لبرل ازم کے خودکش حملے (2) - رضوان اسد خان

رضوان اسد خان آج آپ کو دو کہانیاں سناتے ہیں، نتیجہ آپ خود ہی نکال لیجیے گا.\n\nپہلی کہانی:\nوہ قبائلی علاقے کا رہائشی تھا اور کراچی میں محنت مزدوری کر کے گھر والوں کا پیٹ پالتا تھا. ایک دن فوجی آپریشن کے دوران اس کا گھر شیلنگ سے تباہ ہو گیا. بیوی بچے بھی ”کولیٹرل ڈیمیج“ میں مارے گئے. اس کا سب کچھ لٹ چکا تھا. جینے کا مقصد بھی ختم ہو چکا تھا. ایسے میں اس کی ملاقات جانی سے ہوئی. اس کی کہانی سن کر جانی نے اسے تسلی دی اور اپنے ساتھ لے جا کر اپنے باس سے ملوایا. انہوں نے اسے سمجھایا کہ بےبسی سے زندگی گزارنے سے بہتر ہے کہ بندہ انتقام لیتے ہوئے مر جائے. یہ بات اس کے دل کو لگی. الغرض انہوں نے اس کو ٹریننگ دی اور انتقام کی آگ سے بھرے ہوئے خود کش بمبار میں تبدیل کر دیا. یوں ایک روز وہ اپنی ”جیکٹ“ پہن کر شہر کے مصروف ترین بازار میں جا نکلا. اس کے ذہن میں وہ ”فیڈ شدہ“ خیالات گھوم رہے تھے کہ یہ سب لوگ ٹیکس اور ووٹ کے ذریعے اس فوج کو سپورٹ کرتے ہیں جس نے اس کے خاندان کو مارا، لہٰذا اس کے بیوی بچوں کی طرح ان لوگوں کو بھی جینے کا کوئی حق نہیں. بس بیوی اور بچوں کے خیال کا دل میں آنا تھا کہ اس نے نعرہ تکبیر بلند کیا اور لیور چھوڑ دیا. ایک ہولناک دھماکہ ہوا اور بہت سے خاندان اس کے اپنے خاندان کی طرح اجڑ گئے.\n\nدوسری کہانی:\nوہ ایک متوسط گھرانے کی لڑکی تھی. آرٹ کی شروع سے ہی شوقین تھی، اس لیے لاہور کے نیشنل کالج آف آرٹس میں داخلہ لے رکھا تھا. کالج کے ماحول اور کیبل پر نت نئے فیشن اس کو لبھاتے تو اپنے جیب خرچ کو کھانے پینے پر اڑانے کے بجائے ماڈل بننے کا سامان لے آتی. ہر ایک کی نظروں کا مرکز بننا اسے خوب پسند تھا. مگر جب کچھ اوباش لڑکے حد سے گزرتے تو اسے غصہ بھی خوب آتا. وہ ہمیشہ انہیں مزہ چکھانے کے منصوبے سوچتی مگر بات اکثر خیالی پلاؤ تک ہی محدود رہتی. پھر ایک روز اس کی سہیلی نے اسے بتایا کہ ایک نئی کمپنی مارکیٹ میں اپنی لان لانا چاہ رہی ہے. اسے این سی اے کے سٹوڈنٹس بطور ماڈل اور ایڈورٹائزنگ ٹیم کے درکار ہیں. وہ فوراً آڈیشن کےلیے کمپنی کے سی ای او کے پاس پہنچی. اسے 5 دیگر لڑکیوں کے ساتھ سیلیکٹ کر لیا گیا.\nاسے بتایا گیا کہ کمپنی کا نام ہی ”ڈی وائی او ٹی“ ہے جو کہ ”ڈو یور اون تھنگ“ کا مخفف ہے. اور ہم یہ پیغام دینا چاہتے ہیں کہ جس طرح ہر کسٹمر کو ہماری لان کا ڈیزائن اپنی پسند کے مطابق ڈھالنے کی”آزادی“ ہے، بالکل اسی طرح ہر انسان اپنے فیصلے اور عمل میں ”آزاد“ ہونا چاہیے. ہم کسی سماجی، معاشرتی، مذہبی پابندی کو نہیں مانتے اور اسی کا عملی اظہار کر کے ہم دنیا کو اپنا پیغام دیں گے.