یوم آزادی یا یوم بربادی: محمد مبین امجد

صبح سے شام ہو گئی تھی۔ شام سمٹ کر رات میں ڈھلی اور پھر اور بھی گہری۔۔ وقت کا سفر بے آواز مگر تیز رفتار۔۔۔ مگر اس نے ابھی آنکھیں نہیں کھولیں تھیں۔۔ اور وہ اتنا وقت گذرنے کے باوجود ابھی وہاں ہی کھڑی تھی۔۔ لمبے سے کوریڈور کے اختتام پر ۔۔ وہیں ۔۔ جہاں سے محض چند قدم کے فاصلے پر شیشے کی دیوار سے پرے وہ...