وقت کی حقیقت کیا ہے؟ کیسے سمجھا جائے؟ ہمایوں مجاہد تارڑ

humayoon جیسے زندگی ایک بڑے حجم کا، بڑےپھیلاؤ کا، بڑےپیمانے کا مظہر ہے، جس میں بے شمار چھوٹے اور بڑے مظاہر ہیں، مخلوقات ہیں، مناظرہیں اور نوع بہ نوع عوامل اس میں کارفرما ہیں،اسی طرح ہم ایک لمحے کے لیے یہ تصوّر کر لیں کہ ہمارے سامنے ایک میز پر رکھا کمپیوٹر سسٹم بھی ایک دنیا ہے، جس کے اندر بے شمار عوامل ہیں: بجلی، کیبل، کی پیڈ، ماؤس، اس کے ٹھوس یاhard باڈی پاڑٹس، اس کا سافٹ حصّہ یعنی ونڈوز، انٹرنیٹ کنیکشن، ونڈوز میں پڑے بے شمار سافٹ ویئرز، او ر پھر انٹر نیٹ پر موجود لاتعداد آن لائن سافٹ ویئرز- اب اس دنیا (کمپیوٹر) کو ذرا اس نظر سے مشاہدہ کریں کہ ان تمام اشیا کو ایک ایک کر کے بنایا اور پھر آپس میں جوڑا گیا ہے ، کچھ اسطرح کہ سب مل کر ، ہم رابطہ ہو کر ایک وحدت کیساتھ ایک عمل انجام دیں یعنی کمپیوٹر سسٹم بن جائیں۔\n\nاس چھوٹی سی دنیا کا خالق انسان ہے اور مخلوق یہ کمپیوٹر جو بے شمار چھوٹے بڑے ٹکڑوں اور عوامل پر مشتمل ہے۔یہ سب چھوٹی چھوٹی مخلوقات ہیں۔کمپیوٹر کے اس جہان میں موجود کسی ایک phenomenon کو پوری طرح سمجھنے، اس پر حاوی آنے میں مہینوں صرف ہوتے ہیں۔جیسے مائیکرو سافٹ وَرڈ ایسی سادہ سی شے کے تمام menu کو از برکرنے میں لوگ دو تین ماہ کا کورس مکمل کرتے ہیں۔کسی ایک کمپیوٹر لینگویج پر عبور حاصل کرنا اس سے بھی سِوا مقدارِ وقت کا تقاضا کرتا ہے۔\n\nکہنا یہ ہے کہ زندگی میں کارفرما تمام عوامل اور اشیا بھی اسی طرح مخلوقات ہیں۔وقت بھی ایک مخلوق ہےیہ بھی ایک چھوٹا سا سافٹ ویئر ہے جسے خدا مختلف جگہوں، ادوار اور سیچویشنز میں مختلف انداز میں برت رہا ہے، اس سے کام لے رہا ہے۔وقت کی رفتار اس جہانِ فانی میں نسبتاً تیز ہے۔جیسے آپ اڑھائی گھنٹے کی ہالی ووڈ فلم کو فاسٹ موشن پر سیٹ کر کے چلا دیں تو وہ دس منٹ یا اس سے بھی کم وقت میں ختم ہو جائے گی۔فلم کو اس کی نارمل رفتار پر دیکھیں گے تو اس کی ساعتیں دو گھنٹے تیس منٹس ہی ہوں گی۔اس نسبت سےایک واقعہ کتاب مقدّس کی سورہ البقرہ میں اسی لیے مذکور ہوا ہے کہ انسان وقت سے متعلق بحث کو اس سادہ سی مثال سے سمجھ لے۔ اس وقوعے میں وقت کے سافٹ ویئر کو تین جگہوں پر مختلف انداز میں فنکشن کرایا گیا ہے:\n\n" مثال کے طور پر اس شخص کو دیکھو جس کا گزر ایک بستی پر ہوا، جو اپنی چھتوں پر اوندھی گری پڑی تھی۔ اُس نے کہا ’’یہ آبادی جو ہلاک ہوچکی ہے اسے اللہ کس طرح دوبارہ زندگی بخشے گا؟