سنو اے حرم کے مسافرو! حیا حریم

قافلوں کے قافلے حرم میں موجود ہیں، نظروں میں صحن ِحرم اور ہجومِ عاشقاں ہے، لبیک اللھم لبیک کی صدائیں بلند کرتا ہوا ایک مجمع جو دیوانہ وار بیت العتیق کے گرد چکر لگا رہا ہے، حجرِاسود کو بوسے دیتے ہوئے، غلافِ کعبہ تھامے، روتے گڑگڑاتے، آہوں، سسکیوں میں مچلتے خوش نصیب انسان، کوئی مانگ رہا ہے، کوئی تڑپ رہا ہے، کوئی خاموش نظروں ہی میں حالِ دل سنا رہا ہے۔\n\nحج اختتام کو پہنچا ہے، لوگ طواف وداع کر رہے ہیں، دل کی عجب سی کیفیت ہے، کبھی ملتزم پر دستک دیتی آہیں سنائیں دیتی ہیں، کبھی مطاف میں کشاں کشاں کھنچا ہجوم تخیل میں آتا ہے، زمزم سے سیرابی کے لیے تشنہ لبوں کی طویل قطاریں، اور منی و مزدلفہ میں وارفتگی کا اک عالم، دل ِ بےچین کو مزید مضطرب کر دیتا ہے، \nعتیق و جانِ جاناں ہے منور نورِ تاباں ہے \nتجلی گاہ رب کی ہے عجب اس کا نظارا ہے \nوہ دیکھو گھومتے پھرتے ہیں عشاق مثل ِ پروانہ \nخدا کے عشق نے ان کو سب عالم سے نکھارا ہے\n\nہجومِ عاشقاں اور وارفتگی شوق کے مناظرکوئی آج سے نہیں، یہ دریا تو صدیوں سے بہہ رہا ہے، جب ذرائع نقل و حمل اور اس قدر وسائل نہ تھے، جب بھی عاشق لمبی مسافتیں طے کر کے کٹھن مراحل عبور کر کے پیادہ وسوار، ہفتوں اور مہینوں کا سفر کرکے شوقِ محبت کو جلا بخشتے تھے، بادبانی کشتیوں اور بحری جہازوں کے ہچکولے کھاتے ہوئے، اہل ِایماں افتاں و خیزاں پہنچ ہی جایا کرتے تھے، کئی تو اس راہ میں قبول ہوجایا کرتے تو وصالِ یار کی تکمیل ہوجاتی، آج بھی وہ عشق و وارفتگی برقرار ہے اور تاقیامت رہے گی۔\n\nحرمین کے مسافروں کا شوق اور والہانہ وعارفانہ محبت وہ انداز و ادا ہے جو دل کے نہاں خانوں کو سرور سے بھر دیتا ہے، مجھے رہ رہ کر مولانا گیلانی رحمہ اللہ کا وہ سفرنامہ یاد آ رہا ہے جو انہوں نے حرمین سے واپسی پر قلم بند فرمایا تھا، اس کی سطر سطر دل میں عشق کی چنگاری بڑھا دیتی ہے اور آنکھوں سے سیلِ عرفاں رواں کردیتی ہے۔ \nمولانا گیلانی اس میں ایک واقعہ ذکر کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ ــ’’ بقیع میں ایک سرخ وسپید مراکشی شخص نے مجھ سے پوچھا کہ کہاں سے ہو ؟ تو فرمایا ــ’’ ہند ‘‘ سے، وہ شخص فورا بولا: ہندوستان میں تو انگریزوں کی حکومت ہے۔ مولانا نے برجستہ کہا : مراکش پر بھی تو قونس قابض ہے۔ یہ سنتے ہی مراکشی نوجوان مولانا سے لپٹ گیا اور قبہ خضراء کی طرف اشارہ کرتے ہوئے چیخ چیخ کر کہنے لگا : یارسول اللہ !! ان امتک فی اسر، فی اسر النصاری ( یارسول اللہ ! آپ کی امت تو قید و بند میں ہے، نصاری کے قید و بند میں) دونوں روتے رہے اور دیر تک روتے رہے۔\n\nسوچتی ہوں کہ آج وہ مراکشی نوجوان ہوتا تو رسول اللہ ﷺ کو بتاتا : یارسول اللہ! آپ کی امت کا ہر گوشہ قید و بند میں ہے، ہر پہلو سسک رہا ہے، شام کے بچے نوچے ہوئے پھولوں کی پتیوں کی مانند بکھرے ہیں، فلسطین میں خون آشام درندے ہیں، کشمیر لہو رنگ ہے، رسول اللہ کی پیاری امت شرق سے غرب اور شمال سے جنوب تک یہود و ہنود کے نرغے میں ہے۔ ہر روز اک نئی داستانِ ظلم رقم ہوتی ہے ۔ وہ انہیں بتاتا کہ \nحضور ! دہر میں آسودگی نہیں ملتی \nتلاش جس کی ہے وہ زندگی نہیں ملتی \nہزاروں لالہ وگل ہیں ریاضِ ہستی میں \nوفا کی ہو جس میں بو وہ کلی نہیں ملتی\n\nسنو اے حرمین کے مسافرو! اے منزل ِ شوق کے راہیو! اب یہ کام تم ہی کردینا، رسول اللہ کو بتانا جا کر کہ آپ کی امت بکھری پڑی ہے، ہاں انہیں بتانا کہ امت جل رہی ہے، تڑپ رہی ہے، شاید کہ وہاں سے کوئی جھونکا بادِ صبا کا ایسا آجائے کہ دہکتے الائو کی چنگاریاں مدھم ہوں اور یہ آگ بجھ جائے۔

Comments

حیا حریم

حیا حریم

حیا حریم ماہنامہ حیا کراچی کی مدیرہ ہیں۔ علوم فقه میں تخصص کے بعد اب علوم قرآن میں ایم فل کر رہی ہیں۔ آن لائن تعلیم و تربیت اکیڈمی برائے قرآن و علوم عربیہ کی انچارج ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com