طنبورے اور تان پورے کا فرق-احمد حاطب صدیقی

Ahmed Hatib Siddiqui\nآج کل Face Book پر ایک سوال چل رہا ہے؛\n’’ جماعت اسلامی کو آئندہ انتخابات میں تنہا لڑنا چاہیے یااتحاد بنانا چاہیے؟‘‘\nہر چند کہ یہ سوال قبل از وقت ہے۔ مگر ہے تو ایک سوال۔تاہم اتحادوں کے متعلق ہماری رائے بھی وہی ہے، جو شاعر کی رائے اپنے محبوب کے متعلق تھی:\nعمر بھر کا سہارا بنو تو بنو، دو گھڑی کا سہارا سہارا نہیں\n\nاتحادبھی فقط آئندہ انتخابات میں کامیابی کے لیے سردھڑ کی بازی لگادینے کو بنتے ہیں۔لہٰذا انتخابات ہونے تو دیجیے۔ اتحاد ضرور بنیں گے اوربننے کے بعد کسی کا سر جائے گا، کسی کا دھڑجائے گا۔ہم خدانخواستہ سیاسی یا انتخابی اتحادوں کے خلاف نہیں ہیں۔بھلا ہمیں خلاف ہونے کی کیا ضرورت ہے؟ بعد کویہ اتحادی خود ہی ایک دوسرے کے خلاف ہوجاتے ہیں۔اور ہمارے یہاں ’اتحادی ساجھے‘ کی صرف ہنڈیا ہی چوراہے پر نہیں پھوٹتی، باہمی سر پھٹول کے باعث اتحادیوں کے سر بھی پھوٹ، پھوٹ پڑتے ہیں۔سو، اگر اِن سروں میں کچھ ہوتاتو اس طرح نہ پھوٹ جاتے جس طرح خالی مٹکے ایک دوسرے سے ٹکرانے کے بعد پھوٹ کر ٹھیکرے ٹھیکرے ہوجاتے ہیں۔ہمارے سیاست دان اگر واقعی ’سیاست دان‘ ہوتے تو آپس میں سر نہ ٹکراتے، اصلاحِ نظامِ انتخاب کے لیے دماغ لڑاتے۔مگر یہ حال فقط ہمارے ہی سیاست دانوں کا نہیں۔ یورپ اور امریکا میں بھی سیاست دان ایسے ہی ہوتے ہیں۔ اگر نہیں ہوتے تو ایسے بنادیے جاتے ہیں۔ مغرب میں چوں کہ ہر چیز اداراتی (Institutionalize) کردی گئی ہے، چناں چہ وہاں سرٹکرانے کا ادارہ الگ ہے اور دماغ لڑانے کا ادارہ الگ۔ سرٹکرانے کے لیے پیشہ ور سیاستدان بنائے گئے ہیں اور دماغ لڑانے کے لیے علم سیاسیات کے ماہرین کے ’تھنک ٹینک‘۔ (اﷲ جانے یہاں اُن کی ’ٹینک‘ سے کیا مراد ہوتی ہے۔واٹر ٹینک؟ یا وار ٹینک؟)گویامغرب جو کچھ کرتا ہے علمی سوچ بچار کرنے کے بعد کرتا ہے۔ بقول جونؔ ایلیا:\n\nاُس نے تو کارِ جہل بھی، بے علما نہیں کیا\n\nیہ ’تھنک ٹینکس‘ اپنی اپنی’تھاٹس‘ کے مطابق جو کچھ کرنے کو کہہ دیتے ہیں، اُن کے’تھاٹ لیس‘ سیاست دان بس وہی کرتے اور وہی کہتے ہیں۔بش ہوں، اوباما ہوں یا اُن کی مخالف سیاسی جماعتوں کے رہنما، اگر اُن کے کسی تھنک ٹینک نے اُن کو’تہذیبی تصادُم‘ کا نظریہ دے دیا اور مسلمانوں کو ’دہشت گرد‘ کہہ دیا،تو سب کے سب یہی ایک بات رٹتے رہیں گے۔ اُس وقت تک، جب تک کہ کسی تھنک ٹینک سے کسی نئی بات کی وحی اُن پر نازل نہ کردی جائے۔ آپ کو یاد ہوگا کہ جب نائن الیون برپا کرنے کے لیے ٹوئن ٹاور سے طیارے ٹکرائے گئے تھے تو چھوٹے بُش میاں چوبیس گھنٹے کے لیے غائب ہوگئے تھے۔یہ تو بعد میں پتا چلا کہ غائب ہو نہیں گئے تھے، غائب کردیے گئے تھے۔ سو، اُن کے ’بازیاب‘ ہونے کے بعد خبر ملی کہ مذکورہ چوبیس گھنٹے اُنھوں نے صدارتی طیارے (یوایس وَن)میں گزارے۔اس دوران میں ’تھنک ٹینکرز‘ اُنھیں ’بریفنگ‘ دیتے رہے کہ اب اس کے بعد انھیں کیا کہنا اور کیا کرنا ہے۔اس حادثے کا الزام کس پر لگا نا ہے اور سزا کس کو دیناہے۔ پھر جو کچھ ہوا وہ سب کچھ آپ کے سامنے ہے۔