بھوک – آصف اقبال

”ابے اس اشارے پر ساری آبادی رک رک کے چلتی اب۔ ایک دفعہ گاڑی قطار میں لگ جائے تو چار دفعہ تو اشارہ بند ہو ہی جاتا۔ اتنی گاڑیوں کی قطار میں تیرے سے پانچ سو روپے اکٹھے نہیں ہوتے۔ بکواس کرتا رہتا ہے میرے ساتھ۔ سیدھی طرح بتا دے پیسے کدھر کرتا ہے تو۔“ مزید پڑھیں

مرنے کے بعد – اشفاق احمد

کسی کو ٹھیک سے معلوم نہیں کہ ماسٹرا لیاس کب اس محلہ میں آیا تھا اور کب اس نے یہ کوٹھڑی کرائے پر لی تھی، لیکن اس بات کا ہر ایک کو علم تھا کہ ماسٹر الیاس مہاجر ہے اور اس کا تعلق انبالے کے کسی علاقے سے ہے، کیونکہ وہ بولی ہی ایسی بولتا مزید پڑھیں

اِرادے، نئے یا پرانے؟ دلچسپ کہانی – حنا نرجس

پتہ نہیں وقت نے اپنی پہلی اڑان کب بھری ہوگی مگر یہ طے ہے کہ تب سے اب تک مسلسل پر پھیلائے اُڑے ہی چلا جا رہا ہے. نادیہ کو اپنے آج کے کام کل پر ڈالنے کی عادت تو نہیں تھی مگر دیر سویر ہو ہی جاتی ہے. لکھنے پڑھنے کی میز کے درازوں مزید پڑھیں

ذاتی صفحہ (جولائی 78) – شکیل عادل زادہ

میں نے گھڑی پلٹا کے میز پر رکھ دی ہے۔ یہی بہتر تھا۔ ہر دم آگے بڑھتی ہوئی سوئیاں کل شام سے مجھے ٹہوکے دے رہی تھیں۔ پرسوں ایک طویل سفر درپیش ہے۔ اِدھر سے ایک لمحے کی مہلت نہیں ملی کہ کچھ زادِ راہ کا اہتمام کرتا۔ شاید ڈیڑھ سال پہلے میں نے آپ مزید پڑھیں

گمراہ – سلسلہ وار کہانی (آخری قسط) – ریحان اصغر سید

اخلاق کی آواز نے میرے نیم مردہ جسم میں نئی زندگی دوڑا دی تھی۔ وہ مجھے ہی پکار رہا تھا۔ میں گھپ اندھیرے میں ٹھوکریں کھاتا ہوا دروازے کی طرف لپکا۔ اخلاق میں یہاں ہوں۔ اس کمرے میں۔ میں نے بندھے اور سن ہاتھوں سے بمشکل لکڑی کا دروازہ بجایا۔ فکر نہ کرو میری جان۔ مزید پڑھیں

نئے سال کا نیا آفتاب – فرح رضوان

نئے سال کی آمد پران سب کے لیے دل سے دعا، جو اپنے رب کی، اور صراطِ مستقیم کی تلاش میں سرگرداں ہیں۔ نئے سال کا نیا آفتاب، کچھ اِس طرح سے طلوع ہو کہ اُس کی اک اک کرن تیری قسمت کو ایسے اُجال دے ایک ایسی جوت جگے کہ پھر,نہ اندھیری کوئ بھی مزید پڑھیں

گمراہ – سلسلہ وار کہانی (4) – ریحان اصغر سید

میرے پاس بمشکل چند سکینڈز تھے۔ میری انگلی اپنی سائیڈ کے شیشے والے بٹن پر تھی۔ شیشہ نیچے ہوتے ہی میں چلایا۔ جلدی کرو۔ گاڑی میں بیٹھو۔ گن بردار کے چہرے پر کچھ کنفیوژن کے تاثرات نمودار ہوئے، اس نے گردن موڑ کر اپنے دوسرے ساتھی کو دیکھا۔ میرے لیے اتنی مہلت کافی تھی۔ پراڈو مزید پڑھیں

گمراہ – سلسلہ وار کہانی (3) – ریحان اصغر سید

اس کمرے کا سائز بارہ بائی چودہ فٹ سے زیادہ نہیں تھا۔ ایک طرف ایک چھوٹا سا اٹیچ باتھ بنا ہوا تھا۔ کمرے کی ایک دیوار کے ساتھ سنگل بیڈ لگا ہوا تھا. این کے کمرے کا سائز اور ساخت بھی بالکل میرے کمرے جیسی ہی تھی۔ این نے نیلی جینز کے اوپر کاٹن کی مزید پڑھیں

مر بھی جاﺅں تو کہاں لوگ بھلا ہی دیں گے – فارینہ الماس

انسان بھی کتنا عجیب ہے، تمام عمر جسم و جاں کے تقاضے نپٹاتے نپٹاتے وقت کی پونجی ختم کر بیٹھتا ہے اور پھر بھی لمحہ آخر میں اس کی آنکھوں کے بے رنگ پانی میں سوائے خواہشات ناتمام کی تیرتی پھرتی ادھ موئی لاشوں کے کچھ بھی دکھائی نہیں پڑتا۔ انہی آرزوؤں پہ ماتم کناں مزید پڑھیں

ذاتی صفحہ – شکیل عادل زادہ

کچھ دیر پہلے میں نے اپنے قلم کو حکم دیا تھا کہ وہ میری روداد اشک و خوں لکھے، میرا تماشائے سحر و افسوں لکھے، میں نے چاہا تھا کہ وہ انقلاب برپا کرے، وہ لکھے جو کبھی نہیں لکھا گیا، وہ سنائے جو کبھی نہیں سنایا گیا۔ اُن لوگوں کے لیے قصہ دل لکھے مزید پڑھیں