مسلمانان ہند کو آزادی کیسے حاصل ہوئی، لرزہ خیز داستان - محمد عبداللہ

محمد عبداللہ آج چودہ اگست ہے. پورے پاکستان میں تقریبات، جلوس، ریلیاں اور پروگرامز منعقد کیے جارہے ہیں. ہر طرف لہراتے پاکستانی پرچم اور پورے ملک کی فضاؤں میں گونجتے ملی نغمے بہت ہی خوش کن احساس دلوں میں پیدا کررہے ہیں. نوجوانوں کے قافلوں کے قافلے آزادی کی خوشیاں مناتے ہوئے موٹر سائیکلوں کے سائلنسر نکال کر سیٹیاں بجاتے اور پاکستانی پرچم لہراتے شہروں میں گھوم رہے ہیں. ہر طرف ایک دلفریب خوشی اور جوش و خروش کا عالم ہے. ان ہی ہنگاموں میں مست شاید بہت تھوڑے لوگ ہوں گے جو جانتے ہوں کہ یہ آزادی کیا تھی اور 14 اگست 1947ء برصغیر پاک و ہند کے ان مسلمانوں کے لیے خوشیوں کے کتنے در وا کرگیا تھا جو سالہا سال سے انگریزوں اور ہندؤوں کے پنجہ استبداد میں جکڑے ہوئے تھے.\n\n1857ء کی جنگ آزادی کے بعد سے تو مسلمانوں کی زندگی اجیرن بنا کر رکھ دی گئی تھی. ان پر تعلیم اور ملازمتوں کے دروازے مکمل طور پر بند کر دیے گئے تھے. انگریز کی ماتحتی میں ہر طرف ہندوؤں کی اجارہ داری تھی. ایسے میں وقتا فوقتا فسادات کو بڑھکا کر مسلمانوں کا قتل عام بھی کیا جاتا تھا. برصغیر کے مسلمانوں پر وہ دن بہت ہی کڑے تھے. ہر طرف خوف اور سراسیمگی چھائی تھی اور مسلمان بے چارے اپنے مستقبل کے بارے میں سخت مایوس تھے. ان حالات میں قدرت کو مسلمانوں کی اس حالت زار پر رحم آیا اور ان کو ایسی بیدار مغز قیادت میسر آئی جس نے بکھری مسلمان قوم کو ایک لڑی میں پرو کر ان کو قعر مذلت سے نکال کر اوج ثریا پر فائز کرانے میں بڑا کردار ادا کیا. ان میں سرفہرست سرسید احمد خان کی علی گڑھ تحریک نے مسلمانوں کو تعلیم کے زیور سے آشنا کر کے فہم و فراست اور شعور عطا کیا، مولانا محمد علی جوہر کی تحریک خلافت نے ان کو سیاسی طور پر منظم کیا. جنگ عظیم اول میں مسلمانوں کے مقامات مقدسہ کے تحفظ کی خاطر اٹھنے والی اس تحریک نے پورے برصغیر کے مسلمانوں کو ایک لڑی میں پرو دیا اور آئندہ کھڑی ہونے والی سبھی تحاریک کا پیش خیمہ ثابت ہوئی. اسی طرح مولانا فضل الہی وزیر آبادی کی تحریک جماعت المجاہدین نے برصغیر کے مسلمانوں کے دلوں میں جذبہ حریت اور اپنے مقاصد کی تکمیل کی خاطر جزبہ جہاد سے سرشار کردیا. انہی واقعات کے دوران جب مسلمانوں نے دیکھا کہ برصغیر میں سیاسی مقاصد کے لیے قائم جماعت\nکانگرس تو صرف ہندوؤں کے مفادات کا تحفظ کرتی ہے اور وہ مسلمانوں کے مفادات سے صرف نظر کرتی ہے تو مسلمانوں نے اپنی ایک علیحدہ جماعت مسلم لیگ کے نام سے قائم کی اور یہ نعرہ دیا کہ مسلم ہے تو مسلم لیگ میں آ. سات سال کے بعد برصغیر کے سرکردہ لیڈر محمد علی جناح ہندوؤں کے تعصب اور کانگرس کے دہرے معیار کی وجہ سے کانگرس کو چھوڑ کر مسلم لیگ میں شامل ہوگئے تو اس سے تحریک آزادی کو ایک نئی جہت ملی.\n\nمسلم لیگ نے دو قومی نظریہ کی بنیاد پر مسلمانوں کے مفادات کے تحفظ کا بیڑہ اٹھایا. اور پورے برصغیر کے مسلمانوں کو اپنے جھنڈے تلے مجتمع کرکے بھرپور تحریک چلائی جو بالآخر انگریزوں اور ہندوؤں سے آزادی کے نعرے اور مطالبے پر منتج ہوئی. اس میں بہت بڑا کردار شاعر مشرق علامہ محمد اقبال کا بھی تھا جنہوں نے اپنی شاعری سے برصغیر پاک و ہند کے مسلمانوں کو خواب غفلت سے جگا کر ان کے دلوں کو اک ولولہ تازہ دیا. 1930ء میں الہ آباد کے جلسے میں علامہ اقبال نے اپنے صدارتی خطبے میں مسلمانوں کے لیے برصغیر کے اندر ایک علیحدہ وطن کا تصور دیا. انہوں نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ برصغیر میں جہاں جہاں مسلمان اکثریت کے ساتھ آباد ان علاقوں کو ملا کر ایک علیحدہ ملک بنا دیا جائے. اس تصور کا ملنا تھا کہ مسلمانوں کو ان کی منزل نظر آنے لگی اور انہوں نے اس منزل کو حاصل کرنے کی خاطر سر دھڑ کی بازی لگادی. 1935ء میں چودھری رحمت علی نے اس تصور کو پاکستان کا نام دے دیا. پھر تو ہر بچے، ہر برے بوڑھے اور ہر مرد و زن کی زبان پر ایک ہی نعرہ تھا. بٹ کر رہے گا ہندوستان لے کر رہیں گے پاکستان. یہ تحریک آزادی پاکستان کے عروج کا وقت تھا.\n\nسارے برصغیر کے مسلمانوں کی زبان پر صرف پاکستان کا نعرہ اور مطالبہ تھا. اس پر مستزاد یہ کہ 23 مارچ 1940ء کا وہ دن آن پہنچا کہ جس دن لاہور کی فضائیں جوشیلے نعروں سےگونج رہیں تھیں. اور لاہور کے منٹو پارک میں تل دھرنے کو بھی جگہ نہیں تھی. لاکھوں فرزندان توحید اپنے قائد کی پکار پر لبیک کہتے ہوئے لاہور میں جمع ہوئے تھے سب کی زبانوں پر اصغر سودائی کا دیا ہوا نعرہ تھا پاکستان کا مطلب کیا لا الہ الا اللہ. تلواروں کے پہرے میں محمد علی جناح کو سٹیج پر لایا گیا. علامہ اقبال کے خواب کو عملی جامہ پہناتے ہوئے شیر بنگال مولوی فضل الحق نے قرارداد پیش کی اور لا الہ الا اللہ کی بنیاد پر ایک علیحدہ وطن پاکستان کا مطالبہ کیا. ہندو پریس نے طنزیہ طور پر اس قرارداد لاہور کو قرارداد پاکستان کا نام دیا. مگر بعد کے حالات نے یہ بات ثابت کر دی کہ واقعی یہ قرارداد پاکستان ہی تھی اور یہی پاکستان کے قیام کا پیش خیمہ ثابت ہوئی. اس قرارداد کا منظور ہونا تھا کہ ہندوؤں میں صف ماتم بچھ گئی ان کو اپنے خواب اکھنڈ بھارت کے ٹکڑے ٹکڑے نظر آنے لگے. کیونکہ وہ تو آس لگائے بیٹھے تھے کہ جب انگریز یہاں سے چلے جائیں گے تو ہم بلا شرکت غیرے برصغیر کے مالک ہوں گے. اس لیے انہوں مسلمانوں کو پاکستان سے باز رکھنے کے لیے پہلے تو لالچ دیے مگر پھر دھمکیوں پر اتر آئے اور ان دھمکیوں کو عملی جامہ پہناتے ہوئے برصغیر کے مختلف شہروں میں فسادات کی آگ بڑھکا کر ہزاروں مسلمانوں کو شہید کردیا گیا. مگر یہ مظالم مسلمانوں کو ان کے رستے سے ہٹا نہ سکے وہ مسلسل آزدی کی تحریک کو آگے بڑھاتے چلے گئے.\n\n1941ء کا واقعہ ہے کہ قائداعظم محمد علی جناح مدراس میں جلسہ کرکے واپس آرہے تھے کہ ایک گاؤں میں لوگ ان کے استقبال کے لیے کھڑے تھے اور نعرے لگا رہے تھے. ان میں ایک چھوٹا سا بچہ بھی تھا جو بڑی معصومیت سے پاکستان کا مطلب کیا لا الہ الا اللہ کے نعرے لگا رہا تھا. قائداعظم نے جب اس بچے کو دیکھا تو اس کو اپنے پاس بلایا اور اس کو پوچھا بیٹا پاکستان کا مطلب جانتے ہو تو وہ کہنے لگا کہ پاکستان کا مطلب تو آپ لوگ جانتے ہوں گے، مجھے تو اتنا پتا ہے کہ جہاں پر مسلمان آباد ہیں وہ پاکستان ہوگا. قائد نے اس کا جواب سن کر اپنے ساتھ موجود پریس والوں کو کہا کہ گاندھی اور نہرو کو جا کر بتا دو کہ تم پاکستان کا مطلب نہیں سمجھتے مگر مسلمانوں کا بچہ بچہ پاکستان کا مطلب سمجھتا ہے.