\nاور پھر 5 ستمبر کی دوپہر یہ ٹیم لاہور کے انارکلی بازار میں پہنچ گئی. دیگر لڑکیاں آس پاس کی دکانوں پر ونڈو شاپنگ کرنے لگیں اور ”یہ“ بازار کے درمیان چل پڑی. اچانک ٹیم کا ایک لڑکا نمودار ہوا اور اسے چھیڑنے لگا. فیڈ کیے گئے الفاظ اس کے دماغ میں گونج اٹھے کہ میں آزاد ہوں، میں جو چاہوں کروں. کسی کو مجھے روکنے اور ہراساں کرنے کا حق نہیں. ساتھ ہی سابقہ لفنگوں کے واقعات کا اس کی نظروں کے سامنے گھومنا تھا کہ اس نے اپنی چادر اتار کر پرے پھینک دی: گویا کہ مذہب اور روایات کی علامت کے قلادے کو گلے سے اتار پھینکا. بیک گراؤنڈ میں دوسرے ممبر نے ڈیک پر نامور انگریزی گلوکارہ ”بی یونسے“ (Beyoncé) کا گانا ”Who Run The World“ چلا دیا اور ”رحمت“ نامی اس لڑکی نے اس کی دھن پر تھرکنا جو شروع کیا تو پورے بازار کی نگاہوں کیلئے ”زحمت“ بن گئی. ارد گرد کی ٹیم ممبرز بھی اس کے ساتھ شامل ہو گئیں اور ”فیمن ازم“ کا نہایت ”بازاری“ انداز میں پرچار کرتا، یہ نغمہ ان کے دل کی آواز بن کر اپنے اپنے گھروں کی عزت، ان خواتین کو بھی ”بازاری“ بنا گیا.\nاگلے دن رحمت بی بی نے فیس بک پر یہ ویڈیو ان ”فاتحانہ“ الفاظ کے ساتھ شیئر کی کہ ”انسان ننگا پیدا ہوتا ہے جبکہ بعد میں اسے متضاد اخلاقیات اور اقدار کے لامتناہی لباس میں لپیٹ دیا جاتا ہے.“ یعنی بین السطور یہ واضح پیغام ہے کہ ان جیسی خواتین علامتی اور حقیقی، ہر دو قسم کا لباس اتار پھینکنے اور اپنی پیدائشی حالت میں واپس لوٹنے کو بے چین ہیں.\n..............\nتو جناب یہ تھیں دو کہانیاں، دو عدد خودکش حملوں کی، جن میں کچھ ”شر پسند عناصر“ کے بھڑکانے پر، خود کش حملہ آور کے دماغ میں پیدا ہونے والا ”خلل“، اسے ایک ایسے عمل کو کر گزرنے پر مجبور کر دیتا ہے، جو ایک ”دھماکے سے“ اس کی اپنی ہی آئیڈیالوجی کو، لوگوں کے اذہان میں بھک سے اڑا دیتا ہے. شاید اسی لیے اسے ”خودکش حملہ“ کہتے ہیں.

Comments

رضوان اسد خان

رضوان اسد خان

ڈاکٹر رضوان اسد خان پیشے کے لحاظ سے چائلڈ سپیشلسٹ ہیں لیکن مذہب، سیاست، معیشت، معاشرت، سائنس و ٹیکنالوجی، ادب، مزاح میں دلچسپی رکھتے ہیں، اور ان موضوعات کے حوالے سے سوالات اٹھاتے رہتے ہیں

تبصرہ کرنے کے لیے کلک کریں

error: اس صفحے کو شیئر کیجیے!