مگر پڑھایا کیا جا رہا ہے ؟-وسعت اللہ خان

557857-WusatullahNEWNEW-1468605895-811-640x480\n\nپاکستانی پارلیمنٹ کے ایوانِ بالا سینیٹ کے زیرِ اہتمام ظفر اللہ خان کے مرتب کردہ بنیادی حقوق کے کتابچے کے مطابق اب سے ایک سو چار برس پہلے یعنی انیس سو بارہ میں انڈین لیجسلیٹو کونسل میں گوپال کرشن گھوکھلے نے تمام ہندوستانیوں کے لیے لازمی پرائمری ایجوکیشن کا بل پیش کیا۔کونسل کے ایک آنر ایبل ممبر محمد علی جناح نے اس بل کی مکمل حمایت کرتے ہوئے اپنے خطاب میں کہا کہ کئی لوگ کہتے ہیں کہ تعلیم عام ہوگئی تو لوگ باشعور ہو جائیں گے اور مزید حقوق مانگیں گے۔تو کیا آپ اس خدشے کے سبب کروڑوں لوگوں کو اپنے جوتے تلے رکھنا چاہتے ہیں۔\n\nکیا آپ انھیں محض اس لیے جہالت اور تاریکی میں رکھنا چاہتے ہیں کہ کہیں وہ ایک دن آپ کے مدِ مقابل کھڑے ہو کر وہی حقوق نہ مانگ لیں جو آپ کو حاصل ہیں۔جناح صاحب نے پرائمری تعلیم کے بل کی حمایت کرتے کرتے ایک کمال کی پیش گوئی کی۔یعنی ’’ ہمیں پختہ یقین ہے کہ لازمی تعلیم کا اصول مانے بغیر عوام کے لیے کوئی راہِ نجات ممکن نہیں۔تاہم تمام بچوں کو اسکول بھیجنے میں پونے دو سو سال لگیں گے ( یعنی دو ہزار ستاسی تک )۔\n\nجناح صاحب نے جو پیش گوئی انیس سو بارہ میں کی۔آج دو ہزار سولہ میں جاری یونیسکو گلوبل ایجوکیشن مانیٹرنگ رپورٹ میں جناح صاحب کی پیش گوئی ( دو ہزار ستاسی ) کو بالکل قریب سے چھوتے ہوئے کہا گیا ہے کہ امکان یہ ہے کہ پاکستان میں دو ہزار اکیاون تک ہی سو فیصد بچے اسکول جا پائیں گے۔جناح صاحب نے اسی تقریر میں یہ بھی کہا تھا کہ تمام بچیاں اسکول جا سکیں اس کے لیے کم ازکم چھ سو برس ( پچیس سو بارہ ) درکار ہیں۔\n\nپاکستان میں فروغِ تعلیم کے تمام تر اعشاریے اور پچھلے ستر برس کی پیش رفت بتا رہی ہے کہ یہ قوم جناح صاحب کے کسی اور فرمان پر عمل کرے نہ کرے یونیورسل ایجوکیشن کے بارے میں جناح صاحب کی دونوں پیش گوئیاں سچ ثابت کرنے کے لیے عملاً کمر بستہ ہے۔\n\nپاکستان میں ہر سال دو مہمات بہت جوش و خروش سے چلائی جاتی ہیں۔ایک شجرکاری کی باتصویر مہم جس میں ہر سال دعویٰ کیا جاتا ہے کہ اتنے لاکھ درخت لگائے گئے اور اگلے برس پھر اتنے ہی لاکھ درخت لگائے جاتے ہیں۔اگر اب تک کی تمام سالانہ شجر کاری مہمات کو جمع کر کے ان پر یقین کر لیا جائے تو اس اعتبار سے آج پاکستان کا ایک انچ بھی بنجر دکھائی نہیں دینا چاہیے۔مگر حالت یہ ہے کہ ہر شجر کاری مہم کے ساتھ جنگلاتی رقبہ ہر برس پہلے سے زیادہ کم ہوتا جا رہا ہے۔عالمی پیمانے کے اعتبار سے آئیڈیل صورتِ حال تو یہ ہے کہ کسی بھی ملک کا بیس تا پچیس فیصد رقبہ جنگلات پر مشتمل ہونا چاہیے مگر اس وقت پاکستان میں لگ بھگ چار فیصد سے بھی کم رقبے پر جنگلات باقی بچے ہیں۔\n\nدوسری مہم ہے پہلی تا پانچویں جماعت کی پرائمری تعلیم میں بچوں کی انرولمنٹ مہم۔شجرکاری کی طرح بچوں کے داخلے کی سالانہ مہم بھی بہت جوش سے چلتی ہے۔ اگر سرکاری و ادارتی دعووں پر یقین کر کے تمام اگلے پچھلے انرولمنٹس پر یقین کر لیا جائے تو اس وقت پاکستان میں ابتدائی خواندگی سویڈن کے برابر ہونی چاہیے۔مگر ایسا ہے تو نہیں۔\n\nتعلیمی پسماندگی برقرار رکھنے میں جہاں سرکاری پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ کی کوتاہیاں ہیں وہیں کچھ بابا آدم کے زمانے سے چلے آ رہے تصورات بھی ہیں مثلاً یہی کہ والدین غربت یا دیگر نامساعد حالات کے سبب اپنے بچوں کو بنیادی تعلیم دلانے میں دلچسپی نہیں رکھتے اور ان کی سوچ یہی ہے کہ اسکول میں وقت ضایع کرنے سے بہتر ہے کہ بچہ کسی مستری کے پاس بٹھا دیا جائے یا چائے کے ہوٹل پر کام کرکے کچھ پیسے کما لے۔