اٹھنے والے ہر قدم کو سلام - زبیر منصوری

کراچی میں آج شام اور برما کا ساتھ دینے کے لیے اٹھنے والے ہر قدم کو سلام!
ان سب کو سلام جو فتنہ مال کے اس دور میں بھی اپنی ذات کے گرد کولہو کے بیل بننے پر آمادہ نہیں۔
وہ کہ جو دن بھر روزی روٹی کی دوڑ کے باوجود اپنی ذات میں گم نہیں ہوئے بلکہ ان کے دل اپنے بھائیوں کے لیے دھڑکتے ہیں۔
ان عفت مآب بہنوں کو سلام جو شام کی کسی ماں کے جگر گوشے کا لہو دیکھ کر گلشن اقبال اور فیڈرل بی ایریا میں دل کا قرار کھو بیٹھتی ہیں، اور ان کی چادروں کے پلو آنسوؤں سے بھیگ جاتے ہیں۔
ان بہنوں کو سلام جو برما میں ذبح ہوتے بھائیوں کے لیے تڑپ اٹھتی ہیں۔
اخوت اس کو کہتے ہیں چبھے کانٹا جو کابل میں
تو ہندوستان کا ہر پیر و جوان بیدار ہو جائے

کیا ہوا جو شہر کا شہر آسیب زدہ سا ہو گیا ہے.
کیا ہوا کہ کروڑوں انسانوں نے بس سانس لینے کو زندگی سمجھ لیا ہے.
کیا ہوا جو شام اور یمن میں بہتا ایک ہی رنگ کا خون شیعہ اور سنی خون میں تقسیم کر دیا گیا ہے، اور دونوں طرف بس کسی ایک خون پر آنسو بہانے والے ہی ہیں.
کیا ہوا کہ ظلم کے خلاف آواز اٹھانے سے پہلے ظالم کا نام نسب قبیلہ زبان اور سیاسی وابستگی کا یقین کر لینا ضروری سمجھ لیا گیا ہے.
الحمد للہ آج بھی امت نام کی اس راکھ میں وہ چنگاریاں موجود ہیں جو بھڑک کر روشنی اور حرارت کا سامان کرتی اور تاریکی میں بے سمتی کا شکار قافلوں کی راہیں روشن کرتی ہیں !

شاباش اے صبح کے غم خوارو!
تمہارے استاد مودودی رح نے تمہیں یہی سبق دیا تھا کہ امت کے سمندر میں رہنا، قطرے قطرے نہ ہونا.
تمہارا اقبال تمہیں محمد عربی صلی اللہ علیہ وسلم کی امت کے ہر زخم کو اپنا زخم سمجھنے کا سبق دے گیا تھا.
شاباش نئے برس کا سورج تمھیں جدوجہد کے میدان میں پائے.
شاباش جوانو! جب تک تمہارے سر گردنوں پر سلامت ہیں، امت رسول صلی اللہ علیہ وسلم تمھاری وفاداریوں کا مرکز و محور بنی رہے۔
پیامبر فرشتے تمہارے نبی مہربان صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ پیغام پہنچاتے رہیں کہ آقا وہاں ابھی کچھ سر پھرے باقی ہیں۔۔

Comments

زبیر منصوری

زبیر منصوری

زبیر منصوری نے جامعہ منصورہ سندھ سے علم دین اور جامعہ کراچی سے جرنلزم، اور پبلک ایڈمنسٹریشن کی تعلیم حاصل کی، دو دہائیاں پہلے "قلم قبیلہ" کے ساتھ وابستہ ہوئے۔ ٹرینر اور استاد بھی ہیں. امید محبت بانٹنا، خواب بننا اوربیچنا ان کا مشغلہ ہے۔ اب تک ڈیڑھ لاکھ نوجوانوں کو ورکشاپس کروا چکے ہیں۔

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں