ابھی کچھ لوگ باقی ہیں - احمد حاطب صدیقی

Ahmed Hatib Siddiqui آج کل ہم ہی نہیں، ہماری طرح کے بہت سے ایسے قارئین جو زبان وبیان اورشعرو ادب کے رسیا ہیں۔ ہفت روزہ ”فرائیڈے اسپیشل“ کو اُلٹی طرف سے پڑھنا شروع کرتے ہیں، یعنی آخری صفحہ سب سے پہلے پڑھتے ہیں۔ اس صفحے پر جناب اطہر ہاشمی ’’خبر لیجیے زباں بگڑی‘‘ کے مستقل عنوان سے ہر ہفتے بڑی شگفتہ، دلچسپ اور پُر اثر نثر میں غلط العام اور غلط العوام زبان کا محاکمہ کرتے ہیں۔ اس تحریر سے زبان و بیان کی اصلاح بھی ہوتی ہے اور تذکیر و تانیث کی وہ اغلاط بھی درست ہوجاتی ہیں جو ہمارے صوبہ خیبر پختون خوا سے تعلق نہ رکھنے والے ’’صوبےدار‘‘ بھی بڑے دھڑلّے سے کرتے رہتے ہیں۔\n\nتذکیر و تانیث پر ایک دلچسپ قصہ یاد آگیا۔ یہ قصہ ہمارے ایک ایسے دوست نے سنایاتھا جو خود بھی تذکیر و تانیث کی ٹوہ میں لگے رہتے ہیں۔ مناسب ہوگا کہ یہ کہانی اُنہی کی زبانی سنی جائے۔ کہتے ہیں:\n\nاُردو کے ایک پروفیسر صاحب کی بابت یہ سُنا تھا کہ اگر کوئی شخص اُن سے کوئی سوال کربیٹھیے توموصوف اُس وقت تک چین سے نہ بیٹھتے تھے جب تک پوری تفصیل اور مکمل تحقیق کے ساتھ اُس سوال کا درست جواب فراہم نہ کردیں اور سائل کی مکمل تسلی و تشفی سے خود بھی مطمئن نہ ہوجائیں۔ تو صاحب ! اِس عاجز نے یہ سُن تورکھا تھا، مگر کبھی خود اس کا تجربہ نہیں کیا تھا۔ تاہم ایک روز یہ بھی ہوگیا۔\n\nہوا یوں کہ ایک دن میں ایک کتب خانے میں بیٹھا ایک کتاب کا مطالعہ کر رہا تھا۔ اتفاق سے وہاں پروفیسر صاحب بھی غالباً کوئی تحقیقی مقالہ تحریر کرنے میں مصروف تھے۔ پڑھتے پڑھتے میرے ذہن میں ایک سوال اُٹھا اور میں نے موقع غنیمت جان کر وہ سوال پروفیسر صاحب سے کر لیا:\n’’سر! یہ بتائیے، بلبل مذکر ہے یا مؤنث؟‘‘\n\nپروفیسر صاحب نے بے حد مصروف ہونے کے باوجود میری جانب توجہ فرمائی۔ اپنے کام کی طرف سے نظریں ہٹاکر تھوڑی دیر تک قلم دانتوں تلے داب کر کچھ سوچا، پھر فرمایا:\n’’میاں! بلبل مذکر ہے!‘‘\n\nمیں نے پروفیسر صاحب کا شکریہ ادا کیا اور مطمئن ہوکر اپنے مطالعے میں دوبارہ منہمک ہو گیا۔\n\nاس واقعے کے چند روز بعد کا ذکر ہے کہ ایک شام میرے دروازے پر دستک ہوئی۔ گھر میں کچھ مہمان بیٹھے ہوئے تھے۔ میں اُن سے معذرت کرکے باہر گیا تو یہ دیکھ کر حیران رہ گیا کہ پروفیسر صاحب دروازے پر کھڑے ہیں۔ حیران ہونے کے ساتھ ساتھ میں ذرا پریشان بھی ہوا کہ مہمانوں کی موجودگی میں پروفیسر صاحب کو کہاں بٹھاؤں؟ خیر میں نے قدرے گھبرائے ہوئے لہجہ میں کہا:\n\n’’پروفیسر صاحب! خیریت تو ہے؟ آپ؟ میرے غریب خانے پر؟ اس وقت؟ ذراایک منٹ ٹھہریے، میں آپ کے لیے بیٹھنے کا بندو بست کرلوں‘‘۔\n\nمگر پروفیسر صاحب نے میرا بازو تھام کر مجھے روکا اور کہا:\n’’نہیں، نہیں۔ اس تکلف کی ضرورت نہیں۔میں صرف یہ کہنے آیا تھا کہ اُس روز آپ نے پوچھا تھا کہ بلبل مذکر ہے یا مؤنث؟ اور میں نے جواب دیا تھا کہ بلبل مذکر ہے۔لیکن آج ہی مرزا غالبؔ کا یہ مصرع نظر سے گزرا:\n’بلبلیں سن کر مرے نالے غزل خواں ہو گئیں‘\nغالبؔ کا شمار چوں کہ اہل زبان اور مستند شعرا میں ہوتا ہے،چناں چہ اِ س مصرع کی رُو سے بلبل مؤنث ہے۔