کیا کراچی کو فرض شناس میئر مل گیا؟ - ثقلین مشتاق

ثقلین مشتاق سندھ بھر میں دسمبر 2015ء میں بلدیاتی انتخابات ہوئے۔ عوام نے انتخابات میں بڑے جوش وخروش سے حصہ لیا جس کی وجہ یہ بھی ہے کہ لوگ اپنے مسائل کے حل کے لیے ان نمائندوں تک رسائی مجلس شوریٰ کے ممبرز کی نسبت زیادہ آسانی سے حاصل کر سکتے ہیں۔ خدا خدا کرکے بلدیاتی انتخابات تو ہوگئے، لیکن پیپلزپارٹی نہیں چاہتی تھی کہ کراچی سمیت سندھ بھر میں میئر، ڈپٹی میئر اور ڈسرکٹ چیئرمین کے انتخابات کروا کے اختیارات اُن کے حوالے کیے جاٖئیں کیونکہ اگر اختیارات اور فنڈز پیپلزپارٹی نمائندوں کے حوالے کردیتی تو پھر سندھ کی اشرافیہ کے سوئس بنک بھرنے کے لیے ڈالر کدھر سے آتے؟ سرئےمحل کی طرز کے نئے محل کیسے بناتے؟\n\nپہلے کی طرح اس بار پھر پیپلزپارٹی کو سپریم کورٹ کے سامنےگھٹنے ٹیکنے پڑے۔ بالاآخر 24 اگست 2016ء کو زرداری کی پارٹی کو کڑوی گولی کھانا پڑی اور سندھ بھر میں میئر اور ڈپٹی میئر کے انتخابات ہوئے اور کراچی سے الطاف حسین کے دست راست وسیم اختر میئر منتخب ہوئے۔ وسیم اختر نے تمام امور کو ایماندارٖی سے غیرجانبدار ہوکر پاکستان کے قوانین کے تحت ادا کرنے اور اس ملک کے آئین اور اس کی بقا کے تحفظ کا حلف لیا۔ موصوف نے پہلے بھی مشرف دور میں اہم وزارت کا حلف لیا تھا اور اس حلف کی پاسداری کرتے ہوئے 12مئی کو مہاجر مائوں سے اُن لخت جگر، بہنوں سے بھائی، نوجوان لڑکیوں سے اُن کے سہاگ اور معصوم بچوں کے سر سے باپ کا سائے چھین کر، 60 نہتے شہریوں کو موت کی نیند سلا دیا گیا تھا.\n\nکراچی کی عوام سوچ رہی تھی کہ ہمارا میئر ہماری امنگوں کی ترجمانی کرتے ہوئے اس شہر کی روشنیں واپس لانے، پانی، کوڑا کرکٹ اور نکاسی آب جیسے مسائل کے حل اور شہر میں لگی دہشت گردی کی آگ کو بجھانے کے لیے کوئی ٹھوس اقدامات کرے گا۔ شاید کراچی کی عوام بھول گئی تھی کہ وہ شخص ان کی امنگوں کی ترجمانی کیا کرے گا؟ جو اُس لشکر کا حصہ تھا جس نے الطاف کے حکم پر بلدیہ فیکٹری میں اُس طبقے کے 300 افراد کو زندہ جلا دیا تھا جن کے گھر میں دو وقت کی روٹی کے لیے آٹا نہیں ہوتا ۔ جن کے بچے سکول جانے کے بجائے محض ایک سو روپے کے لیے ہوٹلوں پر برتن دھوتے ہیں جن کی بچیاں پیسے نہ ہونے کی وجہ سے کنواری مرجاتی ہیں، جن کو خوشی کے تہوار پر پہنے کےلیے بھی نئے کپڑے میسر نہیں آتے۔\n\nویسے پاکستانی قوم کی یادداشت کمزور ہے لیکن کراچی والوں کی ذرا زیادہ ہی کمزور ہے جو یہ بھول بیٹھے کہ ایسا شخص اور پارٹی جو خود مسائل کی وجہ ہیں، انھیں کیسے حل کریں گے، اور اس شہر کی روشنیاں کیسے واپس آئیں گی؟\nلیے جو پھرتے ہیں تمغہ فن، رہے جو ہم خیال رہزن\nہماری آزادیوں کے دشمن ہماری کیا رہبری کریں گے

Comments

محمد ثقلین مشتاق

محمد ثقلین مشتاق

محمد ثقلین مشتاق نیشنل یونیورسٹی آف سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی (نسٹ) اسلام آباد سے کیمیکل انجنیئرنگ کررہے ہیں. لکھنے پڑھنے کا شغف ہے، دلیل کے ذریعے اپنے خیالات قارئین تک پہنچاتے ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
/* ]]> */