\n\nقائداعظم سے اکثر پوچھا جاتا کہ آپ کیوں اس ملک کو تقسیم کرکے ایک علیحدہ ملک لینا چاہتے ہیں تو وہ جواب دیتے کہ ہم کوئی زمین کا ٹکڑا نہیں چاہتے بلکہ ہم تو ایک ایسی تجربہ گاہ چاہتے ہیں جہاں پر ہم اسلام پر آزادی سے عمل پیرا ہوسکیں. وہ اکثر فرمایا کرتے تھے کہ قومیت کی جو بھی تعریف کی جائے اس کی رو سے مسلمان اور ہندو دو علیحدہ قومیں ہیں اور یہ کبھی بھی اکٹھے نہیں رہ سکتے. ان کا فرمانا تھا کہ دو قومی نظریہ تو اس دن سے معرض وجود می‍ں آگیا تھا جب برصغیر میں پہلا ہندو مسلمان ہوا تھا. یوں مسلمانوں کی عظیم جدوجہد اور قربانیوں کے سامنے انگریزوں اور ہندوؤں کی مشترکہ سازشیں دم توڑ گئیں، اللہ تعالی نے مسلمانوں پر اپنا انعام کیا اور 14 اگست 1947ء کو پاکستان کے قیام کا اعلان ہوا تو ساری مسلمان قوم سجدہ ریز ہوگئی مگر قدرت کو ابھی اس کے مزید امتحان لینے باقی تھے.\n\nجیسے ہی پاکستان کے قیام کا اعلان ہوا، ہندوؤں نے دوسری قوموں کو ساتھ ملا کر اپنے علاقوں میں مسلمانوں کا قتل عام شروع کردیا جس پر 50 لاکھ سے زائد مسلمان اپنا گھربار، کاروبار، جائیداد اور سب کچھ چھوڑ کر بےسروسامانی کی کیفیت میں نکل کر پاکستان کی طرف ہجرت کرنے پر مجبور ہوئے. یہ تاریخ کی سب سے بڑی ہجرت تھی. مگر ہندو بلوائی اس پر بھی خوش نہ ہوئے بلکہ انہوں نے ہجرت کرکے نکلنے والے مسلمانوں کا بھی قتل عام شروع کردیا. مسلمان بہو بیٹیوں کی عزتوں کو ان کے گھر والوں کے سامنے تارتار کیا جاتا. کتنے باپوں نے خود اپنے ہاتھوں سے اپنی جواں سال بیٹیوں کے گلے گھونٹ کر یہ کہا کہ ہم تمہں مرتے ہوئے تو دیکھ سکتے ہیں مگر کسی ہندو کے ہاتھوں سر بازار عزت کی دھجیاں اڑتے نہیں دیکھ سکتے. مسلمانوں عورتوں سے ان کے شیرخوار بچوں کو چھین کر فضا میں اچھالا جاتا، نیچے کرپان کردیتے، بچہ اس پر گرتا تو اس کے ٹکڑے ٹکڑے ہوجاتے اور وہ ٹکڑے اس کی ماں کی طرف پھینک کر کہتے لو پاکستان جا رہی ہو تو پاکستان کے لیے تحفہ لیتی جاؤ. مسلمانوں کے گاؤں کے گاؤں نذر آتش کردیے گئے. مہاجرین کو لے کر آنے والی ٹرینوں کو روک کر ان پر حملہ کیا جاتا اور پوری پوری ٹرین کے مسلمان مسافروں کو قتل کردیا جاتا. الغرض پندرہ لاکھ سے زائد مسلمان اس پاک دھرتی کے نام پر قربان ہوگئے. جب کوئی بچتا ہوا اپنا خاندان تک قربان کرکے پاک سرمین تک پہنچ جاتا تو پاک مٹی پر وہیں سجدہ ریز ہو جاتا اور اپنے سارے دکھوں اور مصیبتوں کو بھول جاتا. لا الہ الا اللہ کی بنیاد\nپر بننے والا دیس ہمیں کوئی پلیٹ میں رکھ کر نہیں ملا بلکہ قربانیوں کی ایک عظیم داستان ہے. شہداء نے اپنے مقدس لہو سے اس وطن کی بنیادوں کی آبیاری کی. اے شہیدو تمہارا یہ احسان ہے کہ آج ہم سر اٹھانے کے قابل ہوئے.\n\n2016ء میں ہندوؤں کے کلچر میں ڈوب کر آزادی کے جشن منانے والو ان لاکھوں شہدا کے لہو اور قربانیوں کو بھی یاد رکھو اور اس مقصد کو بھی یاد رکھو کہ جس کی خاطر یہ پاک وطن قائم ہوا تھا. جس طرح سے لاکھوں قربانیاں دے کر یہ وطن قائم ہوا تھا آج اس وطن کے استحکام کی خاطر پھر سے اسی طرح لا الہ الا اللہ اور نظریہ پاکستان پر جمع ہو کر انتشار و افتراق کو ختم کر کے کہ ایک ہوجائو اور یہ اعلان کرو کہ آج پھر سے ہر سو لہراتے اس سبز ہلالی پرچم کے سائے تلے ہم ایک ہیں، سانجھی اپنی خوشیاں اور غم ایک ہیں.