دل انصاف طلب ہے – آصف محمود

دل جو کبھی صاحب اولاد سے انصاف طلب ہوتا ہے، آج ‘ہم سب’ سے انصاف طلب ہے. کیا فرماتے ہیں برادر محترم وجاہت مسعود بیچ اس مسئلے میں؟

ایک تحریر شائع ہوئی. عنوان ہے : قائد اعظم اسلام سے دور اور قتل عام کے ذمہ دار ہیں، مجھے قیادت دو. سید مودودی.

جن لوگوں نے سید مودودی جیسی نجیب شخصیت کی تحریروں کا مطالعہ کر رکھا ہے، وہ جانتے ہیں کہ یہ سید کا اسلوب گفتگو نہیں ہے. میں نے حیرت سے مضمون کھولا تو معلوم ہوا زاہد چودھری صاحب کی کتاب کا حوالہ ہے. حوالے کا متن پڑھا تو ایسی بات کہیں نہیں ہے.

سید صاحب کی ایک تحریر ہے جس میں انہوں نے حالات پر عمومی تبصرہ کیا ہے، اس تبصرے کی خود ہی ایک شرح بیان کی گئی، اور پھر اس شرح کی بنیاد پر مضمون کی سرخی نکال دی گئی. دنیائے دانش و فکر میں اور حتی کہ صحافت میں بھی آپ کسی کی بات کی شرح تو اپنے فہم کے. مطابق کر سکتے ہیں لیکن آپ اپنا فہم یوں کسی کا بیان بنا کر پیش نہیں کر سکتے جیسا کہ یہاں کیا گیا.

ہمیں اختلاف کرنا چاہیے کہ اختلاف ہی زندگی کا حسن ہے، لیکن خدا لگتی کہیے کہ سید مودودی جیسے نفیس، نجیب اور صاحب علم سے ایسی بات منسوب کرنا کہاں کا انصاف ہے.

عزیز ترین دوست سے یہ دل انصاف طلب ہے.

Comments

FB Login Required

آصف محمود

آصف محمود اسلام آباد میں قانون کی پریکٹس کرتے ہیں، روزنامہ 92 نیوز میں کالم لکھتے ہیں، روز نیوز پر اینکر پرسن ہیں اور ٹاک شو کی میزبانی کرتے ہیں۔ سوشل میڈیا پر اپنی صاف گوئی کی وجہ سے جانے جاتے ہیں

Protected by WP Anti Spam