‘‘ اِس پر اللہ نے اس کی رُوح قبض کرلی اور وہ سو برس تک مردہ پڑا رہا۔ پھر اللہ نے اسے دوبارہ زندگی بخشی اور اس سے پوچھا ’’بتاؤ کتنی مدت پڑے رہے ہو؟‘ ‘ اس نے کہا ’’ایک دن یا چند گھنٹے رہا ہوں گا‘‘ فرمایا ’’تم پر سو سال اسی حالت میں گزر چکے ہیں اب ذرا اپنے کھانے اور پانی کو دیکھو اس میں ذرا تغیّر نہیں آیا۔ دوسری طرف اپنے گدھے کو بھی دیکھو ( کہ اس کا پنجر تک بوسیدہ ہورہا ہے ) اور یہ ہم نے اس لئے کیا ہے کہ ہم تمہیں لوگوں کے لئے ایک نشانی بنا دینا چاہتے ہیں۔ پھر دیکھو کہ ہڈیوں کے اس پنجر کو کس طرح اُٹھا کر گوشت پوست اس پر چڑھاتے ہیں۔‘‘ اس طرح جب حقیقت اس کے سامنے بالکل عیاں ہوگئی تو اس نے کہا ’’ میں جان گیا کہ اللہ ہر چیز ہر قادر ہے ‘ ‘ (سورہ بقرہ آیت 259) ۔\n\nدیکھیں، یہاں وقت کے سافٹ ویئر نےکھانے پر الگ انداز میں فنکشن کیا۔گویا وقت کو منجمد یاfreeze کر دیا گیا۔اسے Hot Pot Set بنا دیا گیا جس میں اس کی گرمائش اور تازگی برقرار رہی۔جیسے اس پر ایک ساعت بھی نہ گذری ہو۔ جبکہ خود ان صاحب پر اور گدھے پر وہ نارمل رفتار سے گذرا،۔ گدھا بیچارا چند روز یا ہفتے زندہ رہ سکا ہو گا۔ادھر خود وہ صاحب سو برس مردہ حالت میں پڑے رہے جس کے بعد یوں اٹھ بیٹھے جیسے بس سوئے پڑے تھے۔ \nتو گویا یہ وقت بھی ایک سافٹ ویئر نما مخلوق ہے جسے خالق جب چاہے سکیڑ دے، جب چاہے پھیلا دے، اور جب چاہے منجمد کردے۔وقت کی رفتارخلائے بسیط میں ہماری اس دنیا کی نسبت مختلف ہے۔ اب یہ ایک روزِ روشن ایس عیاں حقیقت ہے ۔ کوئی خلانوردوں سے کوئی پوچھے تو وہ بتائیں وہاں ذائقے، رنگ، وزن، احساس اور رفتارِ وقت ایسی چیزوں کا یا تو کوئی تصوّر ہی نہیں، یا کم از کم ہماری دنیا سے یکسر مختلف ہے۔ہماری دنیا جسے گیسوں کے دبیز غلاف تلے، ایک خاص پریشر میں رکھا گیا ہے۔ نیچے سے کشش ثقل کی بیڑیاں پہنائی گئی ہیں۔دیکھ لیں، ہم سب جانتے ہیں کہ چاند پر اس نوع کی کشش ثقل نہیں۔ 90 کلو گرام وزن رکھنے والا انسان وہاں ایک غبارے جتنا وزن رکھتا ہے۔چاند کی سطح پر حضرت انسان دو چار ڈگ بھرے تو آدھے لاہور جتنا فاصلہ طے کر جائے۔تو طے ہوا کہ وقت ، ذائقہ، احساس وغیرہ کا چلن زمین کی حدوں سے پار پوتے ہی بدل جاتا ہے۔ جبھی اشارہ دیا گیا کہ اخروی زندگی میں ایک دن یہاں کے پچاس ہزار سال کے برابر ہے۔\n\nاشفاق احمد کی ڈرامہ سیریل حیرت کدہ کا مائی بلوری والا وہ ناقابلِ فراموش ڈرامہ تو سب کو یاد ہی ہو گا جس میں ایک نوجوان کی مائی بلوری سے ملاقات ہوتی ہے۔