مگر کوئی بھی امریکی سیاست دان تھنک ٹینک کی ’تھنکنگ‘ سے سرمو انحراف کر سکا نہ اختلاف۔ مسلمانوں کے خلاف سب کے سب یک زبان رہے اور اب تک ہیں۔ہمارے یہاں اول تو کوئی تھنک ٹینک ہی نہیں۔ دوم اگر ہمارے کچھ’ تھنکرز‘ کچھ کہتے بھی ہیں تو ہمارے سیاست دان اُن کی سنتے ہی نہیں۔ ہمارے سیاستدان بھی امریکی تھنک ٹینک کی دی ہوئی لائن پر چلنے لگتے ہیں۔اور مفکرین اپنا ہی سر پیٹ کر رہ جاتے ہیں کہ:\n\nمن چہ می سرایم و طنبورۂ من چہ می سراید\n\nیعنی میں کس سُر میں گارہاہوں اور میرا طنبورہ کیاسُر بجارہاہے۔یہاں تو ہر سیاست دان کی اپنی اپنی ڈفلی ہے اور اپنا اپنا راگ ہے۔\nراگ بیراگ اور طنبورے کے ذکر پر ایک دلچسپ قصہ یاد آگیا۔جو اوپر کی غیردلچسپ باتوں کے مقابلہ میں آپ کو خوش آئے گا۔ ایک بار ملک کے ایک مشہور عالمِ دین کو ریڈیو پر ایک پروگرام میں مدعو کیا گیا۔ پروگرام ریکارڈ کرانے کے بعد مولانا کو چائے پلانے کے لیے اسٹیشن ڈائریکٹر صاحب کے کمرے میں لے جایا گیا۔اسٹیشن ڈائریکٹر ذوالفقار علی بخاری تھے۔ یہ وہی صاحب ہیں جو زیڈ،اے بخاری کے نام سے مشہور ہوئے اورمشہورمزاح نگار احمد شاہ بخاری پطرس کے چھوٹے بھائی تھے۔وہ بڑے بخاری کہے جاتے تھے اور یہ چھوٹے بخاری۔ ایک بارریڈیو کی کسی محفل میں ان کے والد صاحب بھی مع جبہ و قبا و عمامہ تشریف لے آئے۔ شاہد احمد دہلوی نے کھسر پھسر کرتے ہوئے کسی سے پوچھا:\n’’یہ کون صاحب ہیں؟‘‘\nجواب ملا:\n’’ارے تُم انھیں نہیں پہچانتے؟ یہ بخاری برادران کے والد ہیں‘‘۔\nشاہد احمد دہلوی بے ساختہ بولے:\n’’اچھا تو یہ ہیں صحیح بخاری‘‘۔\n\nزیڈ،اے بخاری اپنے بڑے بھائی کے درجہ کے مزاح نگار تو نہیں تھے، مگر ’مزاح گو‘اعلیٰ درجہ کے تھے۔مزاح گو ہی نہیں،شاعر بھی تھے۔ریڈیو سے وظیفہ یاب ہونے کے بعد ریڈیو پاکستان سے دلچسپ اور پُرمزاح گفتگو پر مشتمل دس منٹ کا ایک پروگرام کرتے تھے جس کا نام تھا: ’’زیڈ،اے بخاری کے ساتھ دس منٹ‘‘۔ ایک بار مجید لاہوری نے بھی اُنھیں مشورہ دیاتھا کہ:\n’’بخاری صاحب!آپ اپنی باتوں کا مجموعہ شائع کریں تو اُس کا نام ’حدیثِ بخاری‘ رکھیں‘‘۔\nبخاری صاحب نے جھٹ جواب دیا:\n\n’’ضرور!بشرطے کہ آپ بھی اپنے مجموعہ کلام کانام کلامِ مجید رکھیں‘‘۔\nہاں تو مولاناوالا قصہ یہ تھا کہ چائے پر مولانا نے غالباً گفتگو برائے گفتگو کی خاطر بخاری صاحب سے پوچھ لیا:\n’’بخاری صاحب! طنبورے اور تان پورے میں کیا فرق ہوتاہے؟‘‘\n\nبخاری صاحب یہ سوال سُن کر چکراگئے۔ فرق شاید اُنھیں بھی معلوم نہ تھا۔ مگر آدمی حاضر دماغ تھے۔ سنبھل کر پوچھا:\n’’مولانا! اِس وقت آپ کی عمرکیا ہوگی؟‘‘\nمولانا بھی یہ سوال سُن کر چکرا گئے کہ بھلا عمر پوچھنے کایہ کون سا موقع تھا۔ بہرحال اُنھوں نے بتایا :\n’’ یہی کوئی پچہتر برس کے لگ بھگ تو ہوگی‘‘۔\nبخاری صاحب بولے:\n\n’’مولانا!جہاںآپ نے اپنی عمرعزیز کے 75سال طنبورے اور تان پورے کا فرق جانے بغیر گزاردیے، وہیں کچھ برس اوربھی گزار لیجیے!‘‘\nپس ہمیں بھی اگر فیس بُک پر سوال اُٹھانے والوں کی عمر معلوم ہوتی تو شاید جواب دینے میں آسانی ہوجاتی!