عورت، پیر کی جوتی – نورین تبسم

”عورت پیر کی جوتی ہے۔“یہ جملہ ایک گالی سے کم نہیں۔ نہ صرف دینے اور لینے والے کےلیے بلکہ ایسا سوچنے والے کے لیے بھی. یہ منفی طرزِفکر کا عکاس اور بظاہر مرد کی حاکمیت اور عورت کی طرف سے خود ساختہ مظلومی کا اشتہار دکھتا ہے۔ غور کیا جائے تو یہ بہت بڑا انعام بھی ہے کہ جوتی کا پیر سے وہی رشتہ ہےجو لباس کا جسم سے۔ قرآن پاک میں عورت اور مرد کے جائز تعلق کی دلیل ”لباس“ سے دی گئی ہے۔ سوچا جائے تو لباس کے بغیر انسان کچھ بھی نہیں۔ وہ نہ صرف جسمانی بلکہ اخلاقی اور معاشرتی طور پر بھی اس سچائی کے بغیر زندہ نہیں رہ سکتا۔ لباس کے بعد جوتا انسان کی زندگی کا لازمی عنصر ہے۔ دُنیا کے پتھریلے راستوں پر چلنے میں بنیادی کردار جوتے کا ہی ہوتا ہے۔ عام معنوں میں جوتا ہمیشہ جوڑے کی شکل میں استعمال کیا جاتا ہے، اور دونوں پیر کے جوتے ایک جیسے اور ایک سی صلاحیت رکھتے ہیں۔ اُن کی بناوٹ میں جو معمولی سا پوشیدہ فرق ہے وہی اُنہیں ایک دوسرے سے جُدا کرتا ہے۔\n\nبرسوں آگہی کے آبِ حیات کا قطرہ قطرہ رگوں میں جذب کرنے کے بعد اب زہر کی صورت لفظوں میں اُتارنے تک اور پوری زندگی میں نہ صرف بہت قریب سے بلکہ معاشرے، کتابوں، ماضی قریب اور ماضی بعید کی تواریخ کے مطالعے کے بعد اس جائز بندھن کے حوالے سے یہی محسوس ہوا کہ ”عورت اگر اپنی کھال کی جوتیاں بھی بنا کر مرد کو پہنا دے، پھر بھی وہ اپنی زندگی میں عورت کے کردار کے حوالے سے سدا کا ناشکرا ہی رہے گا۔“\nکائناتِ انسانی کی اولین تخلیق ہونے کا استحقاق رکھتے ہوئے، دُنیا اور معاشرے میں آسمانی کتابوں سے لے کر زمینی حقائق تک اور منطقی استدلال سے جذباتی طرزِفکر تک ہر جگہ ”مرد“ کو اولیت حاصل ہے۔ روحانیت کے مراتب ہوں یا تصوف کے مسائل مرد کا مقام سب سے اونچا ہے۔ معاشی جدوجہد اور جسمانی محنت و مشقت میں بھی اُس کی برتری سے انکار ممکن ہی نہیں۔ اسی لیے تو مرد عورت پر ”قوام“ ہے۔ یوں وہ ہر طرح کی سوچ میں آزاد اور ہر طرح کے عمل میں بھی خودمختار ہے۔ اُس کی جبلت میں پرویا گیا حاکمیت کا یہ احساس عمر کے ہر دور میں بننے والے رشتوں میں لاشعوری طور پر موجود رہتا ہے۔\n\nاللہ کے کلام کی حقانیت سے انکار نہیں اور دل سے ایمان ہے۔ جب اس میں ربِ کائنات نے فرما دیا کہ ”مرد عورت پر قوام ہے۔“ اور نبی کریمﷺ کی ایک حدیث ِپاک کا مفہوم ہے کہ ”جہنم میں عورتوں کی موجودگی کی بڑی وجہ اُن کا مرد کے حوالے سے ناشکرگزار ہونا ہے۔“ تو ہم کون ہوتے ہیں فتوٰی دینے والے کہ کون زیادہ ناشکرا ہے؟ مرد یا عورت۔\nاللہ نے انسان کوعقلِ سلیم عطا کی ہے اور قرآن پڑھنے سے زیادہ اس پر غور و فکر کرنے کی تلقین کی گئی ہے۔ ہم لفظ پڑھتے ہیں اور آگے بڑھ جاتے ہیں۔ حکم مانتے ہیں لیکن غور نہیں کرتے۔ عورت کی ناشکری کی وجہ محض یہ نہیں کہ وہ مرد کی برائی کرتی ہے بلکہ اُس کی ناشکری یہ ہے کہ وہ نہ صرف مرد کو بلکہ اپنےآپ کو بھی سمجھنے میں ناکام رہتی ہے۔ جو جس خمیر سے بنا ہو اُس کی ہیّئت تو بدلی جا سکتی ہے لیکن خاصیت نہیں۔ مرد کے خمیر میں اگر حاکمیت لکھ دی گئی ہے تو عورت کے خمیر میں بھی تو اپنی ”میں“ کی نفی کر کے ایک نئے وجود کی تخلیق لکھی گئی ہے۔\n\nعورت کو ایک نئی زندگی، ایک نئے وجود کو سامنے لانے کی بیش بہا صلاحیت عطا کی گئی ہے۔ اپنی ذات کو وقت اور حالات کے تقاضوں کے مطابق ڈھال لینا تو اس عظیم معجزے کے سامنے کچھ بھی نہیں۔ بات صرف اپنے کردار کے احساس کی ہے۔ ایک نئی نسل کو پروان چڑھانے کی ہے۔\n\nباپ، وہ انسان جو بچے کی پیدائش سے پہلے اگر اپنے وجود کے اس حصے سے بےخبر رہتا ہے تو بعد میں بھی اولاد کے ساتھ ذہنی ہم آہنگی کبھی نہیں پیدا کر پاتا، جو ماں سے لمس کے رشتے کی بدولت ایک فطری عمل ہے۔ باپ کو اپنی مشقت کے احسان کا اکثر گلہ رہتا ہے، کبھی اندر ہی اندر چپ سادھ کر تو کبھی خوفناک ”جنریشن گیپ“ کی صورت۔ساری عمر گنوا کر بھی اس کے ہاتھ کچھ نہیں آتا۔ اور ماں کو ہمیشہ سے بچا کچا کھانے کی عادت بچا لیتی ہے، بچی کھچی زندگی میں باسی محبت کی آس ہی اس کے لیے بہت بہت کافی ہوتی ہے۔\n\nمرد اتنا کم عقل کیوں ہے کہ اپنی ماں کے ساتھ احترام کا عکس اپنے بچوں کی ماں میں دکھائی نہیں دیتا۔ اپنی ماں چاہے ساتھ رہتی ہو یا ہمیشہ کے لیے جدا ہو چکی ہو، وہ آسمان ہے تو اپنے بچوں کی ماں جو اسے زمین پر اپنے وجود کا احساس دیتی ہے، دنیا کی نظر میں معتبر بناتی ہے، وہ اسے انہی کے سامنے پاتال میں دھکیل دیتا ہے۔ دکھ ناقدری کا نہیں، حیرانی جہالت پر ہے، اسی شاخ پر ضرب لگانے کی جس پر آشیاں ہے۔ کوتاہ نظری یا ناشکری کا یہ احساس وقت گزرنے کے بعد بھی بہت کم کسی کو ہوتا ہے اور اگر ہو بھی تو اپنی کمزوری بہت کم ہی کسی نے ظاہر کی ہے۔\n\nاہم یہ ہے کہ عورت چاہے ماں ہے یا بیوی، وہ کبھی بھی ناقدری کا آسیب خود پر مسلط نہ ہونے دے۔ اولاد کی طرف سے یا شوہر کی طرف سے، کہ اس کا سراسر نقصان اس کی اپنی ذات کو پہنچتا ہے یا پھر اس کے بچوں کو اور ان کی زندگی کے تسلسل کو بھی۔ عورت کے لیے خاص سبق یہی کہ آنکھ بند کر کے اپنا فرض ادا کرے اور حق کی طرٖف آنکھ اٹھا کر بھی نہ دیکھے تو پھر ہی بات بنتی ہے۔\n\nتصویر کا دوسرا رُخ یہ ہے کہ عورت سے بڑا بلیک میلر بھی اور کوئی نہیں۔ بدقسمتی سے ہمارے معاشرے میں عورت یا تو مظلوم ہے اور یا پھر مرد سے ہر سطح پر برابری اور مقابلہ کرنے کی جنگ اور جنون میں مبتلا۔ درحقیقت ایسا کچھ بھی نہیں بلکہ اس کے الٹ ضرور ہے۔ عورت اپنے جسمانی افعال و کردار کے پسِ منظر میں کمزور ضرور ہے لیکن مظلوم ہرگز نہیں۔ ”ماں“ کا رتبہ عورت کی ذاتی خوبی نہیں بلکہ اللہ کا فضل ہے لیکن اکثر وہ اسے اپنی طاقت سمجھ کر ”خودترسی“ کا شکار ہو جاتی ہے۔ مرد اور عورت اس رشتے میں بندھنے کے بعد اگر ایک دوسرے کی برابری کا حق تسلیم کر لیں تو پھر کوئی مسئلہ نہ رہے۔ لیکن ہوتا یہ ہے کہ دونوں میں سے کوئی ایک اپنی انا کا بت سجا کر دوسرے سے سجدوں کی توقع پال لیتا ہے۔ یوں زندگی اگر مگر میں گزر جاتی ہے یا کاغذ کا رشتہ خزاں رسیدہ پتے کی طرح ہر وقت قضا کے جھکڑوں کی زد میں رہتا ہے۔ توازن ہر رشتے ہر رویے کی بنیادی شرط ہے۔ جہاں مرد ذرا کمزور ہوتا ہے عورت حاوی ہو جاتی ہے۔ عورت مرد کا تعلق بہت کم کہیں برابری کی شفاف سطح کو چھو سکا ہے اور وہ بھی جگہ جگہ سمجھوتے کی گرہ لگا کر۔ کبھی سمجھوتے کی گرہ عورت کی ذمہ داری بن جاتی ہے تو کبھی مرد خاموشی سے اپنی ذات میں گرہیں لگاتا چلا جاتا ہے۔ اگرچہ عورت اپنی پوری زندگی ہی کیوں نہ اس رشتے کو بچانے کی نذر کر دے لیکن معاشی معاشرتی اور اخلاقی لحاظ سے حد درجہ دباؤ کی وجہ سے اور سب سے بڑھ کر اپنی فطرت کے برخلاف زیادہ سمجھوتے مرد کا ہی مقدر ہیں۔\n\nعورت کی زندگی میں آنے والا مرد خواہ وہ رشتوں کے حوالے سے آئے یا تعلقات کا جامہ پہن کر، وہ کبھی بھی عورت کی طلب کی خوشبو کو چھو نہیں سکتا۔ ہاں بیٹے سے خون کا رشتہ ہوتا ہے تو اس کو اس بات کا احساس ہو جاتا ہے بہت اچھی طرح، لیکن، اپنی شادی کی پہلی رات جب وہ ایک دوسری عورت کے سامنے ہوتا ہے اور اُس کی ماں حیات ہو اس وقت تو اس کی پہلی بات یہی ہوتی ہے کہ ”میری کوئی چاہ نہیں، کوئی ڈیمانڈ نہیں، بس میری ماں کا خیال رکھنا اُس بےچاری نے بہت کڑا وقت دیکھا ہے۔“ اور یہ ”بےچاری“ فقط حاشیہ آرائی ہے ورنہ اگلے روز کی صبح لاشعوری طور پر ہی سہی ”وہ“ اپنی دُنیا میں سب سے طاقتور مالکن بن کرسامنے آتی ہے۔\n\nاُن نام نہاد حقوق نسواں کی علم بردار خواتین کے نام ایک راز کی بات! ماننا شکست کا نام ہے اور شکست کھانا وہ بھی ایک کمزور اور محکوم عورت سے مردانگی کی توہین ہے۔عورت کے لیے مرد کی فطرت کے اس پہلو کو سمجھنا اور پھر ماننا بہت ضروری ہے۔ اپنی خودساختہ انا کو جھکانے کا فن عورت کے لیے مشکل ضرور ہے لیکن بند کمرے میں ایک مرد کے ہاتھوں جوتے کھانا بہتر ہے بجائے اس کے سرِعام ”گینگ ریپ“ کا شکار ہو کر معاشرے کی ہمدردیاں سمیٹی جائیں۔ عورت نے صرف جھکنا ہے ورنہ ٹوٹ جاتی ہے۔\n\nمرد کی فطرت! بیٹی ہو یا عورت سے کوئی اور تعلق خواہ ماں کا ہی کیوں نہ ہو جب تک ایک درجہ نیچے رہے، مرد اپنے تحفظ کے حصار کی بڑائی میں خوشی خوشی اپنی جان و مال بےدریغ نچھاور کرتا ہے لیکن جیسے ہی عورت کی برابری کا احساس قریب آئے اس کا رویہ بدل جاتاہے۔ مرد کی برائی ہرگز نہیں، بس اس کی فطرت میں لکھی گئی برتری کی کرشمہ سازی ہے۔\n\nآخری بات\nجب کوئی کوہ پیما ماؤنٹ ایورسٹ سر کر لیتا ہے تو اس کے پاس واپسی کے سوا کوئی راستہ نہیں بچتا۔ عورت کو خواہ پاؤں کی جوتی سے بھی کمتر محسوس کیا جائے لیکن اُس کے دل کے ماؤنٹ ایورسٹ پر بہت کم کسی کے قدموں کے نشان اُترتے ہیں اور اس تک پہنچنا بھی ہر کسی کے بس کا روگ نہیں۔ لیکن جو اس برف کے سامنے سجدہ ریز ہوگیا، اُسے پھر کہیں اور جانے کے ضرورت نہیں پڑتی۔\n\nملائم گرم سمجھوتے کی چادر\nیہ چادر میں نے برسوں میں بنی ہے\nکہیں بھی سچ کے گل بوٹے نہیں ہیں\nکسی بھی جھوٹ کا ٹانکا نہیں ہے\nاسی سے میں بھی تن ڈھک لوں گی اپنا\nاس سے تم بھی آسودہ رہو گے\nنہ خوش ہو گے نہ پژمردہ رہو گے\nاسی کو تان کر بن جائے گا گھر\nبچھا لیں گے تو کھل اٹھے گا آنگن\nاٹھا لیں گے تو گر جائے گی چلمن\nملائم گرم سمجھوتے کی چادر\nیہ چادر میں نے برسوں میں بنی ہے\n(زہرہ نگاہ)

Comments

FB Login Required

نورین تبسم

جائے پیدائش راولپنڈی کے بعد زندگی کے پانچ عشرے اسلام آبادکے نام رہے، فیڈرل کالج سے سائنس مضامین میں گریجویشن کی۔ اہلیت اہلیہ اور ماں کے سوا کچھ بھی نہیں۔ لکھنا خودکلامی کی کیفیت ہے جو بلاگ ڈائری، فیس بک صفحے کے بعد اب دلیل کے صفحات کی جانب محوِسفر ہے۔

Protected by WP Anti Spam