\n\nممکن ہے ایسا ہی ہو لیکن اسے میڈیا کا دباؤ کہہ لیں یا آس پاس کے بدلتے ماحول کا اثر کہ ان پڑھ والدین کی ایک بڑی تعداد بھی آج یہ چاہتی ہے کہ ان کے بچے کچھ نہ کچھ پڑھ لکھ جائیں۔اس کے لیے وہ اپنا پیٹ کاٹنے پر بھی تیار ہیں۔مگر شہری علاقوں میں بالخصوص ایسے والدین کے سامنے سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ اسکول کم ہیں اور داخلے کے خواہش مند بچے زیادہ۔یعنی شہری نجی و سرکاری تعلیمی نظام  میں مسئلہ انرولمنٹ سے زیادہ گنجائش یا تعلیم کے پیاسے والدین کے بچوں کی بڑھتی تعداد جذب کرنے کی صلاحیت کا ہے۔\n\nاس سے بھی زیادہ سنگین سوال یہ ہے کہ جن بچوں کا انرولمنٹ ہو چکا ہے انھیں تعلیم کے نام پر کیا مل رہا ہے ؟ گذشتہ ہفتے میں نے بلوچستان اور سندھ میں تعلیم کی زبوں حالی کا رونا رویا۔مگر معیاری تعلیم ان علاقوں میں بھی عنقا ہے جہاں بظاہر انرولمنٹ سب سے زیادہ ہے۔مثلاً خیبر پختون خواہ کی موجودہ حکومت کا دعویٰ ہے کہ اس کی تین ترجیحات ہیں۔پولیس کا نظام بہتر ہو اور اس کے بعد صحت و تعلیم کا نظام بہتر ہو۔اگر دیکھا جائے تو گذشتہ ادوار کی نسبت خیبر پختون خواہ میں تینوں شعبوں میں بہتری آئی ہے۔صوبائی حکومت نے اسکولوں کی کارکردگی جانچنے کے لیے انڈی پینڈنٹ مانیٹرنگ یونٹ بھی قائم کیے ہیں۔مگر مشکل یہ ہے کہ یہ یونٹ ضلعی محکمہ تعلیم کو جوابدہ ہیں۔ان کی رپورٹوں اور تجاویز پر عمل لازمی نہیں اختیاری ہے۔مزید براں ان رپورٹوں میں معیار کی بہتری کے لیے جو تجاویز دی جاتی ہیں وہ کون کہاں اور کب استعمال کرے گا یہ بھی طے نہیں۔\n\nاس لیے ہم دیکھتے ہیں کہ بلوچستان اور سندھ کے مقابلے میں خیبر پختون خواہ میں معیارِ تعلیم بس اتنا بہتر ہوا ہے کہ اگر سندھ میں پانچویں کلاس کے چھہتر فیصد بچے انگریزی کا ایک جملہ بھی درست نہیں لکھ سکتے تو خیبر پختون خواہ میں اٹھاون فیصد بچے انگریزی کا ایک جملہ درست نہیں لکھ سکتے۔اگر سندھ میں پینسٹھ فیصد بچے دو اعداد کو تقسیم نہیں کرسکتے تو خیبر پختون خواہ میں بنیادی ریاضی سے نابلد بچوں کی تعداد ساٹھ فیصد ہے۔اگر سندھ میں پانچویں کلاس کے پچپن فیصد بچے اردو یا سندھی کی ایک چھوٹی سی کہانی کی مکمل ریڈنگ نہیں کر سکتے تو خیبر پختون خواہ میں باسٹھ فیصد بچے اردو یا پشتو کی ایک سادہ سی کہانی پوری نہیں پڑھ سکتے۔جب کہ سیکنڈری کلاسوں کی تعلیمی کوالٹی کا معاملہ کچھ یوں ہے کہ بورڈ آف سیکنڈری اینڈ انٹر میڈیٹ ایجوکیشن مردان کے تحت اس بار جتنے بچوں نے میٹرک کا امتحان دیا۔ان میں سے بہتر فیصد فیل ہو گئے۔\n\nاور پاکستان میں جو طلبا ان تمام رکاوٹوں کو عبور  کرتے ہوئے ہائر سیکنڈری ، گریجویشن یا پوسٹ گریجویشن کی منازل طے کرنے کامیاب ہو چکے ہیں ان کی اکثریت تجزیہ و تنقید کی صلاحیت تو رہی ایک طرف ،اپنی طرف سے ایک مناسب سوال اٹھانے یا ٹیچر کو عقلی انداز میں چیلنج کرنے یا جوابی دلیل پیش کرنے سے بھی عاری ہے۔اس منطقی مفلوجیت کا ایک بنیادی سبب ماہرِ تعلیم پرویز ہود بھائی کے بقول یہ ہے کہ میٹرک سے گریجویشن تک نقل سے پاس ہونے کے رجحان کا تناسب چالیس فیصد کے لگ بھگ ہے۔اور یہ تو آپ جانتے ہی ہیں کہ نقل اور عقل ایک میان میں نہیں رھ سکتے۔\n\nان حالات میں یہ حوصلہ پاکستان کے ہائر ایجوکیشن کمیشن کے پاس ہی ہے کہ اس نے اگلے دس برس کے دوران چائنا پاکستان اکنامک کاریڈور کی طرز پر پاک یو ایس نالج کاریڈور قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔جس کے تحت ہر سال ایک ہزار طلبا زراعت ، فوڈ سیکیورٹی ، ہیلتھ سائنسز ، توانائی، واٹر ٹیکنالوجی، انوائرنمنٹل سائنسز اور ڈجیٹل ٹیکنالوجی کے شعبوں میں پی ایچ ڈی کے لیے بھیجے جائیں گے۔خدا ہائر ایجوکیشن کمیشن کو اپنے ارادوں میں کامیاب کرے (آمین)۔