آج سے بلبل کو مؤنث جانیے‘‘۔\n\nمیرا سر اُن کے احسان کے بوجھ سے جھک گیا۔ میں نے اُن کے خلوص و محبت کا تہِ دل سے شکریہ ادا کیا کہ بے چارے صرف تصحیح کرنے کے لیے اتنی دُور سے میرے گھر تشریف لائے۔ میں ان سے بہت متاثر ہوا۔ مجھے یہ شعر بھی یاد آیاکہ:\nسلیقے سے ہواؤں میں جو خوشبو گھول سکتے ہیں\nابھی کچھ لوگ باقی ہیں جو اُردو بول سکتے ہیں\n\nمگرابھی اس واقعے کو بھی چند ہی روز گزرے ہوں گے کہ ایک روز علی الصبح میرے گھر پر زور زور سے دستک ہوئی۔ میں ہڑبڑا کر اُٹھ بیٹھا۔ آنکھیں ملتا ہوا باہر گیا تو کیا دیکھتا ہوں کہ پروفیسر صاحب کھڑے ہیں۔ جلدی جلدی ڈرائنگ روم کا دروازہ کھول کر اُنہیں اندر بٹھایا اور صبح صبح تشریف آوری کا سبب پوچھا۔ پروفیسر صاحب نے فرمایا:\n\n’’میاں چند روز قبل میں نے آپ کو بتا یا تھا کہ غالبؔ کے مصرع کی رُو سے بلبل مؤنث ہے۔ لیکن آج میں نے کسی کام سے کلیاتِ اقبالؔ کھولی تو اُن کے اس شعر پر نظر پڑگئی:\nٹہنی پہ کسی شجر کی تنہا\nبلبل تھا کوئی اُداس بیٹھا\n\nعلامہ اقبالؔ چوں کہ شاعرمشرق، مصور پاکستان اور حکیم الامت ہیں، چناں چہ ہمارے لیے اُن سے زیادہ مستند بات کس کی ہوسکتی ہے۔ لہٰذا علامہ کے اس شعر کی روشنی میں آپ بلبل کو مذکر ہی گردانیے‘‘۔\n\nمیں نے ایک بار پھر اُن کا شکریہ ادا کیا اور اُن کے جانے کے بعد اللہ کا شکر بھی ادا کیا کہ چلو اِس بلبل سے تو اب جان چھوٹی۔ مگر یہ میری خوش فہمی تھی۔\n\nابھی بلبل کو مذکر ہوئے ایک ہی ہفتہ گزرا ہوگا کہ ایک شام جب میں ٹیلی وژن پر ایک دھواں دھار اور دلچسپ سیاسی مباحثہ و مکالمہ و مقابلہ دیکھنے میں مگن تھا، دروازے پر دستک ہوئی۔ بادل ناخواستہ باہر نکل کر دیکھا تو پروفیسر صاحب ایک بار پھر کھڑے تھے۔ اُن سے کچھ ہی فاصلے پر ایک شخص ایک گدھے کی لگام تھامے کھڑا تھا جس کے دونوں طرف بہت سی کتابیں لدی ہوئی تھیں۔ آج پروفیسر صاحب کے چہرے پر ایک فاتحانہ مسکراہٹ بھی نظر آرہی تھی۔ میں نے تعجب سے پوچھا:\n’’پروفیسر صاحب! یہ کیا؟!!!‘‘\n\nپروفیسر صاحب اُسی فاتحانہ مسکراہٹ سے گویا ہوئے:\n’’میاں اُس روز آپ کے یہاں سے جاکر میں نے سوچا کہ غالبؔ بھی بڑے شاعر ہیں اور اقبالؔ بھی ۔چناں چہ میں نے آپ کے سوال پر پھر تحقیق شروع کردی اور بہت سی کتابوں سے استفادہ کیا۔ سو،میں نے بڑی محنت سے آپ کے لیے یہ کتب جمع کی ہیں۔ اس گدھے کے دائیں جانب جو کتابیں لدی ہوئی ہیں، اُن کی رُو سے بلبل مذکر ہے، جب کہ بائیں جانب لدی ہوئی کتابوں کی رُو سے بلبل مؤنث ہے۔ یہ کتابیں اُتروالیجیے۔ ان کا مطالعہ کیجیے۔ آپ جس رائے سے اتفاق کریں گے اُس پر آپ سے گفتگو رہے گی۔ ان کتابوں کی واپسی کی جلدی نہیں ہے۔ اطمینان سے پڑھ کر واپس کیجیے گا۔ ہاں اِس گدھے والے کو کچھ کرایہ عنایت کر دیجیے گا۔ اب میں چلتاہوں‘‘۔\n\nپروفیسر صاحب تو چلتے بنے۔ مگر میرا سر چکرانے لگا۔ میں وہیں سر تھام کر بیٹھ گیااور اُس وقت کو کوسنے لگا جب میں نے پروفیسر صاحب سے یہ دریافت کیا تھا کہ:\n\n’’سر! یہ بتائیے، بلبل مذکر ہے یا مؤنث؟‘‘\n٭٭