یہ ملاقات ایک پرانے قبرستان کے منظر میں دکھائی گئی۔پھر، مائی بلوری یکایک فوت ہو جاتی ہے، تو وہ نوجوان اسے ڈھونڈتے ڈھونڈتے ایک خیمے کے قریب پہنچتا ہے۔ اندر داخل ہوتے ہی ششدر رہ جاتا ہے۔ دکھایا یہ جاتا ہے کہ مائی بلوری اب عالم برزخ میں ہے۔ جہاں وہ شانت چہرے کیساتھ ایک صاف و شفاف چبوترے پر سفید لباس میں ملبوس، ہاتھ میں تسبیح پکڑے بیٹھی ہے۔ نوجوان اس سے کچھ باتیں کرتا ہے۔ تب وہ اسے جلد واپس لوٹنے کا کہتی ہے ،کہ دیر ہو گئی؛ تمہاری دنیا کی ساعتیں بہت سبک رفتار ہیں؛ اس اثنا میں تمہاری دنیا بہت آگے جا چکی ہو گی۔ وہ پلٹ آتا ہے، اور یہ دیکھ کر حیران رہ جاتا ہے کہ اس کے رشتہ دار، دوست احباب یا تو فوت ہو چکے ہیں، یا انتہائی ضعیف ہو چکے ہیں۔ہم یہاں بارِ دگر کہیں گے کہ اِس پر وہی مثال صادق آتی ہے کہ جیسے آپ اڑھائی گھنٹے کی ہالی ووڈ فلم کو فاسٹ موشن پر سیٹ کر کے چلا دیں تو وہ دس منٹ یا اس سے بھی کم وقت میں ختم ہو جائے گی۔فلم کو اس کی نارمل رفتار پر دیکھیں گے تو اس کی ساعتیں دو گھنٹے تیس منٹس ہی ہوں گی۔با لکل اسی طرح کائنات میں نصب کردہ زندگی کا سافٹ ویئر ایجاد کرنے والا خالق زندگی کی ونڈوز یا سکرین پر روبہ عمل اپنے اس Time والے سافٹ ویئر کو مختلف جگہوں اور سیچویشنز میں مختلف انداز میں استعمال کر رہا ہے۔\n\nانسانی زندگی میں وقت کی گزران کو ایک فرد کے احساس کی سطح پر دیکھیں تو جب بھی اس کا چلن عجیب سا ہے۔ مثلاً انتظار کے لمحات بڑے طویل ، اور اعصاب شکن ہوتے ہیں۔خوشی کا وقت تیزی سے بیت جاتا ، جبکہ مصیبت کی گھڑی ٹھہر سی جاتی ہے۔ من پسند ہستی سے ملاقات کے سمے بھی سبک رفتاری سے گزرتے ہیں، جبکہ اس سے دُوری اور جدائی کے لمحات گویا صدیوں میں ڈھل جاتے ہیں۔ حضرت اقبالؒ ہوں یا دوسرے شعرا، اکثر وقت کے اس چلن کا شکوہ کرتے نظر آتے ہیں:\n\nمہینے وصل کے گھڑیوں کی صورت اُڑتے جاتے ہیں
\nمگر گھڑیاں جدائی کی گزرتی ہیں مہینوں میں
\n(اقبالؒ)

Comments

ہمایوں مجاہد تارڑ

ہمایوں مجاہد تارڑ

ہمایوں مجاہد تارڑ شعبہ تدریس سے وابستہ ہیں۔ اولیول سسٹم آف ایجوکیشن میں انگریزی مضمون کے استاد ہیں۔ بیکن ہاؤس، سٹی سکول ایسے متعدّد پرائیویٹ اداروں سے منسلک رہ چکے۔ ان دنوں پاک ترک انٹرنیشنل سکول، اسلام آباد کے کیمبرج سیکشن میں تدریسی فرائض انجام دے رہے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com