمارے حکمران اور حالات ہمارے اعمال کا نتیجہ ہے۔ یقینا ہمارے اعمال کا نتیجہ ہے لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ برے حالات اور بےایمان حکام پر صرف صبر سے کام لیا جائے، کیونکہ اگرمصیبت کا حل صبر ہی ہے ، تو بیماری پر (جو کہ ایک مصیبت ہےاور یقینا مریض کے اعمال کا نتیجہ ہے) مریض کو علاج کے بجائے صبر و تحمل سے برداشت کرنا چاہیے، لیکن ایسا نہیں ہوتا، کیونکہ مسئلہ مفادات کا ہے. ظلم کے خلاف بولنے سے مفادات کو نقصان پہنچنے کا خوف ہمیں زبان کھولنے سے روک دیتا ہے، اور خوف کی غلامی بڑے بڑوں کی عقل کو اندھا کردیتی ہے۔\n\nدوسرا یہ کہ جن بداعمالیوں کے سبب ہمارے اوپر برے حالات مسلط ہے، ان میں سرفہرست ظالم کو ظلم سے نہ روکنا ہے، اسی کو قرآن نے بنی اسرائیل کی تباہی کا سبب بتایا ہے اور رسول اللہ نے بھی ظالم کو حق کی طرف کھینچ کر نہ لانے کوعذاب خداوندی کا سبب بتلایا ہے، لہذا موجودہ حالات کو بداعمالیوں کا نتیجہ ثابت کر کے ہم ہرگز بری الذمہ نہیں ہوتے، بلکہ ہمارے اوپر واجب ہوجاتا ہے کہ ہم ضعیف، مظلوم اور لاچار کے ساتھ کھڑے ہوکر وقت کے فرعونوں کو للکاریں، جس طرح حضرت موسی نے فرعون کوللکارا تھا، اور جس طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اعرابی کو ابوجہل سے حق دلوایا تھا، اور جس طرح صحابہ کی تربیت ہوئی تھی کہ ایک عام آدمی کو بھی امیرالمؤمنین کے بدن پر دو کپڑے منظور نہیں تھے کیونکہ ہر کسی کے نصیب میں ایک کپڑا آیا تھا. یہ ہمارے اسلاف کی غیرت تھی کہ ایک کپڑے کی زیادتی ان کو منظور نہیں تھی، اور ہم اربوں کھربوں کے ڈاکے انتہائی فراخ دلی سے قبول کرلیتے ہیں، یہی وجہ ہے کہ اس وقت ہم دنیا پر حکومت کرتے تھے اور آج دنیا ہمارے اوپر تصرف کرتی ہے.\n\nآج حقوق کی آواز مفادات اور ذاتی اغراض کے درمیان گھر چکی ہے، مظلوم کو بھی یقین نہیں آتا کہ اس کی آواز میں جان ڈالنے والے واقعی ہمدرد ہیں یا وہ مظلوم کی آواز کو اپنے مقاصد کے لیے استعمال کر رہے ہیں. اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ مظلوم خود نا انصافی کے خلاف کھڑا نہیں ہوتا، اس کو کسی مضبوط ہاتھ کی ضرورت ہوتی ہے، ایسے صورت میں ظالم مظلوم کی مدد کے لیے بڑھنے والے ہر ہاتھ کو الزامات کا نشانہ بناتا ہے تاکہ مظلوم کبھی کھڑے ہونے کے قابل ہی نہیں ہو. اس صورت میں کسی اور کو نہیں خود مظلوم کو ذمہ دار ٹھہرایا جائے گا، جس کے پاس نہ خود آواز اٹھانے کی طاقت ہے نہ اپنے ہمدرد و دشمن میں فرق کرنے کی عقلی صلاحیت. ایسے نادان کی طرف بڑھنے والا ہر ہاتھ اس کے لیے رحمت سے کم نہیں، اس کے بعد بھی اگر وہ چوں چراں کرے تو یہی کہا جاسکتا ہے کہ وہ ایسے ذہنی خبط میں مبتلا ہے جس کا علاج قدرت متواتر آفات اور مصیبتوں سے کرتی ہے۔

Comments

اسامہ الطاف

اسامہ الطاف

کراچی سے تعلق رکھنے والے اسامہ الطاف جدہ میں مقیم ہیں اور کنگ عبد العزیز یونیورسٹی کے طالب علم ہیں۔ سعودی عرب اور پاکستان کے اخبارات و جرائد میں لکھتے رہتے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.